پانی کی قلت سامنا

خریف کی فصل کیلئے 17 فیصد پانی کی قلت کا سامنا ہے ،چیئرمین ارسا

Spread the love

پانی کی قلت سامنا

اسلام آباد (جے ٹی این آن لائن نیوز) قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل کو بر یفنگ دیتے

ہوئے چیئرمین ارسا راو ارشاد نے بتایا کہ خریف سیزن میں 17فیصد پانی کی قلت کا سامنا ہے

تربیلا میں تخمینے سے 20 فیصد کم پانی آیا اس سال آبی ذخائر میں تخمینے سے 62 فیصد کم پانی

آیا ۔پیر کو قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل کا اجلاس نواب یوسف تالپور کی زیر

صدارت وزارت آبی وسائل کی کمیٹی روم منعقد ہوا۔ اجلاس وزارت کے اعلی حکام نے شرکت کی

اجلاس میں ارسا کے حکام نے کمیٹی کو پانی کے معاملات پر بریفنگ دی ۔ممبر ارسا سندھ نے کہا کہ

سندھ کو 17 کی بجائے 22 فیصد قلت کا سامنا ہے اس موقع پر ممبر ارسا سندھ نے چیئرمین ارسا

کے اعدادوشمار پر اعتراض اٹھا تے ہوئے کہا کہ یہ اعدادو شمار توڑ مروڑ کر بتائے جا رہے ہیں

ہمیں ہمارے کوٹے کا اضافی پانچ ہزار کیوسک پانی نہیں دیا جا رہا جس پر چیئرمین ارسا نے کہا کہ

ہم ہر سال اوسط 28 ملین ایکڑ فٹ پانی سمندر میں ضائع کرتے ہیں اس پانی کی مالیت 7 ارب ڈالر

سالانہ بنتی ہے ڈیم بنائے جاتے تو یہ پانی استعمال کیا جا سکتا تھا ملکی ضرورت کا 70 فیصد پانی

مئی، جون، جولائی میں آتا ہے اس سال مئی، جون حتی کہ جولائی میں بھی ڈیمز میں پانی نہیں

صورتحال یہ ہے کہ ہمیں گندم، کپاس وغیرہ امپورٹ کرنا پڑتی ہے نئے ڈیمز نہ بنائے تو ہم سیلاب

سے بچیں گے نہ پانی کی قلت سے نئے ڈیمز نہ بنے تو صوبے آپس میں لڑتے رہیں گے ہم سے بڑا

بےوقوف کوئی نہیں جو پانی ضائع تو کرتے ہیں استعمال کیلئے ڈیم نہیں بناتے چیئرمین کمیٹی یوسف

تالپور نے کہا کہ آپ نے بیوقوف کس کو کہا؟ آپ اپنے الفاظ واپس لیں ۔ چئرمین ارسا راو ارشاد

نے کہا کہ میرا مقصد کسی کی دل آزاری نہیں تھا، اپنے الفاظ واپس لیتا ہوں۔چئیر مین کمیٹی چیئرمین

کمیٹی نواب یوسف تالپور نے کہا کہ دریائے سندھ پاکستان کا آلودہ ترین دریا بن چکا ہے سندھ

حکومت اس حوالے سے کیا اقدامات کر رہی ہے۔ سیکرٹری آبپاشی سندھ نے کہا کہ یہ بات درست

ہے، آلودگی کو کنٹرول کرنے کیلئے کام کر رہے ہیں 20 سال کا کچرا ایک دن میں ختم نہیں ہو سکتا،

فنڈز درکار ہیں ۔ چیئرمین قائمہ کمیٹی نے معاملے پر ذیلی کمیٹی تشکیل دےدی۔

پانی کی قلت سامنا

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply