پاکستان کو ایک اور امتحان کا سامنا، شدید ٹڈی دل حملوں کی ہولناک وارننگ 119

پاکستان کو ایک اور امتحان کا سامنا، شدید ٹڈی دل حملوں کی ہولناک وارننگ

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

نیویارک،اسلام آباد(جت ٹی این آن لائن نیوز) پاکستان ٹڈی دل وارننگ

ٹڈیوں کے حملوں سے پریشان کسانوں کیلئے پاکستان میں بارشوں کی پیشگوئی نے

خطرے کی نئی گھنٹی بجا دی ہے- عالمی ادارے فوڈ اینڈ ایگری کلچر آرگنائزیشن

نے خبردار کیا ہے پاکستان میں بارش کے بعد ٹڈیوں کے حملے میں تیز تر اضافہ

ہوسکتا ہے- تیز بارش ٹڈیوں کی افزائش کیلئے سازگار ماحول پیدا کرتی ہے، نرم

زمین پر ٹڈیاں ایک سکوائر میٹر میں 1000 انڈے دے سکتی ہیں اور ایک ٹڈا یومیہ

2 گرام خوراک کھا سکتا ہے۔

——————————————————————————
یہ بھی پڑھیں: ٹڈی دل، اقوام متحدہ کا پاکستان کیلئے انسدادی کرائسز اپیل کا ارادہ
——————————————————————————

تفصیلات کے مطابق عالمی ادارے فوڈ اینڈ ایگری کلچر آرگنائزیشن نے خبردار

کیا ہے کہ ٹڈیوں کے حملوں سے پریشان کسانوں کیلئے پاکستان میں بارشوں کی

پیشگوئی نے خطرے کی نئی گھنٹی بجادی ہے۔ رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ

درمیانے درجے کا ایک غول یومیہ 35 ہزار افراد کی خوراک چٹ کر سکتا ہے

اور کروڑوں ٹڈیوں کا غول ہوا کے رخ پر یومیہ 150 کلومیٹر سفر طے کر سکتا

ہے۔

بارش کے بعد سروے اور ایکشن پلان پر فوری عمل ناگزیر، ایف اے او

فوڈ ایگری کلچر آرگنائزیشن نے حکومت پاکستان پر زور دیا ہے کہ موسلا داھار بارش کے بعد سروے اور ایکشن پلان پر فوری عمل کریں۔ ملک میں شدید غذائی قلت کا بھی خدشہ ہے۔ مون سون میں کنٹرول نہ کیا گیا تو ٹڈیوں کو فیلڈ میں کنٹرول کرنا مشکل ہوگا۔

ملک کے 60 اضلاع میں ٹڈی دل موجود ہے، این ڈی ایم اے

این ڈی ایم اے نے ملک بھر میں ٹڈی دل کیخلاف آپریشن کی تفصیلات پیش کردیں جس کے مطابق اس وقت ملک کے 60 اضلاع میں ٹڈی دل موجود ہے۔ ترجمان این ڈی ایم اے نے کہا ہے کہ بلوچستان میں 31، خیبر پختونخوا میں 9، پنجاب اور سندھ میں 10،10 اضلاع متاثرہوئے ہیں،ٹڈی دل کے حملہ ذدہ علاقوں کا سروے اور کنٹرول آپریشن جاری ہے، ملک بھر میں 1127 ٹیمیں لوکسٹ کنٹرول آپریشن میں حصہ لے رہی ہیں۔

24 گھنٹوں میں 2 لاکھ 90 ہزار ہیکٹر رقبہ کا سروے، 4200 کا ٹریٹمنٹ

ترجمان نے کہا کہ گذشتہ 24 گھنٹوں میں 2 لاکھ 90 ہزار ہیکٹر رقبہ کا سروے ہوا۔ 4200 ہیکٹر رقبہ کا ٹریٹمنٹ کیا گیا، بلوچستان میں 1500، پنجاب میں 800 ہیکٹر پر سپرے کیا گیا۔ خیبر پختونخوا میں 700 اور سندھ میں 1200 ہیکٹر رقبہ ٹریٹمنٹ کیا گیا۔

کپاس کی مجموعی ملکی پیداوار متاثر ہونے کا خدشہ

ٹڈی دل کے حملوں کے باعث کپاس کی مجموعی ملکی پیداوار متاثر ہونے کا خدشہ ہے- تفصیلات کے مطابق ملک میں ٹڈی دل کے حملوں کی وجہ سے کپاس کی فصل کو شدید نقصان پہنچا ہے، پنجاب، بلوچستان اورسندھ کے بیشتر کاٹن زونز میں ٹڈی دل کے حملے کے باعث کپاس کی مجموعی ملکی پیداوار متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

کپاس کی ریکارڈ پیداوار ہونے کا امکان تھا، کاٹن جینرزایسوسی ایشن

کاٹن جینرزایسوسی ایشن کے چیئرمین احسان الحق نے کہا نہری پانی کی دستیابی کے باعث کپاس کی ریکارڈ کاشت ہونے کا امکان تھا، تاہم یہ ٹڈی دل کے حملے کے باعث اب خطرے میں پڑ گئی ہے، رواں سال پاکستان میں روئی کی ایک کروڑ پچاس لاکھ بیلز پیدا ہوں گی۔

50 فیصد فصل متاثر ، 1000 ارب روپے سے زائد نقصان کا خدشہ

دوسری جانب سندھ آباد گار بورڈ کے رہنما محمود نواز شاہ کا کہنا ہے کہ مقامی تخمینے کے مطابق 50 فیصد فصل متاثر اور ایک ہزار ارب روپے سے زائد کا نقصان ہو سکتا ہے۔

——————————————————————————
دوستو : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر کریں، فالو کریں اپڈیٹ رہیں
——————————————————————————

خیال رہے پاکستان میں 25 اگست سے 20 اکتوبر تک ٹڈی دل کے حملوں کا خطرہ ہے، وزیراعلیٰ سندھ کا کہنا ہے کہ ٹڈی دل ابھی ختم نہ کیا تو نئے سال کی فصلوں کو برباد کر دے گا۔

پاکستان ٹڈی دل وارننگ

Leave a Reply