مانسہرہ پولیس نےحامد رضا کے قاتلوں سے یاری نبھا دی

Spread the love

ایبٹ آباد (سردار یاسر احمد)
تھانہ گڑھی حبیب اللہ کی حدود گڑنگ دلولہ میں 12سالہ بچے کے قتل میں ملوث ملزمان کوپولیس

پروٹوکول دینے لگی ،بااثر افراد نے مقتول کےورثاء کو مقدمہ کی پیروی کرنے پر سنگین نتائج کی

دھمکیاں دینا شروع کر دیں ،متاثرہ شخص انصاف کے لئے پریس کلب پہنچ آیا ،اعلی حکام سےملزمان

پولیس نے کمزور دفعات اور ناقص تفتیش سے ملزمان کو فائدہ پہنچایا، الزام

کی گرفتاری اور تحفظ دینے دینے کا مطالبہ کردیا ہے، 26 مئی کو قتل ہونے والے 12سالا بچے کے

لواحقین کو مخالفین نے سنگین نتائج کی دھمکیاں دینا شروع کردیں ہیں،پولیس کی جانب سے کیس

کی تفتیش پر بھی عدم اعتماد کرتے ہوئے از سرنو تفتیش کا بھی مطالبہ کیا ہے ،اس حوالہ سےمقتول

12سالہ بچہ حامد رضا کے حقیقی چچا محمد اسلم نے ایبٹ آباد پریس کلب میں میڈیا کو بتایا

کہ 26 مئی کو حامد رضا کو اور اس کے چچا ذاد بھائی احسن کمال نے فائرنگ کرکے زخمی کیا جو

ہسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا تھا،اس حوالہ سے بچے کی والدہ بیوہ ارشاد

بی بی رپورٹ پر مقدمہ درج ہوا ،جس میں پولیس نے کمزور دفعات کے ذریعے ملزم کو سہولت

آئی جی خیبر پختونخوا معظم جاء انصاری فوری نوٹس لیں، محمد اسلم

پہنچانے کی مبینہ طور پر کوششش کی ہے جس کے خلاف ڈی پی او مانسہرہ کو بھی تحریری طور

پر تفتیش میرٹ پر کرنے کی اپیل کی تھی تاہم پولیس کی جانب سے حقائق سے برعکس مثل

بنانے پر 4 ماہ گزرنے کے بعد بھی ملزمان کوگرفتار نہیں کیا گیا بلکہ سازش میں شریک ارشاد ولد اللہ

=-،-= خیبر پختونخوا سے متعلق مزید خبریں (=-= پڑھیں =-=)

داد،محمد خالد ولد جانداذ،محمد جاوید ولد جانداذ،محمد رستم ولد جانداذ،ذکیہ بی بی کو

شامل تفتیش کرنے اور ملزمان کی جانب سے سنگین نتائج کی دھمکیوں پر تحفظ دینے کا

مطالبہ کیا ہے،انہوں نے آئی جی خیبر پختون خوا ،ڈی آئی جی ہزارہ سے انصاف دلانے کا مطالبہ کیا ہے۔

Leave a Reply