پاکستان میں پہلی بار ہندو خاتون سمن پاون بدانی سول جج کے عہدے پر فائز

Spread the love

پاکستان میں پہلی بار ہندو برادری سے تعلق رکھنے والی خاتون سمن پاون بدانی سول جج کے عہدے پر فائز ہوگئی ہیں۔پہلی خاتون ہندو جج کا تعلق سندھ کی تحصیل شہداد کوٹ سے ہے اور وہ سول ججز کی میرٹ لسٹ میں 54ویں نمبر پر آئی ہیں۔ سمن کماری کے والد پون پودانی پیشے کے اعتبار سے ڈاکٹر ہیں۔سندھ ہائی کورٹ کی ویب سائٹ پر آویزاں کی گئی فہرست کے مطابق سمن کماری نے رول نمبر 2299کے تحت سول اینڈ جوڈیشیل مجسٹریٹ کا امتحان دیا جس میں وہ 54ویں نمبر پر رہیں۔پاکستان میں ماضی میں بھی خواتین بڑے عہدوں پر فائز رہی ہیں اور اس کی سب سے بڑی مثال ایشیا کی پہلی خاتون وزیر بے نظیر بھٹو ہیں جو دو مرتبہ ملک کی وزیراعظم منتخب ہوئیں۔ماضی قریب میں سندھ کے پسماندہ علاقے سے تعلق رکھنے والی ہندو برادری کرشنا کماری پاکستان پیپلزپارٹی کی جانب سے سینیٹر منتخب ہوئی ہیں۔قبل ازیں ہندو برادری سے تعلق رکھنے والے جسٹس بھگوان داس بھی چیف جسٹس آف پاکستان کے عہدے پر فائز رہے ہیں۔ہندو پاکستان کی کل آبادی کا صرف دو فیصد ہیں اور مسلمانوں کے بعد سب سے زیادہ تعداد ان کی ہے۔

Leave a Reply