کابینہ کمیٹی کی شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی سفارش

Spread the love

کابینہ کمیٹی شہباز شریف

اسلام آباد،لاہور (جے ٹی این آن لائن نیوز) وفاقی کابینہ کی ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) سے

متعلق ذیلی کمیٹی نے قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی

سفارش کردی۔وفاقی کابینہ کی ای سی ایل سے متعلق ذیلی کمیٹی کا اجلاس گزشتہ روز ہوا جس میں

کمیٹی نے نیب سفارشات کاجائزہ لیااورشہباز شریف کانام ای سی ایل پر ڈالنے کامعاملہ وفاقی کابینہ

کو بھجوانے کا فیصلہ کیا تاکہ وہ شہباز شریف کا نام ای سی ایل پر ڈالنے کی حتمی منظوری دے ۔

اجلاس میں وزیرداخلہ شیخ رشید ، مشیر احتساب شہزاد اکبر اور قومی احتساب بیورو (نیب) کے حکام

شریک ہوئے جبکہ ذرائع کے مطابق وزیر قانون فروغ نسیم نے اجلاس میں آن لائن شرکت کی۔

اجلاس کے بعد وزیر داخلہ شیخ رشید نے مشیر داخلہ شہزاد اکبر کیساتھ پریس کانفرنس کرتے ہوئے

کہا نیب نے شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی درخواست کی، شریف خاند ان کے 5 لوگ

مفرور ہے، آئین کے تحت کسی ایک ملزم کو خصوصی رعایت نہیں دی جا سکتی۔ بلیک لسٹ میں نام

پاسپورٹ آفس ڈالتا ہے، ای سی ایل میں نام ڈالنے کا کام کابینہ کمیٹی نے کرنا ہے، کابینہ اجلاس سے

اس فیصلے کی توثیق کی جائیگی، پندرہ روز کے اندر شہباز شریف نظر ثانی کی درخواست دے

سکتے ہیں، وزارت داخلہ نوے روز میں اس درخواست کا فیصلہ کریگی۔ شہباز شریف خود بھی کمیٹی

کے سامنے پیش ہو سکتے ہیں۔شیخ رشید نے کہا کالعدم تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کو بھی ری

ویو کرینگے، تحریک لبیک کو بھی خود پیش ہونے کی ہدایت کی ہے، ٹی ایل پی کے 1677لوگوں کو

رہا کر دیا گیا ہے، عمران خان عاشق رسولؐ ہیں، ہم نے لبیک یا رسول اﷲ ؐکا نعرہ لگایا، عمران خان

مدینہ کی گلیوں میں ننگے پاوں پھرتے رہے۔ محمد بن سلمان ہمارے دوست ہیں، فطرانے اور چاولوں

والی سوچ نابالغوں کی سوچ ہے، شہباز شریف کا مقدمہ احتساب عدالت لاہور میں چل رہا ہے، شہباز

شریف کیخلا ف متعدد کیسز زیر سماعت ہیں، حدیبیہ پیپر ملز کا کیس ابھی حل نہیں ہوا، کسی کیس

میں نئے شواہد ملے تو اسے دوبارہ کھولا جا سکتا ہے، مسلم لیگ ن عوام کو گمراہ کرنے کی ماہر

ہے، حدیبیہ پیپر ملز میں شریف خاندان کی بریت نہیں ہوئی، شہباز شریف بیرون ملک بھاگنے کی

کوشش کر رہے تھے، ماضی میں یہ ڈیل کرکے جدہ چلے گئے تھے۔ حدیبیہ پیپر مل کے کیس کو میل

ملا پ کرکے بند کر دیا گیا، جو کیس کبھی عدالت میں چارج شیٹ نہیں ہوا اس نے بند ہی ہونا تھا۔

شریف خاندان منی لانڈرنگ میں ملوث ہے۔ 90اور دوہزار کے بعد کی دھائی میں شر یف نے ترقی

کی۔ شیخ رشید نے کہا کابینہ کی ای سی ایل کمیٹی نے شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کیلئے

کابینہ کو سفارش کردی ہے۔آرٹیکل 25 بھی یہ کہتا ہے جب باقی ملزم ای سی ایل پر ہوں تو کسی ایک

ملزم سے خصوصی سلوک نہیں ہوسکتا ہے، عدالت کا ایک فیصلہ بلیک لسٹ کے حوالے سے ہے

لیکن شہباز شریف کا نام بلیک لسٹ پر نہیں ،بلکہ 7 مئی 2021 کے آرڈر پر ہیں ۔ تین چیزیں ہوتی

ہیں، نمبر ایک بلیک لسٹ جو پاسپورٹ آفس ڈالتا ہے، دوسرا پی این آئی ایل جو ایف آئی اے ڈالتا ہے

اور تیسرا کابینہ کی تین رکنی کمیٹی کو فیصلہ کرکے کابینہ کو بھیجنا ہوتا ہے۔وزیر داخلہ نے کہا یہ

خود نواز شریف کے ضمانتی ہیں اور ان کی جانب سے ہمارے پاس کوئی درخواست نہیں آئی ۔ ہمیں

کوئی طبی مسئلے کی بات نہیں کی گئی جبکہ پہلے کیسز میں طبی بنیاد پر ذکر کیا گیا تھا۔شیخ رشید

نے وضاحت کرتے ہوئے کہا تینوں اراکین نے اتفاق رائے سے ویڈیولنک پر شہباز شریف کا نام ای

سی ایل پر ڈالنے کی نیب کی درخواست منظور کی اور کابینہ کو سفارش کی۔ ٹی ایل پی کی نظرثانی

کا انتظار کر رہے ہیں اور انہیں بھی خود پیش ہونے کی اجازت ہے۔ ٹی ایل پی کے 1677 افراد کو

16 ایم پی او کے تحت رہا کردیا گیا، 280 ایف آئی آرز درج ہیں، یہ لوگ قانونی عمل سے گزریں

گے۔ 16 ایم پی او کے تحت 1074 افراد کو عدالت نے رہا کیا اور باقی 1677 افراد حکومت نے رہا

کردیے جبکہ 25 لوگوں کے کیسز بھی ختم کردیے گئے ہیں۔شیخ رشید نے کہا سعودی عرب سے

قیدیوں کی رہائی کا معاہدہ کیا ہے اور 1100 قیدیوں کو سعودی عرب سے پاکستان منتقل کریں گے،

جن چھوٹے کیسز کے حامل افراد بھی ہیں۔ وزیراعظم سے درخواست کی ہے اور کابینہ میں لے کر

جائیں گے کہ اگر وزارت کو ایک ارب روپے مل گئے تو سیکڑوں ملزم رہا ہوسکتے ہیں لیکن 30

ملزموں کو ہم واپس نہیں لے کر آئیں گے جو ڈرگ یا سزائے موت میں ہیں۔اس دوران مشیر داخلہ

شہزاد اکبر نے بتایا لیگی صدر شہباز شریف پر مختلف عدالتوں میں کیسز چل رہے ہیں، شہباز کو باہر

جانے دیا تو تمام کیسز التواء کا شکار ہو جائیں گے، تحقیقاتی ادارے کا اختیار ہے کسی بھی ملزم کو

روک لے، کابینہ سے منظوری کے بعد شہباز کا نام ای سی ایل میں ڈالا جائیگا۔ ذیلی کمیٹی نے

شہبازشریف کا معاملہ وفاقی کابینہ کو بھیج دیا ہے، حدیبیہ پیپرملز مدر آف آل منی لانڈرنگ کیسز ہے

جو ابھی حل نہیں ہوا، کسی بھی کیس میں نئی شہادت سامنے آئے تو اسے کھولا جا سکتا ہے، کیسز

میں بری تب ہوتے ہیں جب ان کا ٹرائل ہو، حدیبیہ پیپرملز کیس تکنیکی بنیادوں پر بند ہوا تھا۔دوسری

جانب تر جمان مسلم لیگ نون مریم اورنگزیب نے کہا کہ کیا شہباز شریف کا نام ای سی ایل پر ڈالنے

سے پاکستان کا قرض کم ہوگا؟ حدیبیہ کیس کھولنے سے کیا حکومت کی نالائقی چْھپ جائے گی؟

انہوں نے کہا پاکستان کا قرض فروری میں 36 ہزار ارب روپے سے تجاوز کرچکا ہے۔واضح رہے

شہباز شریف نے علاج کی غرض سے بیرون ملک جانے کیلئے عدالت سے اجا ز ت طلب کی تھی،

جس پر عدالت نے اْنہیں بیرون ملک جانے کی اجازت دیدی تھی تاہم قومی احتساب بیورو (نیب) نے

شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی درخواست وزارت داخلہ کو بھجوائی تھی۔

کابینہ کمیٹی شہباز شریف

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply