23 جنوری کومنی بجٹ پیش کیاجائیگا،اسد عمر

Spread the love

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا ہے 23 جنوری کومنی بجٹ پیش کیاجائیگا، 21ویں صدی میں معیشت کاپہیہ نجی شعبہ چلارہاہے،ایف بی آر کے ایس آر او کے اجراء کااختیارختم کردیاگیا ہے،سرمایہ کارکیلئے سازگارماحول فر ا ہم کرناضروری ہے، ٹیکسوں سے متعلق تبدیلی پارلیمنٹ کی منظوری سے ہوگی، سرمایہ کاری ہوگی تومعیشت آگے بڑھے گی اورروز گا ر پید ا ہو گا ۔ہفتہ کو کراچی چیمبر آف کامرس میں تاجروں سے خطاب میں وفاقی وزیر خزانہ کا مزید کہنا تھا منی بجٹ میں ٹیکس پیچیدگیاں دورکی جائیں گی ، کراچی پاکستانی معیشت کادل ہے، نجی شعبے کی حوصلہ افزائی کیلئے اقدامات ،کاروباراورسرمایہ کاری کیلئے آسانیاں پیداکررہے ہیں، پا کستا ن کاتجارتی خسارہ گزشتہ سال خطرناک حد تک بڑھ چکاہے،اسے کم ،سرمایہ کاری کوفروغ دیناچاہتے ہیں۔ وزیراعظم نے بھارت سے مسا ئل پر بات چیت کیلئے ہاتھ بڑھایا،افسوس بھارت نے مثبت جواب نہیں دیاجس کی وجہ بھارت کے اندر کی صورتحال ہے ،ترکی اور پاکستا ن کا مضبوط سیاسی رشتہ معاشی تعلق میں تبدیل کرینگے،ساؤتھ ایشیا میں مجموعی معیشت کا27 فیصد خطے کاانٹرنل بزنس ہے ،فنانس بل میں کارو بارمیں آسانیاں اورسرمایہ کاری کیلئے سہولتیں دینگے،سرمایہ کاری کیساتھ ساتھ سیونگ کو بھی بڑھاناہے۔ منی بجٹ میں کھپت کو کم او ر سرمایا کا ر ی بڑھانے کے اقدامات ہوں گے،پاکستان میں مقامی بچت اورسرمایہ کاری کم ترین سطح تک آگئی ہے ، ہمیں ترجیحات کے مطابق فیصلے کر نے ہیں ،ماضی میں قلم کی ایک جنبش سے ایس آر او جاری کیا جاتا رہا ہے، تحریک انصاف کے منشور میں شامل ہے کاروبار میں سہولتیں فراہم کی جائیں گی، بغیر کسی چیک بیلنس کے کوئی اختیار ہو تو وہ اختیار نقصان دہ ہوگا،

Leave a Reply