ناراض بلوچوں سے مذاکرات

لوگ کسان اورجاگیردار میں فرق نہ کرسکے،عمران خان

Spread the love

کسان اورجاگیردار میں

بہاولپور ،اسلام آباد(جے ٹی این آن لائن نیوز) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ماضی میں ملک

میں قانون کی بالادستی نہیں تھی، طاقت کی بالادستی تھی، قانون کی حکمرانی نہیں طاقت کی

حکمرانی رہی، جاگیرداروں نے ملک کو تباہ کیا اور لوگ کسان اور جاگیر دار میں فرق ہی نہیں کر

سکے، کسان ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں، کسان بہتر ہو گا تو ملک معاشی ترقی کی منازل تیزی سے طے

کرے گا،کسانوں کو مقررہ نرخ سے کم پیسے ملتے تھے،ہم نے گنے کی بروقت کرشنگ سے متعلق

قانون پاس کرایا۔ بدھ کو وزیراعظم عمران خان نے بہاولپور میں کسان کنونشن سے خطاب کرتے

ہوئے کہا کہ کسان کنونشن کا مقصد ہی یہ پیغام دینا ہے کہ اگر پاکستان نے اپنے 84لاکھ کسانوں کی

مدد کر دی اور کسان بہتر ہو گیا تو ملک بھی معاشی طور پر اوپر چلا جائے گا کیونکہ ہمارے ملک

کے کسان محنت کش لوگ ہیں۔ شوگر ملز مالک طاقتور تھے اور کاشتکار کو اپنی فضل کی قیمت بہت

کم ملتی تھی اور محنت کرنے والے کو اس کی محنت کا پھل نہیں ملتا تھا جبکہ شوگر ملز والے زیادہ

فائدہ اٹھاتے تھے،حکومت نے گنے کے کاشتکاروں کی فلاح کیلئے اسمبلی میں بل پاس کیا اور

کرشنگ کو وقت پر شروع کرنے کا پابند بنایا گیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے گندم، گنے، مکئی کے

کاشتکاروں کی فلاح دینے کی کوشش کی۔ وزیراعظم نے کہا کہ کوشش ہے کہ کسانوں کی آمدن کو

دگنا کریں گے اور اگر کسان کمائے گا تو وہ اپنی زمین میں لگائے جس سے ملک میں اجناس وافر

مقدار میں پیدا ہوں گی جبکہ موجودہ وقت ملک میں مہنگائی آبادی کے زیادہ ہونے اور اجناس کی

پیداوار کم ہونے کی وجہ سے ہے، آج بھی گندم کی ریکارڈ پیداوار ہونے کے باوجود چالیس لاکھ ٹن

گندم باہر سے منگوا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جب ہم کسانوں کو مدد فراہم کریں گے تو ملک میں

مہنگائی میں کمی آئے گی، حکومت جدید ٹیکنالوجی سے بھی کاشتکار طبقے کی مدد کرے گی اور

زرعی پیداوار میں اضافے کے سائنسی تحقیق بھی بہت ضروری ہے، جدید تحقیقی طریقے اپنانے سے

ہی ملک ترقی کی راہ پر گامزن ہو سکتا ہے اور جدید زرعی تحقیق سے کم لاگت سے زیادہ پیداوار

حاصل کی جا سکتی ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ کسان کارڈ کے ذریعے سبسڈی دی جائے گی، جس

سے کسان اپنی فصل کی رقم بروقت استعمال کر سکے گا، کیڑوں کے حملے ، خشک سالی اور دیگر

مسائل سے نمٹنے کیلئے کسان کارڈ کارآمد ثابت ہو گا۔ پاکستان میں موٹرسائیکل فروخت کا ریکارڈ

ٹوٹ گیا۔ موٹرسائیکل زیادہ فروخت ہونے کا مطلب دیہات میں زیادہ پیسہ جانا ہے۔عمران خان نے کہا

کہ مشکل وقت گزر گیا اب ملک کو آگے لے کر جائیں گے۔دوسری جانب عمران خان نے کہا ہے کہ

جنوبی پنجاب کے حوالے سے کسی بھی قسم کا اقدام اٹھانے سے پہلے تمام اسٹیک ہولڈرز سے

مشاورت کی جائے گی ، پانی انسان کی بنیادی ضرورت ہے اور اس خطے میں زراعت کی اہمیت کے

پیشِ نظر پانی سے متعلق تمام مسائل کو حل کیا جائے گا،پاکستان میں پہلی دفعہ ٹیکس کی مد میں

ریکارڈ محصولات اکیل ہوئی ہیں جو عوام کے حکومت پر اعتماد کو ظاہر کرتا ہے،تعلیم صحت اور

بنیادی ڈھانچے کی بہتری حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ بدھ کووزیرِ اعظم عمران خان نے بہاولپور

ڈویژن میں ترقیاتی منصوبوں اور جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ کی کارکردگی و تعمیر پر پیش رفت کے

جائزہ اجلاس کی صدات کی اور مقامی ارکانِ قومی وصوبائی اسمبلی سے ملاقات کی۔عمران خان نے

اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور میں مختلف منصوبوں کا افتتاح کیا ، وزیرِ اعظم نے یونیورسٹی میں

عالمی معیار کی تدریسی سہولیات سے آراستہ نرسنگ کالج کا افتتاح کیا۔ نرسنگ کالج نہ صرف خطے

میں نرسنگ کے حوالے سے موجود افرادی قوت کی استعداد بڑھانے میں معاون ثابت ہوگا بلکہ جنوبی

پنجاب کے نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرنے میں مدگار ثابت ہوگا ۔وزیرِ اعظم نے کرکٹ

کی فروغ کیلئے قائم کئے جانے والے اسلامیہ یونیورسٹی کے بغداد الجدید کیمپس میں کرکٹ سٹیڈیم کا

افتتاح بھی کیا. مزید وزیرِ اعظم نے اسلامیہ یونیورسٹی کی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے

کیلئے 2.5 میگا واٹ کے سولر منصوبے کا بھی افتتاح کیا ۔علاوہ ازیں وزیر اعظم عمران خان نے

اقلیتوں کے حقوق کے حوالے سے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اقلیتوں کو یکساں حقوق کی فراہمی کے

لیے پر عزم ہیں جبکہ ملکی ترقی اور خوشحالی کے لیے اقلیتوں کے فعال کردار کا اعتراف کرتے

ہیں،اقلیتوں کو تمام حقوق کی فراہمی کے بغیر معاشرہ آگے نہیں بڑھ سکتا اور بین المذاہب ہم آ ہنگی کا

فروغ ترقی پسند معاشرے کے قیام کے لیے ناگزیر ہے، اقلیتوں کو تمام آئینی، قانونی اور معاشرتی

حقوق فراہم کر رہے ہیں۔قبل ازیں وزیر اعظم عمران خان سے ترکی کے وزیر دفاع خلوصی آقار نے

ملاقات کی،اس موقع پرعمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان اور ترکی کے درمیان تاریخی دوستانہ

تعلقات ہیں ، ترکی کے ساتھ ہر ممکن تعاون کے لیے تیار ہیں، پاکستان افغان امن عمل آگے بڑھانے

اور سیاسی حل کے لیے کوشش جاری رکھے گا۔ پاکستان اور ترکی کے درمیان تاریخی دوستانہ

تعلقات ہیں جبکہ دونوں ممالک کے درمیان تعاون اور باہمی اعتماد ہے۔ وزیراعظم نے ترکی کے

جنگلات میں آتشزدگی پر اظہار تشویش کرتے ہوئے کہا کہ آفت سے نمٹنے میں ترکی کے ساتھ

ہرممکن تعاون کے لیے تیار ہیں اور مسئلہ کشمیر پر پاکستان کی مستقل حمایت پر ترکی کے

شکرگزار ہیں۔

کسان اورجاگیردار میں

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply