وزیراعظم کا چینی ہم منصب کو فون، باہمی تعلقات مزید مستحکم کرنے کا اعادہ

Spread the love

وزیراعظم چینی ہم منصب فون

اسلام آباد (جے ٹی این آن لائن نیوز) وزیراعظم عمران خان نے چینی ہم منصب سے ٹیلی فونک رابطہ

کر کے پاک چین سفارتی تعلقات کے قیام کی 70 ویں سالگرہ پر مبارکباد دی، دونوں رہنماؤں نے

کورونا ویکسین کیلئے تعاون بڑھانے پر اتفاق کیا۔وزیراعظم عمران خان نے چینی ہم منصب اور چینی

قیادت کو مریخ کے کامیاب مشن پربھی مبارکباد دی اور کہا مریخ پر چینی سیارے کی کامیاب لینڈنگ

چین کی ٹیکنالوجی پاور کا ثبوت ہے، پاک چین تعلقات سدا بہار سٹریٹجک تعاون پر مبنی شراکت داری

میں بدل چکے ہیں۔ پاک چین اقتصادی راہداری بیلٹ اینڈ روڈ کا فلیگ شپ منصوبہ ہے، یہ منصوبہ

اقتصادی سرگرمی، ملازمتوں کے مواقع، دو طرفہ تعلقات بڑھانے کا باعث بنا، سال 2021 پاک چین

تعلقات کی 70 ویں سالگرہ کا خصوصی موقع ہے، دونوں ممالک پاک چین سفارتی تعلقات کی 70

سالگرہ کو بھرپور انداز میں منائیں گے۔وزیراعظم نے کورونا سے نمٹنے کیلئے پاک چین تعاون

اورانسداد کورونا ویکسین کی مسلسل فراہمی پر چین کا شکریہ ادا کیا جبکہ قومی ادارہ صحت میں

ویکسین تیاری کیلئے چین کے تعاون کو سراہا۔ عمران خان نے اعلیٰ سطح کے روابط کا تسلسل جاری

رکھنے پر زور دیا،اس موقع پر دونوں رہنماؤں نے پاک چین دو طرفہ تعلقات کو مزید فروغ دینے کے

عزم کا بھی اعادہ کیا۔بعدازاں اپنی زیر صدارت نیشنل کوارڈی نیشن کمیٹی برائے ہاؤسنگ، کنسٹرکشن

اینڈ ڈویلپمنٹ کے ہفتہ وار اجلاس میں وزیراعظم عمران خان نے کہا جس رفتار سے بغیر منصوبہ

بندی شہروں کی حدود میں اضافہ ہو رہا ہے، اس سے ناصرف ماحولیات کو شدید خطرات لاحق ہیں

بلکہ فوڈ سکیورٹی اور انتظامی مسائل پیدا ہونے کا اندیشہ ہے لہٰذا اس امر پر فوری توجہ دینے کی

ضرورت ہے۔اس موقع پر وزیراعظم نے معاشرے کے کمزور طبقوں کو روزگار کیلئے آسان اور کم

قیمت پر قرضوں کی فراہمی، کم آمدنی والے افراد کو ذاتی گھروں کی تعمیر کیلئے قرضو ں کی

فراہمی، صحت کارڈ کی فراہمی اور غریب خاندانوں کے کم از کم ایک فرد کو ٹیکنیکل اور پرفیشنل

ہنر دلوانے کے حوالے سے متعلق جامع پلان بنانے اور پیش کرنے کی ذمہ داری وزیرِ خزانہ کو

سونپ دی۔اجلاس میں گرین ایریاز کے تحفظ کیلئے زرعی، رہائشی و دیگر زمینوں کے استعمال کے

حوالے سے مروجہ قوانین وقواعد میں تبدیلی کرنے، اور پائلٹ پراجیکٹ کے طور پر گرین بلڈنگ

کوڈز کا نفاذ نیا پاکستان ہاؤسنگ منصوبوں سے کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔دریں اثناء وزیر اعظم عمران

خان نے اپنی زیرِ صدارت راوی اربن ڈیلپمنٹ اتھارٹی اور سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ کے جائزہ اجلاس

میں راوی اربن ڈیلپمنٹ اتھارٹی اور سینٹرل بز نس ڈسٹرکٹ کو منصوبوں کی مقررہ وقت میں تکمیل

پر زور دیتے ہوئے کہا راوی سٹی اور سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ سے ملک میں معاشی سرگرمیاں بڑھیں

گی، جس سے روزگار کے مواقع پیدا ہونگے، لاہور پر آبادی کا دبا کم ہوگا اور شہریوں کو تمام

سہولیات سے آراستہ بین الاقوامی معیار کی رہائش میسر آئے گی۔اجلاس کو راوی سٹی کے تحت

سیفائر-بے منصوبے پر پیش رفت سے تفصیلی طور پر آگاہ کیا گیا، دو ہزار ایکٹر پر محیط منصوبے

سے حکومت کو وصول ہونیوالے محصولات و آمدن کا تخمیہ25 رب روپے لگایا گیا ہے اسکے علاوہ

منصوبہ مجموعی طور پر 150 ارب روپے کی معاشی سرگرمیوں کو جنم دیگا،راوی سٹی کے مزید

دو ذیلی منصوبے جن میں زون 4،5،7 اور ایلبی-جزیرہ شامل ہیں جلد سرمایا کاری کیلئے میسر

ہونگے۔دوسری طرف وزیر اعظم عمران خان نے نوکنڈی تاماشکیل شاہراہ کا سنگ بنیاد رکھنے کی

ورچوئل تقریب سے خطاب میں کہا تحریک انصاف قانون کی حکمرانی کی جنگ لڑرہی ہے، مافیاز

ہمیں ناکام نہیں کر سکتے ، مافیا بلیک میل کرناچاہتاہے، کہتے ہیں کہ اگراین آراونہ دیا توحکومت

گرادیں گے، مافیاز کو قانو ن کے نیچے لا کر رہونگا ، اتنے معاشی مسئلے کسی حکومت کو نہیں

ملے جو ہماری حکومت کو ملے،اگر قرضوں کی قسطیں ادانہ کرتے توڈیفالٹ کرجاتے، 50 سال بعد

پاکستان کی انڈسٹری ترقی کی راہ پر گامزن ہے،پیچھے رہ جانیوالے علاقوں کو مرکزی دھارے میں

لائیں گے۔ مخالفین کواپنی سیاسی موت نظرآرہی ہے، مافیاکوخوف ہے حکومت کامیاب نہ ہوجائے،

لیکن یہ ہمیں ناکام نہیں کر سکتے۔ وفاق میں حکومت میں آئے تو پہلے ہی دن کہا گیا ناکام ہو گئے،

مخالفین کہتے تھے کہاں ہے نیا پختونخوا؟، ہم کے پی میں دوتہائی اکثریت لے کر دوبارہ واپس آگئے۔

ماضی میں قانون کی نہیں طاقت کی حکمرانی تھی، وہ معاشرہ ترقی نہیں کرسکتا جہاں قانون کی

بالادستی نہ ہو، مدینہ کی ریاست میں قانون کی بالادستی تھی۔ اقتدار میں آنے کے بعد پہلا سال معیشت

کوسنبھالنے میں لگا ،دوسرے سال کوروناآگیا، ہم نے معیشت اورعوام دونوں کو کورونا سے بچایا،

دنیابھر میں تسلیم کیا جاتا ہے کورونا میں جس ملک نے اپنی معیشت کو بچایا وہ پاکستان ہے، ایس او

پیز پر عملدرآمد کریں تو اس مشکل وقت سے بھی نکل جائیں گے۔ماضی میں بلوچستان سے ووٹ نہ

ملنے کی وجہ سے چھوڑ دیا گیا، جس سے بلوچستان دیگر صوبوں سے پیچھے رہ گیا ،اہل بلوچستان

کے لوگوں کو یہ تاثر پہنچا ان کی کوئی فکر نہیں کرتا۔ نوکنڈی سے ماشکیل ملک کا پسماندہ ترین

علاقہ ہے، بلوچستان کا ایک مسئلہ علاقوں میں بہت زیادہ فاصلہ ہے، کوشش ہے ہر علاقے میں ٹرک

چلیں تا کہ کوئی بھوکا نہ سوئے، ہماری کوشش ہے مزدور کو مفت کھانا اور رہائش دیں۔ بھارت میں

سب سے زیادہ امیر اور غریب میں فرق ہے، چین نے 70کروڑ لوگوں کو غربت سے نکالا، چین نے

کرپشن پر425 وزیروں کوجیل میں ڈالا۔ہماری اولین ترجیح غربت کا خاتمہ اور صحت کی بنیادی

سہولیات کی فراہمی ہے۔تعلیمی نظام میں بہتری کیلئے ملک میں پہلی بار ایک نصاب لے کر آ رہے

ہیں۔ بعدازاں وزیرِ اعظم عمران خان سے گورنر سٹیٹ بینک رضا باقر نے ملاقات کی جس میں روشن

ڈیجیٹل اکاؤنٹ کے حوالے سے تفصیلی گفتگو کی گئی، گورنر سٹیٹ بینک نے وزیرِ اعظم کو بتایا

سعودیہ عرب دورے کے بعد وہاں مقیم پاکستانیوں کے روشن ڈیجیٹل اکاؤنٹ کے استعمال میں اضافے

کا رجحان دیکھنے میں آیا ہے جس کے زرِ مبادلہ کے ذخائر پر خاطر خواہ مثبت اثرت مرتب ہو رہے

ہیں۔

وزیراعظم چینی ہم منصب فون

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply