کرونا لاک ڈاﺅن نے بنایا ناممکن کو ممکن، انتہائی بڑا مسلہ حل، سائنسدان حیران

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جنیوا(جے ٹی این آن لائن ،کرونا سپیشل ڈیسک) کرونا لاک ڈاؤن آرکٹیکا

برف سے ڈھکے زمین کے خطے آرکٹیکا کے اوپر اوزن کی زخمی اور کھوکھلی تہہ بھر گئی ہے ۔ میلوں میں پھیلے اس سوراخ کے بھرنے کے عمل کو، دنیا بھر میں انتہائی مثبت اور انتہائی حیران کن طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

Arctica ozon

سائنسدان، محققین آرکٹیکا کی ادھڑنے والی 25 فیصد اووزن تہہ کی درستگی کو ناممکن قرار دے چکے تھے، لیکن کرونا وباء سے صنعتوں اور ٹریفک کی بندش نے ناممکن کوممکن کر دکھایا۔

——————————————————————————–
یہ بھی ضرور پڑھیں : کچرے پر جنگ کا خطرہ
——————————————————————————–

تازہ رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ اوزون کی تباہ حال تہہ مکمل طور پر بھر گئی ہے اور ایسا فضائی آلودگی میں انتہائی کمی کے باعث ہوا ہے۔

آرکٹیکا اوزون تہہ کا اصل حالت میں واپس آنا دنیا کی کیلئے بہت اچھی خبر

ArktikaArctica ozon

اقوام متحدہ کے عالمی موسمیاتی تنظیم (ڈبلیو ایم او) نے اس کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ، آرکٹیکا کی اوزون کی تہہ اپنی اصلی حالت کو لوٹ آئی ہے ،اور یہ دنیا کی کیلئے ایک بہت اچھی خبرہے ۔اس کا سہراکرونا وباءکے باعث عالمی لاک ڈاﺅن کو جاتا ہے۔
ڈبلیو ایم او کے ترجمان کلیری نولیس نے جنیوا میں اقوام متحدہ کی ایک بریفنگ کو بتایا ، شمالی نصف کرہ میں موسم بہار رخصت ہو چکا ہے، اور سردی کی لہر میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے۔اب یہ علاقہ پھر نارمل ہو گیا ہے اور اوزون سوراخ بند ہو گیا ہے۔

اوزن تہہ 25 فیصد تک پھٹ چکی تھی

Arktika

اس برفانی خطے کو گزشتہ40 برس سے فضائی آلودگی کا سامنا ہے ،یورپ ، بالخصوص روس اور اس سے ملحقہ ممالک کی صنعتوں اور دنیا بھی کی موٹر گاڑیوں ،بھٹوں کی آلودگی نے اس خطے کو سب سے زیادہ متاثر کیا ہے ،اور یہاں کی اوزن تہہ 25 فیصد تک پھٹ چکی تھی ،جس کے باعث سورج کی روشنی سیدھا برفانی ٹیلوں پر پڑتی تھی، اور وہ تیزی سے پگھلنا شروع ہو گئے تھے ۔اس عمل سے دنیا بھر کے سمندروں کی سطح میں سالانہ دو سے تین انچ تک کا اضافی دیکھنے میں آ رہا تھا۔

دنیا بھر کے سائنسدان حتمی قرار دے چکے تھے اس عمل کو نہیں روکا جا سکتا

Arktika

بعض علاقوں میں تو یہ شرح5 انچ تک سالانہ ریکارڈ کی گئی ہے،دنیا بھر کے سائنسدان اس بات کو حتمی قرار دے چکے تھے کہ، اس عمل کو کوئی نہیں روک سکتا، لیکن کرونا وباء کے باعث قدرتی طور پر یہ عمل بڑھنے سے نہ صرف رک گیا،بلکہ اوزون کی تہہ اپنی اصلی حالت میں واپس آ
گئی ہے، جو کہ ناقابل یقین بات ہے۔

—————————————————————————–
قارئین : ہماری کاوش اچھی لگے تو شیئر کریں ، فالو کریں اور اپڈیٹ رہیں
—————————————————————————–

آرکٹیکا کے علاقے کو ماحولیاتی اعتبار سے دنیا بھر میں انتہائی اہم سمجھا جاتا ہے۔ 2011ء کے بعد سے آرکٹیکا کہ اوزون کی تہہ میں بڑا سوراخ سب سے بڑا واقعہ تھا ، لیکن اب یہ سوراخ بند ہوگیا ہے۔

کرونا لاک ڈاؤن آرکٹیکا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply