ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن کی قیمت تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن کی قیمت تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

Spread the love

اسلام آباد (جے ٹی این بزنس نیوز) ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن

ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن کی قیمت ایک مرتبہ پھر تاریخ کی بلند ترین سطح پر

پہنچ گئی ہے۔ ایک ہی دن میں بٹ کوائن کی قیمت تین ہزار 613 ڈالر بڑھ گئی۔

ڈیجیٹل کرنسیوں کی قیمتیں جاری کرنیوالی ویب سائٹ کوئین ڈیسک کے مطابق

آج بٹ کوائن کی قیمت میں تاریخی اضافہ ہوا۔ گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران بٹ

کوائن کی قیمت 5.65 فیصد بڑھ چکی ہے۔ بٹ کوائن کی قیمت 62 ہزار 572 ڈالر

سے بڑھ کر 66 ہزار 185 ڈالر پر پہنچ گئی ہے۔ جس کے مطابق 1 بٹ کوائن کی

پاکستانی قیمت ایک کروڑ 14 لاکھ 17 ہزار ہو گئی ہے۔

=–= معیشت و کاروبار سے متعلق مزید خبریں (=–= پڑھیں =–=)

تفصیلات کے مطابق گذشتہ ہفتے میں ایک بٹ کوائن کی قیمت باسٹھ ہزار ڈالر

سے زائد ریکارڈ کی گئی تھی۔ بِٹ کوائن کی قیمت پچھلے ماہ کی نسبت چالیس

فیصد اوپر چلی گئی ہے۔ آخری مرتبہ اپریل میں بِٹ کوائن ساٹھ ہزار ڈالر کی

ریکارڈ سطح پر پہنچا تھا۔ ماہرین کا کہنا ہے2021ء بٹ کوائن کی تاریخ کا اہم

ترین سال ہے۔ جس میں بٹ کوائن کی قیمت ریکارڈ سطح کو چھو گئی ہے اور

ایل سلواڈور نے ڈیجیٹل کرنسی کو قانون حیثیت دیدی ہے۔ چین میں کریک ڈاؤن

اور ایلون مسک کے ٹیسلا کی جانب سے اسے مزید ادائیگی کے طور پر قبول نہ

کرنے کے فیصلے کے بعد مئی میں کرنسی کی قیمت تیزی سے گر گئی تھی۔

اگست میں بٹ کوائن کی قیمت میں بہتری کے بعد پچاس ہزار ڈالر سے او پر چلی

گئی تھی۔ جنوری سے اگست تک بٹ کوائن کی قدر میں 81 فیصد اضافہ دیکھنے

میں آیا تھا۔ جبکہ جنوری 2021ء میں بٹ کوائن صرف 27 ہزار ڈالر میں ٹریڈ کر

رہا تھا۔

=–= ٹیکنالوجی سے متعلق مزید خبریں ( =–= پڑھیں =–= )

کسی حقیقی کرنسی کے مقابلے میں بٹ کوائنز یا دیگر کرپٹو کرنسیز ہر طرح

کے ضابطوں یا حکومتی کنٹرول سے آزاد ہے اور اس کا استعمال بہت آسان ہے۔

اس وقت اسے متعدد ممالک جیسے کینیڈا، چین اور امریکہ وغیرہ میں استعمال

کیا جارہا ہے تاہم دنیا میں انٹرنیٹ تک رسائی رکھنے والا ہر شخص اس کرنسی

کو خرید سکتا ہے۔ اس کرنسی کی لین دین کے لیے صارف کا لازمی طور پر بٹ

کوائن والٹ اکاؤنٹ ہونا چاہئیے جسے بٹ کوائن والٹ اپلیکشن ڈاؤن لوڈ کر کے

بنایا جا سکتا ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ رواں برس امریکی یونیورسٹی کی

جانب سے کی جانیوالی ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ بٹ کوائن کی

مائننگ پر سالانہ 121.36 ٹیرا واٹ آورز بجلی خرچ ہوتی ہے۔ امریکہ کی

کیمبرج یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق بجلی کی اس کھپت میں اس وقت تک

کمی واقع نہیں ہو سکتی جب تک بٹ کی قدر میں نمایاں کمی نہیں ہوتی۔ بٹ

کوائن کی مائننگ پر سالانہ 121.36 ٹیرا واٹ آورز کی خرچ ہونے والی بجلی

پاکستان کی کل کھپت سے زیادہ ہے، پاکستان کی کُل سالانہ کھپت 90 ٹی ڈبلیو

آورز ہے۔

ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن ، ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن ، ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوائن

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply