333

کرونا پیکیج ،پنجاب میں 18ارب کے ٹیکس معاف،25لاکھ گھرانوں کی مالی امداد کیلئے 10ارب روپے مختص کر دیئے، عثمان بزدار

لاہور(جنرل رپورٹر ) پنجاب حکومت نے کرونا وائرس سے پیدا ہونیوالی معاشی صورتحال کے پیش

نظر 18ارب روپے کے صوبائی ٹیکسز معاف کرنے کیساتھ ساتھ روزگار کی بندش سے متاثر

ہونیوالے 25لاکھ گھرانوں کو 4ہزار روپے فی گھرانہ ادائیگی کیلئے 10ارب روپے مختص کردئیے ۔

ان خیالات کا اظہاروزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے خصوصی اجلاس کے بعد میڈیا کو

بریفنگ دیتے ہوئے کیا،وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہا کہ کرونا وائرس کی وجہ سے بے شمار لوگوں

کے روزگار متاثر ہوئے ہیں اورخاص طورپر دیہاڑی دار طبقہ اورمزدور بھائی اس کی وجہ سے

مالی مشکلات کا سامنا کررہے ہیں ۔ہمیں ان کی مشکلات کا بھر پور احساس ہے ،ہم ان کو مشکل کی

گھڑی میں تنہا نہیں چھوڑیں گے حکومت پنجاب ان کے ساتھ ہے۔ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ صوبہ بھر

میں10ارب روپے کی لاگت سے 25 لاکھ گھرانوں کو چار ہزار روپے مالی امداد دی جائے گی۔یہ

امدادی رقم وفاقی حکومت کے دیگر پیکیج کے علاوہ ہوگی۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ کرونا وائرس کے

خلاف جاری جنگ میں ڈاکٹراور ہیلتھ پروفیشنل ہیروہیں ،ان کیلئے ایک ماہ کی اضافی تنخواہ بطورپر

سپیشل الاؤنس دیںگے جبکہ حکومت کرونا کے خلاف مہم میں کام کرنے والے ملازمین،ڈاکٹروں

اورہیلتھ پروفیشنل کے جاں بحق ہونے پر شہداء پیکیج دے گی۔عثمان بزدار نے کہا کہ پنجاب کی

جیلوں میں کورونا وائرس کے پھیلنے کے خدشے کے پیش نظر صوبے کی تاریخ میں پہلی دفعہ

تعزیرات پاکستان کی دفعہ401کے تحت پنجاب کی جیلوں میںکورونا وباء کی روک تھا م کیلئے قیدیوں

کی90روز کیلئے سزا معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ پنجاب میں تقریباً3100 قیدی مستفید ہوںگے۔اس

فیصلے کا اطلاق سنگین جرائم میں ملوث قیدیوں پرنہیں ہوگااور انڈرٹرائل قیدیوں کے حوالے سے

سفارشات تیار کرلی گئی ہیں اوروہ جلد وفاقی حکومت کو پیش کردی جائینگی۔ انہوںنے کہا کہ پنجاب

واحد صوبہ ہے جہاں پر امتناع وبائی امراض آرڈیننس نافذ العمل ہوچکا ہے جس سے انتظامیہ

اورمحکمہ صحت کے حکام کو کرونا کنٹرول کیلئے کیے جانے والے اقدامات پر عملدر آمد میں

سہولت ہوگی اور قانونی تحفظ حاصل ہوگا۔وزیراعلیٰ نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ حکومت

پنجاب صحافیوں کیلئے پیکیج کا بھی جائزہ لے گی اوران کے مسائل کو حل کرنے کے لئے ضروری

اقدامات کرے گی۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ کرونا مریضوں کا علاج کرنے والے عملے کیلئے پرسنل

پروٹیکشن ایکیوپمنٹ ضرورت کے مطابق موجود ہیں،پریشانی کی کوئی بات نہیں ۔انہوںنے کہاکہ یہ

کرفیو نہیں جزوی طورپر غیر ضروری ادارے بند کیے گئے ہیں اوردفعہ144کی خلاف وزری کرنے

کے خلاف کارروائی کو بھی مانیٹر کیا جارہا ہے ۔قبل ازیں وزیراعلیٰ کے زیر صدارت کرونا وائرس

سے بچائو کیلئے کھلے لان میں اجلاس منعقد کیا گیا، جس میںوزیراعلیٰ عثمان بزدار نے گفتگو کرتے

ہوئے کہا کہ نادار طبقے کو مشکل کی گھڑی میں تنہا نہیں چھوڑیںگے۔پاکستان تحریک انصاف کی

حکومت نادار طبقے کی ضروریات کا خیال رکھے گی۔وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے

کوروناوائرس کے سدباب کیلئے ریسرچ سرگرمیاں تیز کرنے کا حکم دے دیا۔وزیراعلیٰ عثمان بزدار

کی زیر صدارت خصوصی اجلاس میں بتایاگیا کہ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے زیر اہتمام چار

سٹڈی گروپ قائم کردیاگیا ہے اورریسرچ شروع کی جاچکی ہے ۔وزیراعلیٰ عثمان بزدارنے ماہرین کو

کروناوائرس کے سدباب کیلئے جلد از جلد نتیجہ خیز کاوشیں کرنے کی ہدایت کی ہے۔وزیراعلیٰ کو

بریفنگ میں ماہرین نے بتایا کہ پاکستان میں پایا جانے والاکرونا وائرس ووہان اورایران کے وائرس

سے قدرے مختلف ہے۔وزیراعلیٰ نے پرسنل پروٹیکشن اکیوپمنٹ یعنی حفاظتی لباس مقامی طورپر

تیارکرنے کا حکم دیا ہے ۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ لاہور کے ٹیکسٹائل مالک نے رضا کارانہ طورپرپی

پی ای بلامعاوضہ بنانے کی پیشکش کی ہے۔وزیراعلیٰ عثمان بزدارنے کہا کہ کورونا وائرس کو

سائنٹفک انداز میں ٹریٹ کیا جائے ،مستقل خاتمہ چاہتے ہیں ۔ہوم قرنطینہ کیلئے سٹینڈرڈ ایس او پی جلد

از جلد مرتب کیے جائیں ۔200بیڈز پر مشتمل فیلڈ ہسپتال جلد از جلد قائم کرنے کی صلاحیت حاصل

کرنا چاہتے ہیں ۔چین نے پنجاب کو کورونا وائر س کیلئے ہسپتال بنانے اورڈاکٹر فراہم کرنے کی

پیشکش بھی کردی۔علاوہ ازیںوزیراعلیٰ عثمان بزدارکوصوبائی وزیر محنت انصر مجید نیازی نے

محکمہ محنت کے ذیلی ادارے ’’پیسی‘‘ کے ملازمین کی جانب سے چیف منسٹر سپیشل فنڈ برائے

کروناکنٹرول کیلئے63لاکھ روپے کا چیک پیش کیا۔وزیراعلیٰ عثمان بزدارنے اس موقع پر گفتگو

کرتے ہوئے کہا کہ کرونا کنٹرول کیلئے ’ ’ پیسی‘‘ کے افسروں اورسٹاف کاعطیہ قابل تحسین ہے۔

Leave a Reply