پاکستان میں کپاس کی پیداوار 34.35 فیصد کم، نوبت درآمد تک پہنچ گئی

پاکستان میں کپاس کی پیداوار 34.35 فیصد کم، نوبت درآمد تک پہنچ گئی

Spread the love

کراچی (جے ٹی این آن لائن بزنس نیوز) پاکستان میں کپاس

پاکستان کاٹن جنرز ایسوسی ایشن (پی سی جی اے) نے انکشاف کیا ہے کہ ملک

میں کپاس کی پیداوار 34.35 فیصد کم ہو کر 29 لاکھ گانٹھ کمی کے بعد 55 لاکھ

71 ہزار گانٹھوں تک رہ گئی ہے۔ پی سی جی اے نے یہ اعدادوشمار اپنی سالانہ

رپورٹ میں پیش کئے ہیں۔ ٹیکسٹائل انڈسٹری کے نمائندوں نے 29 لاکھ گانٹھ کی

کمی اور اس سنگین صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ناقص پیداواری

صلاحیت سے برآمدات پر مبنی ٹیکسٹائل کے شعبہ متاثر ہوسکتے ہیں جس کی

ملک کی مجموعی برآمدات میں 55 سے 60 فیصد شراکت ہے۔ کپاس کے ماہر اور

کاٹن بروکرز فورم کے چیئرمین نسیم عثمان نے کہا کہ یہ 30 سالوں میں سب سے

کم کپاس کی پیداوار ہے جو ٹیکسٹائل کے شعبے کیساتھ ساتھ برآمدات کے لیے بھی

خطرناک ہے۔

یہ بھی پڑھیں: چین کا چاند پر کپاس اْگا نے کا کامیاب تجربہ

واضح رہے کپاس کی پیداوار میں سندھ اور پنجاب میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔

گزشتہ ماہ جنوری 2021ء کے آخر تک پنجاب میں کپاس کی پیداوار گزشتہ سال

کی اسی مدت میں پیدا ہونے والی 50 لاکھ 14 ہزار گانٹھوں کے مقابلے میں 34

ہزار 36 لاکھ گانٹھوں تک رہی جبکہ سندھ میں پیداوار 38.5 فیصد تک کم ہو کر

گزشتہ سال کی اسی مدت میں 34 لاکھ 72 ہزار گانٹھوں کے مقابلے میں 21 لاکھ

34 ہزار گانٹھوں تک رہ گئی ہے۔ اگرچہ رواں مالی سال کے پہلے6 ماہ کے دوران

ٹیکسٹائل کی برآمدات 7.8 فیصد اضافے سے 7 ارب 44 کروڑ 20 لاکھ ڈالر کا

اضافہ ہوا تاہم صنعت کو رواں مالی سال کے پہلے 5 ماہ میں 32 کروڑ 10 لاکھ

ڈالر کی روئی درآمد کرنی پڑی تھی۔

=—–= قارئین =-: ہماری کاوش پسند آئی ہو گی،اپ ڈیٹ رہنے کیلئے ہمیں فالو کریں

پاکستان میں کپاس

Leave a Reply