0

پشاور میں ٹرانس جینڈرز پر عرصہ حیات تنگ، جائیں تو جائیں کہاں؟

Spread the love

پشاور( بیورو چیف/ عمران رشید خان)پشاور میں ٹرانس جینڈرز

Journalist Imran Rasheed

صوبہ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں بسنے والے خواجہ سراء پر عرصہ حیات تنگ کر

دیا گیا ہے، آئے روز عوامی مقامات پر ٹرانس جینڈر کے ساتھ کوئی نہ کوئی تشدد دلخراش واقعہ

پیش آنا معمولی سی بات ہونا نظر آرہا ہے اسی طرح کا ایک واقعہ گزشتہ روز پشاور کے شہری پر

=-،-= خیبر پختونخوا سے متعلق مزید خبریں (=-= پڑھیں =-=)

رونق مقام ہشتنگری میں رات گئے ایک خواجہ سرا کے ساتھ پیش آیا مقامی ہوٹل کے باہر بیٹھے دو

خواجہ سراؤں کو نامعلوم افراد نے زبردستی وہاں سے اٹھ جانے کو کہا تاہم وجہ پوچھنے پر انہوں

نے خواجہ سرا پر سنگین نتائج کی دھمکیاں دیتے ہوئے تشدد کا نشانہ بنایا اور وہاں سے چلتا کیا اس

موقع پر جے ٹی این نے مظلوم طبقے کی حمایت کی روایت قائم رکھتے ہوئے موقع اور خواجہ

سراء کا مؤقف ریکارڈ کرکے اسکی آواز اٹھائی اس موقع پر پشتو زبان میں متاثرہ خواجہ سراء نے

بتایا کہ لوگوں نے انہیں ہوٹلوں کے اندر تو درکنار باہر بھی بیٹھنے پر بھی خود ساختہ پابندی عائد

کر رکھی ہے اس نے کہا کہ نامعلوم شخص کی جانب سے گزشتہ روز بھی درجن بھر افراد کے

سامنے میں دھکے دیئے اور تشدد بھی کیا جب خواجہ سراء سے اس کی وجہ پوچھی گئی تو وہ

یہ تو نہ کہہ سکا کہ اسکا جرم صرف اور صرف ایک “خواجہ سراء ہونا ہی ہے” لیکن اسکی طرف

سے ایسا جواب دینا کہ آپ لوگ پوچھ لوگ کیوں ایسا کیا جارہا ہے کا مطلب کچھ یہی نکالا جاسکتا

ہے تاہم خواجہ سراء یہ بات کرتے ہوئے محافظوں دروازے کی طرف چل پڑا کہ وہ انکے خلاف

مقدمہ درج کرانے گا البتہ اب یہ معلوم نہ ہوسکا کہ اس مظلوم طبقے کی وہ محافظ کیا مدد کریں

کرسکیں گے جنہوں نے حال ہی میں خواجہ سراء کی آواز کا گلا گھونتے ہوئے پشاور پریس کلب کے

تقدس کا بھی خیال نہ کیا واضح رہے صوبے کے مرکزی پریس کلب کے واقعے کے بعد احتجاج کے

دوران ٹرانس جینڈر کے عہدیداروں نے کیا تھا کہ آئے روز تشدد کی وجہ سے وہ پشاور چھوڑنے پر مجبور ہوچکے ہیں۔

پشاور میں ٹرانس جینڈرز ، پشاور میں ٹرانس جینڈرز ، پشاور میں ٹرانس جینڈرز

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply