افغانستان ٹی ٹی پی 0

اپوزیشن لیڈرکیساتھ ہاتھ ملانے کا مطلب کرپشن کوجائزتسلیم کرنا ہے، عمران خان

Spread the love

کرپشن کوجائزتسلیم

اسلام آباد (جے ٹی این آن لائن نیوز) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ دو خاندانوں سے ذاتی

لڑائی نہیں، اپوزیشن لیڈرسے ہاتھ نہیں ملاتا، اس سے ہاتھ ملانے کا مطلب اس کی کرپشن کو

جائزتسلیم کرنا ہے،انگلینڈ میں اگرکسی پرالزام لگ جائے تومجال ہے وہ شخص پارلیمنٹ میں گھس

جائے، پاکستان میں ایسا تصورہی نہیں ، یہاں پر اربوں کی کرپشن کرتے ہیں اور اسمبلی میں تقریریں

کرتے ہیں،مغرب میں کوئی پیسے لے کر دوسری جماعت میں نہیں جاتا،ان کا اخلاقیات کا معیار بہت

بلند ہے ، کرپشن کی وجہ سے ہمارا مورال بری طرح نیچے گرا ہے، رحمت اللعامین اتھارٹی بنائی

ہے، ہمارے نبیؐ دنیا کے عظیم رول ماڈل تھے، ہمیں بچوں کو بل گیٹس کے بارے میں بتانے کے

بجائے دنیا کے عظیم لیڈر کے بارے میں بتانا ہو گا،پاکستان میں جنسی جرائم بڑھنا شرمناک چیزہے،

سکالرزکا کام معاشرے کی ڈائریکشن کوٹھیک کرنا ہے۔جمعرات کووفاقی دارالحکومت اسلام آبادمیں

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ آج کے پاکستان میں اسکالرز کی بہت ضرورت

ہے، عالم کا بہت بڑا رتبہ ہوا کرتا ہے، اسکالرز قوم کے نظریے کی حفاظت کرتے ہیں اور اگر

اسکالرز راستہ بھول جائیں تو قوم کا نقصان ہوتا ہے۔ اسلام فکری انقلاب سے پھیلا، افسوس ہوتا ہے

کہ لوگوں کو اسلام کی تاریخ کا ٹھیک سے پتہ نہیں، لوگوں سے اسلام کی تاریخ کا پوچھیں تو انہیں

جنگیں یاد ہوتی ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ مجھے کہتے ہیں اپوزیشن لیڈرسے ہاتھ نہیں ملاتا، اس سے

ہاتھ ملانے کا مطلب اس کی کرپشن کو جائزتسلیم کرنا ہے، انگلینڈ میں اگرکسی پرالزام لگ جائے

تومجال ہے وہ شخص پارلیمنٹ میں گھس جائے، پاکستان میں ایسا تصورہی نہیں ، یہاں پر اربوں کی

کرپشن کرتے ہیں اور اسمبلی میں تقریریں کرتے ہیں۔ مغرب کی پارلیمنٹ میں ہماری سینیٹ کی طرح

تو پیسے نہیں چلتے؟ سینیٹ میں پیسے چلتے ہیں اور لوگ ادھر سے ادھر ہو جاتے ہیں، مغرب میں

کوئی پیسے لے کر دوسری جماعت میں نہیں جاتا،ان کا اخلاقیات کا معیار بہت بلند ہے، میں کرپشن

کے خلاف لڑتا ہوں، کرپشن کی وجہ سے ہمارا مورال بری طرح نیچے گرا ہے، میری کسی سے

ذاتی دشمنی نہیں، ان دوخاندانوں سے کوئی ذاتی لڑائی نہیں بلکہ ان سے دوستیاں ہوتی تھیں۔ جب قوم

اچھے، برے کی تمیز ختم کر دے تو ختم ہوجاتی ہیں، جب برے کو برا نہ کہیں اسے تسلیم کرلیں

مطلب زوال شروع ہوگیا۔عمران خان نے کہا کہ رحمت اللعامین اتھارٹی بنائی ہے، ہمارے نبیؐ دنیا کے

عظیم رول ماڈل تھے، ہمیں بچوں کو بل گیٹس کے بارے میں بتانے کے بجائے دنیا کے عظیم لیڈر

کے بارے میں بتانا ہو گا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ سوشل میڈیا ایک نئی چیزآئی ہے جو کہ ایک

یلغارہے، نئی جنریشن کو صحیح راستہ دکھاناسکالرز کی بہت بڑی ذمہ داری ہے، سکالرزراستہ بھول

جائیں تومعاشرے کونقصان ہوتا ہے۔ سکالرز کی پوری طرح مدد کریں گے، دانشوروں کی اہمیت کم

ہونے سے تہذیبیں زوال پذیر ہو جاتی ہیں، آج کے پاکستان میں سکالرزکی بہت ضرورت ہے۔ ہمیں

اپنے بچوں کی بہترتربیت کرنا ہوگی۔ اﷲ نے انسانوں کو اشرف المخلوقات بنایا۔وزیراعظم نے کہا کہ

جاپان میں ہمارے کھلاڑی کا پرس گرا تو ٹیکسی ڈرائیورواپس دینے آیا، جاپان میں اخلاقیات کا معیار

بہت اوپر ہے، پاکستانی معاشرے کو اچھے، برے کی تمیز سکھانی ہے، پاکستان میں سب سے زیادہ

بچوں کیساتھ زیادتی کے واقعات پیش آ رہے ہیں، بچوں کے ساتھ اتنا کرائم ہو رہا ہے کوئی ری ایکشن

نہیں آرہا، پاکستان میں جنسی جرائم بڑھنا شرمناک چیزہے، سکالرزکا کام معاشرے کی ڈائریکشن

کوٹھیک کریں۔ وزیراعظم عمران خان نے اسلامی ممالک کے سفیروں سے ملاقات میں کہا کہ رحمت

للعالمین اتھارٹی اسلاموفوبیا کے تدارک کیلئے دنیا بھر کے اسکالرز سے رابطہ کرے گی۔ جمعرات

کو وزیراعظم عمران خان سے ا سلامی ممالک کے سفیروں کی ملاقات ہوئی ، ملاقات میں ریاست

مدینہ کے بنیادی اصول ،عدل و انصاف کے نظام پربات چیت کی گئی۔دوران ملاقات وزیراعظم نے

رحمت للعالمین ﷺاتھارٹی کے قیام سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کہا نبی کریم ﷺپوری انسانیت کیلئے

رحمت ہیں، قانون کی حکمرانی،فلاح وبہبود،علم کے حصول پرغیر متزلزل توجہ ہونی چاہیے۔مسلمان

رسول ﷺکی زندگی اور تعلیمات کو پوری طرح سمجھیں، اتھارٹی کا مقصد باہمی تحقیق کے ذریعے

سنت،سیرت النبیﷺ کو سمجھنا ہے اور نوجوانوں کو اسلامی تشخص،اقدار ،ثقافت سے متعلق آگاہی

ضروری ہے وزیراعظم نے نوجوانوں پرسوشل،ڈیجیٹل میڈیاکیاثرات سے بھی آگاہ کرتے ہوئے کہا

رحمت للعالمین اتھارٹی اسلاموفوبیاکے تدارک کیلئے دنیا بھر کے اسکالرز سے رابطہ کرے گی۔

وزیراعظم عمران خان نے ملاقات کے دوران سفیروں کے خیالات بھی سنے اور اسلامی ممالک

کیدرمیان علما،اکیڈمی کے تعلقات پربھی زوردیا۔اسلامی ممالک کے سفیروں نے ا تھارٹی کے قیام اور

وزیر اعظم کے اقدام کو سراہتے ہوئے امت مسلمہ کے مقاصد کیلئے وزیراعظم کی حمایت اور تعاون

کی یقین دہانی کرادی۔وزیر اعظم عمران خان نے خطے کے ممالک کے ساتھ تجارتی روابط مستحکم

کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ہر ممکن سہولیات فراہم

کر رہی ہے، اس سے برامدات بڑھانے میں مدد ملے گی۔ جمعرات کو وزیر اعظم عمران خان سے

مشیر خزانہ شوکت ترین اور مشیر تجارت عبدالرزاق داود نے ملاقات کی جس میں مشیر خزانہ نے

وزیر اعظم کو مجموعی معاشی صورتحال کے بارے میں آگاہ کیا۔ ملاقات میں مشیر تجارت نے وزیر

اعظم کو اپنے حالیہ ترکمانستان دورے کے بارے میں آگاہ کیا اور متوقع ایران دورے کے بارے میں

بھی گفتگو کی۔ اس موقع پر وزیر اعظم عمران خان نے خطے کے ممالک کے ساتھ تجارتی روابط

مستحکم کرنے پر زور دیا اور کہا کہ خطے کے ممالک کے ساتھ تجارت کے فروغ سے ملکی

برآمدات بڑھانے میں مدد ملے گی ۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ حکومت ایز آف ڈونگ بزنس

پالیسی کے تحت غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ہر ممکن سہولیات فراہم کر رہی ہے۔ اس سے قبل

سماجی را بطے کی ویب سائٹ ٹو ئٹر پر اپنے ایک ٹویٹ میں وزیراعظم عمران خان نے ملک میں

مقیم تمام ہندو شہریوں کیلئے دیوالی کے موقع پر نیک خواہشات کا اظہار کیا اور مبارکباد دی۔

کرپشن کوجائزتسلیم

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply