چینی سکینڈل، عمران حکومت نے ملکی تاریخ‌ بدل دی، ذمہ دار بے نقاب 63

چینی سکینڈل، عمران حکومت نے ملکی تاریخ‌ بدل دی، ذمہ دار بے نقاب

اسلام آباد (جے ٹی ان آن لائن سٹاف رپورٹر) چینی سکینڈل تحقیقاتی رپورٹ

حکومت چینی بحران پر وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کی تحقیقاتی رپورٹ

کا فرانزک کرنیوالے کمیشن کی حتمی رپورٹ منظر عام پر لے آئی، جس کے تحت

جہانگیر ترین، مونس الہٰی، اومنی گروپ اور عمر شہریار کو بحران کا ذمہ دار

قرار دیتے ہوئے سیکنڈل میں ملوث افراد کیخلاف فوجداری مقدمات درج اور

ریکوری کرنے کی سفارش سمیت ریکوری کی رقم گنے کے متاثرہ کسانوں میں

تقسیم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

ذمہ دار ریگولیٹرز، کیس نیب، ایف آئی اے اور اینٹی کرپشن میں چلیں گے

معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر کا کہنا ہے کمیشن نے چینی بحران کا

ذمہ دار ریگولیٹرز کو قرار دیا ہے، جن کی غفلت کے باعث بحران پیدا ہوا اور

قیمت بڑھی، کمیشن نے کیسز نیب، ایف آئی اے اور اینٹی کرپشن کو بھجوانے کی

سفارش بھی کی ہے، عید کے بعد وزیراعظم کی ہدایت پر سفارشات تیار ہوں گی۔

———————————-یہ بھی پڑھیں——————————————
چینی سکینڈل، ایڈیشنل ڈائریکٹر ایف آئی اے خسروبختیار کا مخبر نکلنے پر معطل
—————————————————————————-

وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد شہزاد اکبر کا وزیر اطلاعات سینیٹر شبلی فراز

کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا ماضی میں کسی حکومت کی اتنی

ہمت نہیں تھی کہ ایسا کمیشن بنائے اور پھر اس کی تحقیقات کو منظر عام پر لائے۔

مگر ملکی تاریخ میں ایک نئے باب کا اضافہ وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں

پی ٹی آئی حکومت نے کیا ہے کہ کسی سکینڈل کی تحقیقات کیلئے کمیشن بنایا بلکہ

اس کی رپورٹ کو بھی عوام کے سامنے پیش کردیا-

کسانوں کو ہر طرح سے لوٹا جاتا رہا ہے، شہزاد اکبر

اس تاریخ ساز فیصلے پر عملدرآمد کو سراہا جانا چاہیے، ہم صحیح سمت میں بڑھ

رہے ہیں۔ چینی بحران کے ذمہ داروں میں سے ابھی کسی کا نام ایگزٹ کنٹرول

لسٹ (ای سی ایل) پر نہیں ڈالا گیا، کوئی تحقیقاتی ادارہ کہے گا تو کابینہ نام ای سی

ایل میں ڈالنے پر غور کرے گی۔ انکوائری کمیٹی نے مفصل رپورٹ پیش کی ہے-

وزن میں 15 فیصد سے زیادہ کٹوتی، کچی پرچی اور کمیشن ایجنٹ

رپورٹ میں لکھا گیا ہے کہ شوگرملز کسانوں کو امدادی قیمت سے کم قیمت دیتے

ہیں اور کسانوں کو گنے کے وزن میں 15 فیصد سے زیادہ کٹوتی کی جاتی ہے-

کچی پرچی اور کمیشن ایجنٹ کے ذریعے کم قیمت پر کسانوں سے گنا خریدا جاتا

ہے اور اس کی لاگت زیادہ دکھائی جاتی ہے۔

شہباز شریف فیملی، جہانگیر ترین گروپ فراڈ میں ملوث

شہباز شریف فیملی کی کمپنی میں ڈبل رپورٹنگ ثابت ہوئی، 2018۔2017 میں

انہوں نے ایک اعشاریہ 3 ارب روپے اضافی کمائے جبکہ19۔2018 میں انہوں نے

78 کروڑ روپے اضافی کمائے- جہانگیر ترین گروپ کی شوگر ملز ڈبل بلنگ اور

اوور انوائسنگ میں ملوث نکلی ہیں اور کارپوریٹ فراڈ میں ملوث پائی گئی ہیں۔

وفاقی وزیر خسرو بختیار کا بھائی میں چینی بحران کا اہم کردار

شہزاد اکبر نے کہا کہ خسرو بختیار کے بھائی کی شوگر مل ہے ان کی اپنی نہیں،

خسرو بختیار کے بھائی کے پاس کوئی سیاسی عہدہ نہیں، خسرو بختیار کو عہدہ

چھوڑنے کا نہیں کہہ سکتے، جو براہ راست ملوث ہوگا اس کیخلاف کارروائی

ہوگی۔ فرانزک آڈٹ میں شارٹ لسٹ کی گئِی ملز میں پہلی مل الائنس ہے جو ‘آر

وائی کے’ گروپ کی ملکیت ہے، جس میں مونس الہٰی کے 34 فیصد شیئرز ہیں۔

اومنی گروپ کو نوازنے کیلئے سندھ حکومت نے 9.3 ارب کی سبسڈی دی

شہزاداکبر نے کہا وزیراعظم کا فیصلہ ہے کمیشن کی رپورٹ من وعن عوام کے

سامنے رکھی جائے اور باقی شوگز ملز کا بھی فرانزک ہوناچاہیے- سندھ حکومت

نے 9.3 ارب روپے کی سبسڈی دی، اومنی گروپ کو فائدہ دینے کیلئے دی گئی،

20-2019 میں وفاق نے کوئی سبسڈی نہیں دی، 2018 میں شاہد خاقان عباسی کے

دور میں سبسڈی دی گئی۔ گزشتہ پانچ سال میں شوگر ملز کو 29 ارب روپے کی

سبسڈی دی گئی ہے۔ ( چینی سکینڈل تحقیقاتی رپورٹ )

وزیراعظم کا مشیروں،معاونین کو بھی اثاثے ظاہر کرنے کا حکم

اس موقع پر وزیر اطلات شبلی فراز کا کہنا تھا حکومت کا منشور تبدیلی لانا اور

مافیا کو بے نقاب کرنا ہے، غیر منتخب کابینہ ارکان بھی اپنے اثاثے ڈیکلیئر کریں

گے، وزیراعظم نے غیر منتخب مشیران اور معاونین کے اثاثے بھی ظاہر کرنے

کی ہدایت دی ہے۔ اس کے علاوہ کابینہ نے مفادات کے ٹکراؤ کا قانون جلد نافذ

کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

جس نے جُرم کیا معافی نہیں سزاء ملے گی، عمران خان

وزیراعظم عمران خان نے اعلان کیا ہے کہ کوئی چاہے کتنا ہی طاقتور کیوں نہ

ہو، جرم کی معافی نہیں ملے گی۔ قانون اپنا راستا اختیار کرے گا۔ وزیراعظم

عمران خان نے شوگر کمیشن کے سربراہ واجد ضیا کو شاباش دیتے ہوئے کہا ہے

کہ آپ نے تحقیقات کے دوران بہترین کام کیا۔ وزیراعظم اور کابینہ اراکین نے کہا

کہ پوری تحقیقاتی رپورٹ میں کوئی ابہام نہیں ہے۔

وزیراعظم کا مافیاز کیخلاف جنگ جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ

وزیراعظم نے ایک بار پھر اپنے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے اعلان کیا کہ مافیا کے

خلاف جنگ جاری رکھیں گے۔ ان مافیاز کیخلاف لمبی جدوجہد کی ہے، کسی

صورت موقف سے یچھے نہیں ہٹوں گا۔ حکومت میں آکر پتا چلا ملک مافیاز کے

رحم وکرم پر چھوڑ دیا گیا ہے، جس طرف دیکھو مافیا سرگرم ہیں۔ ملک کو برے

طریقے سے لوٹا گیا ہے-

——————————————————————————
دوستو : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر کریں، فالو کریں اپڈیٹ رہیں
——————————————————————————

وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا مجھے خوشی ہے کہ پوری کابینہ کرپشن کیخلاف جنگ میں میرے ساتھ ہے، اور میں وہی کام کر رہا ہوں جو وطن عزیز کے عوام کیلئے بہتر ہے۔

چینی سکینڈل تحقیقاتی رپورٹ

اپنا تبصرہ بھیجیں