corona virus

کرونا وائرس نے 192 ممالک کو جکڑ لیا،سعودی عرب میں رات کا کرفیو

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

واشنگٹن ،ریاض(جے ٹی این آن لائن مانیٹرنگ ڈیسک ) کرونا دنیا کے ایک سو بانوے ممالک میں

پھیل گیا، دنیا بھر میں مرنے والوں کی تعداد چودہ ہزار چھ سو چھیاسی ہو گئی جبکہ تین لاکھ 38 ہزار

724 افراد متاثر ہیں۔ اٹلی میں مرنے والوں کی تعداد 5 ہزار چار سو چھیتر ہوگئی، نیویارک میں کرونا

مریضوں کی تعداد دنیا بھرکے کرونا متاثرین کی پانچ فیصد ہوگئی، دیا۔کرونا نے دنیا کے ہر ملک کو

لپیٹ لیا، اٹلی میں صورتحال سب سے زیادہ تشویشناک ہے جہاں مرنے والوں کی تعداد 5 ہزار 476 ہو

گئی جبکہ 59ہزار ایک سو اڑتیس افراد متاثر ہیں، تین ہزار افراد کی حالت تشویشناک ہے۔امریکا میں

کرونا سے مرنے والوں کی تعداد چار سو اکیاون ہوگئی جبکہ متاثرین کی تعداد 34 ہزار سات سو سترہ

ہے۔ نیویارک میں کرونا مریضوں کی تعداد دنیا بھر کے مریضوں کی تعداد کا پانچ فیصد ہوگئی ہے۔

صدر ٹرمپ نے کیلی فورنیا کو انتہائی آفت زدہ قراردے دیا،۔ امریکی سینیٹر رینڈ پال میں کرونا

وائرس کی تشخیص ہوئی ہے۔چین میں گزشتہ پسانچ روز میں کرونا کا کوئی اور مریض سامنے نہیں

آیا۔ اسپین میں کرونا سے 1772افراد ہلاک ہوگئے۔ ایران میں کرونا سے مرنے والوں کی تعداد 1685

ہے۔فرانس میں چھ سو چوہتر افراد، جنوبی کوریا میں ایک سو گیارہ، برطانیہ میں کرونا سے دو سو

اکیاسی افراد لقمہ اجل بنے۔ جرمنی میں ہلاکتوں کی تعداد چورانوے ہے۔ چانسلر انجلا مرکل بھی

قرنطینہ میں چلی گئی ہیں۔بھارت میں کرونا سے سات افراد ہلاک اور تین سو چھیانوے افراد متاثرہیں۔

سعودی حکومت نے آج سے ملک بھر میں کرفیو کے نفاذ کا حکم جاری کردیا۔عرب خبر رساں ادارے

کے مطابق سعودی فرماں روا شاہ سلمان نے ایک شاہی فرمان جاری کیا جس میں پیر 23 مارچ کی

شام سے ملک بھر میں کرفیو کے نفاذ کا اعلان کر دیا گیا۔شاہی فرمان کے مطابق کرفیو 21 روز کے

لیے نافذ کیا گیا ہے کرفیو شام 7 بجے سے شروع ہوگا جو صبح 6 بجے تک جاری رہے گا۔عرب

میڈیا کے مطابق سعودی فرماں روا کی جانب سے کرفیو کا اعلان وزارت صحت کی طرف سے

کورونا کے کیسز 500 سے تجاوز کرنے کی اطلاع دینے کے بعد کیا گیا، سعودی عرب کی وزارت

صحت نے اب تک ملک میں وائرس کے 511 کیسز کی تصدیق کی ہے۔شاہی فرمان میں کرفیو کے

دوران شہریوں کو اپنی حفاظت کے لیے گھروں میں رہنے کی تاکید کی گئی ہے۔کرفیو کے نفاذ کے

سلسلے میں سعودی وزارت داخلہ کو ضرورتی اقدامات اٹھانے کی ہدایت کی گئی جبکہ سول اور

ملٹری حکام کو مکمل تعاون کا حکم دیا گیا ہے۔سعودی وزارت داخلہ نے سرکاری ملازمین اور اہم

شعبوں سے وابستہ افراد کو کرفیو سے مستثنیٰ قرار دیا ہے جب کہ بیکریز، سپر مارکیٹس، گوشت،

سبزی اور لیبارٹریز بھی کھلی رہیں گی۔اس کے علاوہ میڈیکل اسٹورز، کلینکس، اسپتال اور دوا ساز

کمپنیاں بھی کرفیو سے مستثنیٰ ہوں گی۔دوسری طرف مریکا میں کورونا وائرس سے صورتحال مزید

خراب ہوتی جارہی ہے جس کے باعث نیویارک کے میئر نے آئندہ دس روز میں طبی سہولیات کی قلت

سے خبردار کردیا۔برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق امریکا میں اس وقت کورونا وائرس کے کیسز

کی تعداد 31 ہزار سے تجاوز کرگئی ہے جب کہ تقریبا 400 سے زائد افراد وائرس سے ہلاک ہوچکے

ہیں۔امریکا میں نیویارک شہر اس وقت وبا کا مرکز سمجھا جارہا ہے جہاں ملک میں مجموعی کیسز

کے نصف کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔نیویارک میں بھی صورتحال بدتر ہوتی جارہی ہے جہاں میئر نے

خبردار کیا ہے کہ آئندہ 10 روز میں طبی سہولیات کی قلت پیدا ہوجائے گی جس سے شہر میں

صورتحال انتہائی خراب ہوگی۔نیویارک کے میئر بل ڈی بلیسیو نے کہا کہ ہمارے پاس اس وقت تقریبا

10 روز کی طبی سہولیات موجود ہیں، اگر ہمیں مزید وینٹی لیٹر نہ ملے تو لوگ مرنا شروع ہوجائیں

گے۔ریاست کے گورنر انڈریو کامو نے بتایا کہ گزشتہ روز تقریبا 15 ہزار شہریوں کے کورونا ٹیسٹ

مثبت آئے جو گزشتہ روز کی نسبت 4 ہزار زیادہ تھے۔نیویارک کے میئر نے شہریوں کو خبردار

کرتے ہوئے کہا کہ تمام امریکی شہری حقائق جاننے کے حق دار ہیں، صورتحال بدترین ہورہی ہے

جب کہ اپریل اور مئی میں مزید بری صورتحال سے دوچار ہوں گے۔عالمی وبا کورونا وائرس سے

فرانس میں ہلاکتوں کی تعداد 674 ہو گئی ہے جبکہ 16018 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی

ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق فرانس میں گزشتہ روز وبائی بیماری کورونا وائرس سے

مرنے والوں کی تعداد 112 ہو گئی ہے جس کے بعد فرانس پولیس نے لاک ڈاون کو مزید موثر بنانے

کے لیے اس کی نگرانی جدید ترین ڈرون ٹیکنالوجی سمیت ہیلی کاپٹر سے شروع کر دی چین اور

اٹلی کے بعد امریکا کورونا وائرس سے متاثرہ تیسرا بڑا ملک بن گیاچین اور اٹلی کے بعد اب امریکا

کورونا وائرس سے متاثرہ تیسرا بڑا ملک بن گیا ہے دنیا بھر میں کورونا وائرس کے متاثرہ افراد کی

تعداد 3 لاکھ سے زائد ہوگئی تھی صرف امریکا میں گزشتہ روز تک 13 ہزار 931 نئے کیسز آنے

سے وہاں مجموعی طورپر 38 ہزار 138 متاثرین ہوگئے تھے.امریکا میں وائرس سے متاثرہ 708 کی

حالت نازک ہے اور سانس کی اس مہلک بیماری سے 396 افراد پہلے ہی دم توڑ چکے ہیں جن میں

94 نئی اموات بھی شامل ہیں عالمی سطح پر کورونا وائرس سے اتوار کی دوپہر تک 3 لاکھ 19 ہزار

افراد متاثر ہوچکے تھے جبکہ تب تک 13 ہزار 699 افراد لقمہ اجل بن چکے تھے.اگر امریکا کی بات

کریں تو مختلف امریکی ٹیلی ویژن چینلز پر طبی ماہرین نے متنبہ کیا کہ متاثرہ افراد کی مجموری

تعداد زیادہ ہوسکتی ہے کیونکہ کورونا وائرس کی کم علامات والے افراد اپنی بیماری کے بارے میں

رپورٹ نہیں کررہے. امریکا میں اس وقت 12ریاستوں میں لاک ڈان جاری ہے جن میں ریاست

واشنگٹن اوہائیوایلی نوائے نیویارک نیوجرسی کیلیفورنیا نٹیکیڈیلاورلوزیانافلڈیفیامیزوری اور اوریگون

شامل ہیں جبکہ وفاقی حکومت پورے ملک میںمکمل لاک ڈان کے لیے ریاستی حکومتوں سے

مشاورت جاری رکھے ہوئے ہے.امریکا کی کئی ریاستوں میں کائونٹی کی سطح پر لاک ڈان ہے

امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کرونا وائرس سے شدید متاثرہ ریاست واشنگٹن کو آفت زدہ قرار

دینے کا اعلان کیا ہے، جس کے بعد وفاقی حکومت اس مہلک وبا کے پھیلاپر قابو پانے کے لیے

ریاست، قبائل اور مقامی عہدے داروں کی معاونت کرے گی جہاں درجنوں افراد ہلاک ہو چکے

ہیں.وائٹ ہاس کا کہنا ہے کہ قدرتی آفت زدہ یا تباہی کا شکار ریاست قرار دینے کے اعلان سے

ایمرجنسی اور بحرانی صورتِ حال سے نمٹنے میں ریاست کو وفاقی مدد مل سکے گی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply