کوئی بھی فرد نیب کی تحقیقات پر اثر انداز نہیں ہو سکتا، جسٹس (ر) جاوید اقبال

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین جسٹس جاوید

اقبال نے کہا ہے نیب بدعنوان عناصر، مفروروں اور اشتہاری مجرموں کو قانون

کے کٹہرے میں لانے کیلئے احتساب سب کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ بدھ کو نیب

ہیڈ کوارٹرز میں نیب کی کارکردگی کے جائزہ سے متعلق اجلاس کی صدارت

کرتے ہوئے اپنے خطا ب میں انہوں نے کہا نیب میگا کرپشن مقدمات، بڑے پیمانے

پر عوام سے دھوکہ دہی، ہائوسنگ اورکوآپریٹو سوسائٹیز، مالی کمپنیوں میں دھوکہ

دہی، بینک فراڈز، بینک نادہندگان، اختیارات کے ناجائز استعمال، منی لا نڈ رنگ

اور سرکاری فنڈز میں خوردبرد کے مقدمات پر توجہ مرکوز کرتا ہے۔ نیب کی

آپریشنل میتھڈالوجی شکایت کی جانچ پڑتال، انکوائری، انو یسٹی گیشن اور احتساب

عدالتوں میں ریفرنس دائر کرنے پر مشتمل ہے۔ نیب نے مقدمات کو فوری اور

تیزی سے نمٹانے کیلئے اوقات کار تعین کرنے سمیت سینئر سپروائزری افسران

کی اجتماعی دانش سے فائدہ اٹھانے کیلئے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کا نظام وضع کیا

ہے، اس سے نہ صرف نیب کی کارکردگی میں بہتری آئی ہے بلکہ کوئی بھی فرد

نیب کی تحقیقات پر اثر انداز نہیں ہو سکتا۔ نیب راولپنڈی نے جدید فرانزک سائنس

لیبا ر ٹری قائم کی ہے جس میں ڈیجیٹل فرانزک، سوالیہ دستاویزات اور فنگر

پرنٹس کے تجزیہ کی سہولت موجود ہے۔ نیب نے انسداد بدعنوانی کے شعبہ میں

تعاون کیلئے چین کیساتھ مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کئے ہیں، سی پیک کے

تناظر میں اس معاہدہ سے دونوں ممالک کے درمیان پاکستان میں شروع کئے گئے

منصوبوں کے متعلق اعتماد سازی میں اضافہ ہو گا۔ معاشی ترقی، سرمایہ کاری

اور سماجی اقدار کے استحکام کیلئے مؤثر احتساب کا نظام ضروری ہے۔ نیب کی

کوششوں سے شفافیت کو فروغ ملا جو سرمایہ کاری اور معاشی ترقی کے فروغ

کیلئے ناگزیر ہے۔ نیب نے اپنے قیام سے لے کر اب تک بدعنوانی کیخلاف جنگ

میں قانون پر عملدرآمد کی سوچ اختیار کی ہے، نیب لوگوں بالخصوص نوجوانوں

کو ابتدائی مرحلہ میں بڑے پیمانے پر بدعنوانی کے برے اثرات سے آگاہی کیلئے

قانون پر عملدرآمد کیساتھ ساتھ آگاہی اور تدارک کی سرگرمیوں پر خصو صی

توجہ دے رہا ہے۔

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply