حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

Spread the love

پشاور( بیورو چیف:– عمران رشید خان) پھولوں کا شہر پشاور

ماضی میں پھولوں کا شہر کہلانے والا خیبر پختونخوا کا صوبائی دارالحکومت

پشاور تاریخی اعتبار سے پوری دنیا میں اہمیت کا حامل رہا ہے، قدیم زمانے میں

یہ شہر تجارت کے حوالے سے خطے کا تجارتی مرکز تھا، تجارتی قافلے جب

شہر کا رخ کرتے تو کئی ہفتے یہاں قیام کرتے، شہر بھر میں میلے کا سماں ہوتا

لوگ تجارتی سامان کی خرید و فروخت میں مشغول رہتے-

=-،-= خیبر پختونخوا سے متعلق مزید خبریں (=-= پڑھیں =-=)

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

قیام پاکستان کے بعد اس شہر پر کئی حکمران آئے جو اس کی خوبصورتی کیلئے

وقتاََ فوقتاََ کام بھی کرواتے رہے اس کے باوجود یہ شہر بڑھتی آبادی کیساتھ اپنی

خوبصورتی کھونے لگا، باغات اور شاہراہوں کے کنارے لگے گھنے درخت عدم

توجہی کے باعث ختم ہو کر رہ گئے-

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیلحکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

=-،-= تین چار دہائیوں سے برسراقتدار آئی حکومتوں کی تساہل پسندی

سیاسی لحاظ سے بھی یہ شہر کافی ذرخیز کئی نامور شخصیات اس کے دامن میں

پروان چڑھیں، تین چار دہائیوں سے اس شہر ناپُرساں پر کئی حکومتیں آئیں، اربوں

روپے کے ترقیاتی کام ہوئے، سڑکیں پُل بڑی بڑی عمارتیں کھڑی ہو گئیں ہر

حکومت نے شہر کی بحالی کا بیڑا اٹھایا لیکن ہر بار یہ شہر بحالی کی بجائے

سیاست کی نذر ہوتا رہا، کئی بار ایسا بھی ہوا کہ نئی حکومت کے آنے کے بعد

پچھلی حکومت کے شروع کردہ ترقیاتی منصوبوں پر پانی پھیر دیا گیا-

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیلحکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

=-،-= کرپشن و اقرباء پروری نے شہر کی تاریخی حیثیت بدل دی

کرپشن و اقرباء پروری کا دور عروج پر پہنچا تو شہر اپنی تاریخی حیثیت کھو کر

ایک بار پھر کھنڈرات اور گندگی کے ڈھیر کا منظر پیش کرنے لگا، پھولوں کے

شہر نے مہک کی بجائے غلیظ تعفن کی بو لے لی، ہر جگہ بکھرا ہوا کچرا، جگہ

جگہ گندگی کے ڈھیر لگے ہوئے ہیں، نالیاں گندگی سے اٹی پڑی ہیں اور ان سے

اٹھنے والے تعفن نے سارے ماحول کو بدبو دار کر رکھا ہے-

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

گلی کوچوں چوراہوں میں ابلتی نالیوں کا گندا پانی جہاں راہگیروں کیلئے مشکلات

بنا دکھائی دیتا ہے، وہیں نماز کیلئے مسجد جانیوالے شہری بھی اس سے عاجز آ

چکے ہیں، کہیں گلی کے درمیان گندگی کے ڈھیر لگے ہیں تو کہیں شہریوں کے

گھروں دروازوں کے آگے جبکہ خالی پلاٹ تو جیسے مکمل طور گندگی کیلئے ہی

وقف کئے جا چکے ہوں، دوسری طرف کئی مقامات پر ڈبلیو ایس ایس پی کے

عملہ نالیوں سے گندگی نکال کر سرکاری نلکوں اور سبیلوں کے پاس اکٹھا کر کے

اسے اٹھانا ہی بھول جاتا ہے جو پانی کے بوسیدہ پائپوں میں شامل ہو کر لوگوں

کے گھروں تک پہنچ رہا ہے، شہر بھر میں مچھر مکھیوں کی بھی بہتات ہے جبکہ

اندرون شہر میں وبائی امراض تیزی سے پھیل رہی ہیں-

=-،-= گندگی و تعفن سے اندر شہر کیرونقیں ماند پڑ گئی ہیں

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

اندرون شہر جہاں کے گلی کوچوں میں کبھی لوگ گھروں کے باہر تھڑوں پر بیٹھ

کر گھنٹوں گپ شپ لگانے میں مشغول رہتے تھے، لیکن اب کوئی ان محلوں میں

ایک لمحہ بھی کھڑا ہونا گوارہ نہیں کرتا، جبکہ ماضہ میں وادی پشاور کے اطراف

کے پہاڑوں میں بسنے والے صفائی پسند لوگ جو کبھی اپنے پیاروں سے ملنے

بخوشی شہری علاقوں میں آتے اور یہاں بطور مہمان رہتے ہوئے گلی محلوں میں

گھومتے پھرتے نظر آیا کرتے تھے، اب اپنا ضروری کام نمٹاتے ہی چلتے بنتے

ہیں-

=-،-= شہری ذہنی مریض بن چکے اور مہمان قیام کرنے سے گریزاں

حکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیلحکمرانوں کی غفلت سے پھولوں کا شہر پشاور کوڑا دان میں تبدیل

شہر کی ایسی ابتر صورتحال کے باعث شہری ذہنی مریض بن رہے ہیں جبکہ

انہیں بنیادی سہولیات گھر کی دہلیز پر مہیا کرنے کے دعویدار سیاسی مداریوں کے

شہر کی گلی کوچوں کی دیواروں پر نصب اپنے نام کی تختیوں کے عین نیچے یا

اس کے پاس لگے گندگی کے ڈھیر بھی صاف کرانے میں مکمل ناکام نظر آ رہے

ہیں، ادھر تقریبا آٹھ سالوں میں اربوں روپے کا ضیاع تو ہو گیا لیکن ڈبلیو ایس ایس

پی شہر کو صاف کرنے میں کامیاب نہ ہو سکا، بلکہ شہر گزشتہ حکومتوں کے

ادوار سے کئی درجہ زیادہ غلا ظت میں اٹہ ہونے کی تصویر بن چکا ہے-

(=-: نوٹ :-=) اس سلسلے میں مزید سنسنی خیز انکشافات اگلی رپورٹ میں پڑھیں

پھولوں کا شہر پشاور ، پھولوں کا شہر پشاور ، پھولوں کا شہر پشاور ، پھولوں کا شہر پشاور

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply