وزیراعلیٰ محمود خان کا اپر چترال میں بچوں کی اموات میں اضافے کا نوٹس

وزیراعلیٰ محمود خان سے اختلافات، چیف سیکرٹری، آئی جی پولیس خیبر پختونخوا تبدیل

Spread the love

وفاقی حکومت نے آزاد کشمیر اورخیبر پختونخوا کے چیف سیکرٹری اور آئی جی پو لیس تبدیل کر دیے، نعیم خان کو آئی جی کے پی کے جبکہ صلاح الدین محسود کو آئی جی آزاد کشمیر، گریڈ اکیس کے مطہر نیاز رانا کو چیف سیکر ٹری آزاد کشمیر جبکہ ایڈ منسٹریٹو سروس کے گریڈ اکیس کے افسر محمد سلیم کو چیف سیکرٹری کے پی کے لگایا گیا ،

گریڈ 22کے سابق چیف سیکرٹری کے پی کے نوید کامران بلو چ کو اسٹیبلشمنٹ ڈویژن رپورٹ کرنے کی ہدایات جاری کر دی گئیں جبکہ چیف سیکرٹری آزاد کشمیر خواجہ دائود کی خدمات سپریم کورٹ کے سپرد کرتے ہوئے انہیں ایڈیشنل رجسٹرار سپریم کورٹ تعینات کئے جانے کا امکان ہے ۔اسٹیبلشمنٹ ڈویژ ن نے اس سلسلہ میں نو ٹیفکیشن جاری کر دیے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی حکومت نے یہ اقدام وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا سے اختلافات کے باعث اٹھایا ہے ، سیاسی حکومت لیویز اور پولیس کے مابین متوازی سسٹم لانا چاہتی ہے، جبکہ سابق چیف سیکرٹری اور سابق آئی جی کے پی کی جانب سے سسٹم کی مخا لفت کی گئی،

دونوں اعلیٰ افسران کا مؤقف تھا لیویز اور پولیس کا متوازی سسٹم لانا سپریم کورٹ کے حکم کیخلاف ہے، دوسری جانب سے سابق آئی جی خیبر پختونخواہ صلاح الدین نے صوبائی حکومت سے اختلافات کی تصد یق کرتے ہوئے بتایا انہوں نے قبائلی اضلاع میں عارضی طور پر لیویز ایکٹ کی تجویز دی تھی،

تجویز کا مقصد خاصہ داروں اور لیویز کی نوکری بچانا تھا، 6 ماہ بعد خاصہ دار اور لیویز پولیس کا حصہ بن جاتے، قبائلی اضلاع کی فورس کی کمانڈ ڈی پی او اور ڈی آئی جی نے کرنی تھی، قبائلی اضلاع میں پولیسنگ پر چیف سیکرٹری سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز ایک پیج پر تھے،

وزیراعلیٰ اور ماتحت بیوروکریسی کے اس حوالے سے تحفظا ت تھے، مسئلہ کے حل کیلئے منگل کو اعلی سطح اجلاس بلایا گیا تھا، اجلاس میں مجھ سمیت چیف سیکریڑی نے بھی شرکت کرنا تھی تاہم اطلاع دی گئی ہے کہ ہمیں عہدوں سے ہٹا کر تبادلے کر دیئے گئے ہیں۔

Leave a Reply