126

نیب نے شہباز شریف کے اثاثے منجمد کرنے کا حکم جاری کر دیا

لاہور( سٹاف رپورٹر)قومی احتساب بیورو نے اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کے اثاثے منجمد کرنے کے

احکامات دے دیے۔گزشتہ ماہ نیب نے آمدن سے زائد اثاثہ جات سمیت دیگر کیسز میں شہبازشریف

فیملی کے مختلف کمپنیوں میں شیئرز منجمد کردیئے تھے جب کہ بینک اکاونٹس منجمد کرنے کیلئے

متعلقہ بینکوں کو بھی لیٹرز لکھ کر ایس ای سی پی اورشہباز شریف فیملی کو نوٹس جاری کیے تھے۔

تاہم اب نیب نے شہباز شریف کے تمام اثاثے منجمد کرنے کے احکامات جاری کردیے ہیں نیب نے

شہباز شریف کے جو اثاثہ منجمد کرنے کے احکامات دئیے ہیں ان میں 96 ایچ اور 87 ایچ ماڈل ٹائون

کے گھر بھی شامل ہیں۔ نیب نے حکم دیا ہے کہ شہباز شریف کی ایبٹ آباد میں ڈونگا گلی کی رہائشگاہ

اور ہری پور میں 3 جائیدادیں منجمد کی جائیں۔نیب نے لاہور میں ڈیفنس فیز 5 کے 2 گھر بھی منجمد

کرنے کے احکامات جاری کر دئیے ہیں، چنیوٹ میں دو مقامات پر 182 اور 209 کینال اراضی بھی

منجمد کر دی گئی، نیب کے مطابق شہباز شریف کی لاہور میں 13 مختلف مقامات پر جائیدادیں منجمد

کی گئی ہیں۔ اثاثے منجمد کرنے کے احکامات ڈی جی نیب لاہور شہزاد سلیم کی جانب سے جاری

کیے گئے،۔دوران تفتیش انکشاف ہوا کہ شہبازشریف نے پراپرٹیاں اپنی اہلیہ نصرت شہبازشریف کے

نام سے بنارکھی ہیں۔ مکان نمبر 96ایچ دی کوپرآیٹوو ماڈل ٹاون سوسائٹی لمیٹڈ کا رقبہ 6کنال ہے،

مکان نمبر 96ایچ دی کوپرآیٹوو ماڈل ٹاون سوسائٹی لمیٹڈ کا رقبہ 4کنال ہے، نشاط لاجز ڈونگا گلی

ایبٹ آباد کا رقبہ نو کنال ایک مرلہ ہے، ماڈل ٹاون اور ڈونگا گلی میں واقع پرآپرٹیز نصرت

شہبازشریف کے نام پر ہیں، ہری پور میں پیر سہاوا کے قریب کاٹج نمبر 23 کو سیل کرنے کے

احکامات جاری کئے گئے، ہری پور میں پیر سہاوا کے قریب ولا نمبر انیس کا رقبہ 6مرلہ ہے، ہری

پور میں پیر سہاوا کے قریب خسرہ نمبر 371 کا پلاٹ بھی سیل کرنے کے احکامات جاری ،ہری پور

میں واقع تینوں جائیدادیں شہبازشریف کی دوسری اہلیہ تہمینہ درانی کے نام ہیں ، ڈی ایچ اے فیز فائیو

میں کے اے بلاک میں واقع مکان نمبر 8/7 کا رقبہ 10 مرلہ ہے،لاہور: ڈی ایچ اے فیز فائیو میں کے

اے بلاک میں واقع مکان نمبر 8/8 کا رقبہ 10 مرلہ ہے، ڈی ایچ اے فیز فائیو میں واقع دونوں پراپرٹیز

تہمینہ درانی کے نام ہیں ، اثاثہ جات تب تک منجمد رہیں گے جب تک احتساب عدالت میں ریفرنس

دائر نہیں کیا جاتا، نوٹیفکیشن کی معیاد پندرہ دن تک ہے ، پندرہ دن کے اندر نیب حکام احتساب عدالت

سے رجوع کرینگے،

اپنا تبصرہ بھیجیں