corona Special jtnonline3

کرونا کا کمال، 11 سال سے خسارے کا شکار امریکی میڈیسن کمپنی منافع بخش بن گئی

Spread the love

واشنگٹن (جے ٹی این آن لائن کرونا سپیشل) کرونا کا کمال

کرونا ویکسین بنانے والی ایک اور امریکی کمپنی نے 2021ء میں اس کی فروخت

سے ہونے والے آمدن کا اندازہ بتا دیا۔ تفصیلات کے مطابق امریکی کمپنی موڈرینا

نے توقع ظاہر کی کہ رواں سال اس کی تیارہ کردہ کرونا ویکیسن کی کل فروخت

18 اعشاریہ 4 ارب ڈالر تک جائے گی اور 2010ء میں اپنے قیام کے بعد کمپنی

پہلی مرتبہ منافع میں جائے گی۔ اس سے قبل امریکی کمپنی فائزر بھی کرونا

ویکسین سے ہونے والی اپنی آمدن کا تخمینہ بتا چکی ہے۔ امریکہ میں صرف فائزر

اور موڈرینا کی تیار کردہ ویکسین کو ہی استعمال کی اجازت دی گئی ہے۔ علاوہ

ازیں یہ ان دونوں کمپنیوں کی تیار کردہ کرونا ویکسین کئی دیگر ممالک کو بھی

فراہم کی جارہی ہے۔

==-== یہ بھی پڑھیں: کرونا ویکسین کے نام پر دھوکہ، بھارتی بزرگ جوڑالٹ گیا

کمپنی کے چیف ایگزیکیٹیو آفیسر اسٹیفن بینکل کا کہنا تھا کہ کرونا کی نئی سامنے

آنیوالی اقسام کے مقابلے کے لیے بھی ویکسین پر مزید کام ہورہا ہے، جبکہ کئی

حکومتیں اس حوالے سے بھی فکر مند ہیں کہ انھیں اپنے شہریوں کو دیگر اقسام

کے کرونا وائرس سے متاثر ہونے کی صورت میں ویکسین کی بوسٹر خوراک

فراہم کرنا ہوگی۔ ان کا کہنا تھا اس صورتحال کے پیش نظر موڈرینا کمپنی اپنی

پیدواری صلاحیتوں کو بڑھا رہی ہے، 2021ء میں کمپنی 70 کروڑ سے 1 ارب

تک کرونا ویکیسن کی خوراکیں تیار کرے گی۔ علاوہ ازیں کمپنی اگلی جنریشن کی

خوراکیں تیار کرنے کا منصوبہ بھی بنا رہی ہے، جنھیں محفوظ بنا کر ترقی پذیر

ممالک کو فراہم کیا جائے گا۔ کمپنی کے مطابق اب تک 6 کروڑ کرونا ویکسین کی

خوراکوں کی ترسیل کی جا چکی ہے جبکہ 10 کروڑ خوراکوں کے لیے خام مال

دستیاب ہے۔

=قارئین=: خبر اچھی لگے تو شیئر، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

کرونا کا کمال

Leave a Reply