چین :’’آئس‘‘نامی منشیات کے گاڈ فادر کو پھانسی دیدی گئی

Spread the love

چین کے سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق کیمونسٹ پارٹی سے تعلق رکھنے والے

ایک بڑے منشیات فروش کو پھانسی دے دی گئی ہے۔چین کے جنوبی صوبے

گوانگ ڈانگ کے گا ئوں بوشے کے کیمونسٹ پارٹی کے سربراہ کائے ڈانگجیا کو

کرسٹل میتھ المعروف آئس کا گاڈر فادر تصور کیا تھا۔کائے ڈانگجیا جس گائوں کے

سربراہ تھے اس گائوں کے بیس فیصد گھروں میں کرسٹل میتھ تیار کی جاتی تھی۔

سرکاری ذرائع ابلاغ کیمطابق کائے ڈانگجیا کے تحفظ میں کاشے گائوں میں پورے

ملک میں تیار ہونے والی کرسٹل میتھ کی پیداوار کا ایک تہائی حصہ تیار ہوتا تھا۔

کائے ڈانگجیا پر الزام تھا کہ وہ نہ صرف خود منشیات کی تیاری اور سمگلنگ میں

ملوث تھے بلکہ پورے گائوں میں مجرموں کا تحفظ کرتے تھے۔ وہ اپنے گائوں میں

سب سے بڑے سرکاری اہلکار تھے۔کائے ڈانگجیا کو 2013 میں ایک بڑے ملٹری

پولیس کے آپریشن میں گرفتار کیا گیا تھا۔اس چھاپے میں تین ہزار پولیس اہلکاروں

نیالصبح بوشے گائوں پر چھاپہ مار کر تین ٹن کرسٹل میتھ اور 180 مشتبہ افراد کو

گرفتار کر لیا تھا۔پولیس نے اسی آپریشن کے دوران آدھا ٹن کیٹامائن منشیات بھی

برآمد کی تھی۔کائے ڈانگجیا کو 2016 میں منشیات کی تیاری ، سمگلنگ اور

مجرموں کو تحفظ دینے کے الزام پر موت کی سزا سنائی گئی تھی۔

Leave a Reply