122

بھارت دن میں خواب دیکھنا بند کرے، ترجمان پاک فوج، ہندوستان سٹھیا چکا، شاہ محمود

Spread the love

اسلام آباد (جے ٹی این آن لائن سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) ترجمان پاک فوج

ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پی آرمیجر جنرل آصف غفور کا کہنا ہے بھارت آزاد

کشمیر کو بھول جائے اب پرانا قبضہ چھڑانے کا وقت ہے، وزیراعظم اور آرمی

چیف کا آخری حد تک جانے کا بیان فوج کا بیانیہ ہے، کشمیر کیلئے آخری فوجی

اور آخری گولی تک لڑیں گے۔ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کے بعد مزید تشدد کا

خدشہ ہے۔ اسلام آباد میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اور وزیراعظم کی معاون

خصوصی اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کے ہمراہ مشترکہ پریس

کانفرنس میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے ترجمان پاک فوج کا کہنا

تھا کہ قوم فکر نہ کرے، ہماری تیاریاں مکمل ہیں، بھارت پلوامہ طرز کا جعلی

آپریشن کرکے ایل او سی پر کوئی کارروائی کرسکتا ہے، کسی بھی جارحیت کی

صورت میں پاک فوج بھرپورجواب دیگی، پاک فوج کسی بھی مس ایڈونچر کیلئے

مکمل تیار ہے۔ ترجمان پاک فوج کہنا تھا لائن آف کنٹرول پر بھارت کی اشتعال

انگیزیاں جاری ہیں، مقبوضہ کشمیر جیل کی حیثیت اختیار کر چکا ہے، مقبوضہ

کشمیر میں ہر گھر کے باہر بھارتی فوجی تعینات ہے، کشمیر میں انسانی حقوق کی

خلاف ورزیاں دنیا کی نظر میں ہیں، مقبوضہ کشمیرمیں وقت سب سے بڑا مسئلہ

انسانی حقوق کا ہے، دنیا کو دیکھنے کی ضرورت ہے کہ وہ مسئلے میں کیا کردار

ادا کرسکتی ہے۔

پڑھیں: کشمیر پر پاکستان اپنے موقف سے پیچھے نہیں ہٹے گا، وزیراعظم

ترجمان پاک فوج کا مزید کہنا تھا کہ مسئلہ کشمیر ایک نیوکلیئر فلیش پوائنٹ ہے،

سمجھدار ممالک ایسی بات نہیں کرتے جیسی بھارتی وزیردفاع راج ناتھ نے کی،

یہ تاثر غلط ہے کہ پاکستان ایل او سی پر کشیدگی بڑھا رہا ہے، بھارت ایل او سی

پر کشیدگی بڑھا رہا ہے، ہماری توجہ مشرقی سرحدوں پر ہے۔ صحافیوں کی

طرف سے غیر رسمی ملاقات کے دوران سوال کیا گیا کیا بھارت آزاد کشمیر پر

حملے کرنا چاہتا ہے؟ جس پر میجر جنرل آصف غفور کا کہنا تھا فکر نہ کریں

ہماری تیاریاں مکمل ہیں، دنیا نے 27 فروری کو پاک افواج کی قابلیت دیکھ لی ہے۔

کشمیر کسی ادارے یا شخص کا مسئلہ نہیں بلکہ نیشنل ایشوہے۔ لائن آف کنٹرول پر

تہہ در تہہ سکیورٹی کی موجودگی میں ایک بندہ بھی اس طرف جانا بھارتی

سکیورٹی فورسز کی ناکامی ہے۔ ایسے ماحول میں پاکستان کی طرف سے انفرادی

یا کسی اور طور پر ایسا کوئی ایکشن پاکستان اور کشمیر کاز سے غداری ہو گی۔

ترجمان پاک فوج کا کہنا تھا کوئی واقعہ جس سے پاکستان اور کشمیر کاز کو

نقصان پہنچے، پاکستان اس کا متحمل نہیں ہو سکتا۔

مزید پڑھیں: مقبوضہ وادی میں بھارتی مظالم چھپنے نہیں دینگے، جنرل باجوہ

ترجمان پاک فوج میجر جنرل آصف غفور نے مزید کہا مقبوضہ کشمیر میں انسانی

حقوق کی خلاف ورزیاں ہو رہی ہیں اور آنے والے وقت میں کشمیر میں جبر و

تشدد بڑھے گا۔ بھارتی آرمی کمانڈر ایل او سی کے پار سے دراندازی کے الزامات

لگا رہے ہیں اور خدشہ ہے بھارت پلوامہ طرز پر کوئی جھوٹا آپریشن کر سکتا ہے

اور اسے بنیاد بنا کر پاکستان کے خلاف کارروائی کر سکتا ہے لیکن پاکستان کی

مسلح افواج پوری طرح تیار اور ایل او سی پر موجود ہیں۔ ترجمان پاک فوج کا کہنا

تھا بھارت آزاد کشمیر پر قبضے کا خواب نہ دیکھے، ہم قوم کو یقین دلاتے ہیں کہ

پاک فوج عوام کو مایوس نہیں کرے گی۔ مقبوضہ کشمیر سے پابندیاں اٹھتے ہی

کشمیریوں کا ردعمل سامنے آجائے گا، بھارت یہی چاہتا ہے کشمیر میں حالات

خراب ہوں اور وہ بارڈر پر آ جائے۔ ترجمان پاک فوج کا یہ بھی کہنا تھا نائن الیون

کے بعد سے بھارت تحریک آزادی کشمیر کو دہشت گردی سے جوڑنے کی کوشش

کر رہا ہے، بھارت نے سرحدی خلاف ورزی کی تو اسے سرپرائز دیں گے۔

سلامتی کونسل کا کشمیر پر اجلاس بھارت کی سفارتی محاذ پر شکست، پاکستان

پریس کانفرنس سے خطاب میں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا

پاکستان نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں بڑا معرکہ سرکیا اور ہندوستان کو

سفارتی محاذ پر بری طرح شکست ہوئی ہے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا وزیراعظم

کی بنائی گئی خصوصی کمیٹی کی آج پہلی میٹنگ تھی جس میں پاکستان کے تمام

اداروں کی تجاویز آئی ہیں۔ پاکستان اور چین کی درخواست پر جمعہ کے روز اقوام

متحدہ کی سلامتی کونسل کا مشاورتی اجلاس بلایا گیا جس میں مقبوضہ کشمیر کی

حیثیت تبدیل کرنے اور وہاں انسانی حقوق کیخلاف ورزیوں پر غور کیا گیا جو

پاکستان کی بڑی سفارتی کامیابی ہے اور اس ضمن میں بھرپور تعاون پر ہم دوست

ملک چین کے بے حد مشکور ہیں کہ جس کی بدولت مسئلہ کشمیر کو اس فورم

پراٹھانے میں اس نے ہماری مدد کی کیونکہ یہی وہ فورم ہے جو اس کو حل کرنے

کا ذمہ دار بھی ہے۔ وزیر خارجہ کا کہنا تھا دنیا کو آگاہ کرنا چاہتے ہیں پاکستان کو

بھارت کی نیت پر شک ہے، سفارتی شکست کے بعد وہ کوئی بھی شرارت کر سکتا

ہے، لیکن یاد رکھا جائے پاکستانی قوم اور مملکت خداداد کے تما ادارے ہندوستان

کے مذموم عزائم سے نبرد آزما ہونے کیلئے مکمل طور پر تیار ہیں۔

وزیر خارجہ شاہ محمود کا کہنا تھا جب دماغ میں خرابی ہو تو وہ کیا جاتا ہے جو

5 اگست کو بھارت نے کیا اور جب دماغ سٹھیا جائے تو وہ کہا جاتا ہے جو بھارتی

وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے کہا۔ شاہ محمود کا یہ بھی کہنا تھا یہ ایک لمبی لڑائی

ہے جسے کئی محاذوں پر لڑنا ہے جبکہ آج کی میٹنگ میں آئندہ آنیوالے دنوں کی

حکمت عملی پر بات ہوئی، پوری کمیٹی نے اس بات پر اتفاق کیا کہ موجودہ بھارت

نہرو نہیں بلکہ مودی کا ہندوستان ہے۔ شاہ محمود قریشی کا یہ بھی کہنا تھا اجلاس

میں دفتر خارجہ میں کشمیر سیل جبکہ دنیا کے اہم دارالحکومتوں میں کشمیر

ڈیسک بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے-

مقبوضہ کشمیر بھارت کا اندرونی نہیں عالمی معاملہ ہے، سلامتی کونسل

جمعہ 16 اگست 2019 کو اسلام آباد اور بیجنگ کی مشترکہ درخواست پر اقوام

متحدہ کی سلامتی کونسل کا خصوصی اجلاس ہوا جس میں 15 ممبر ممالک کے

مندوبین بھی شریک ہوئے۔ اس موقع پر اقوام متحدہ کے ملٹری ایڈوائزر جنرل

کارلوس لوئٹے نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال، جبکہ اقوام متحدہ کے قیام امن

سپورٹ مشن کے معاون سیکریٹری جنرل آسکر فرنانڈس نے مسئلہ سے متعلق

دیگر اہم امور پر شرکاء اجلاس کو بریفنگز دیں۔ مسئلہ کشمیر پر 50 سال بعد بلایا

جانے والا اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا یہ اجلاس ایک گھنٹہ 10 منٹ جاری

رہا جس میں کشمیر پر سلامتی کونسل میں براہ راست بات چیت ہوئی، اجلاس میں

کہا گیا مقبوضہ کشمیر متنازع علاقہ ہے بھارت نہ تو اسے اندورنی معاملہ قرار

دے سکتا ہے اور نہ ہی اس کی حیثیت میں کسی قسم کی تبدیلی کا مجاذ ہے جیسا

کہ اس نے 5 اگست کو بھارتی آئین میں حاصل خصوصی حیثیت ختم کرکے اٹھایا،

کشمیر پر اقوام متحدہ کی پوزیشن سلامتی کونسل کی قراردادوں کے تحت ہے

اوراس مسئلے کا حتمی درجہ اقوام متحدہ کے چارٹر کے تحت ہی طے ہونا ہے۔