modi indian prime minister 166

نوبل انعام یافتگان کی جانب سے مودی کو ایوارڈ دینے کی مخالفت

نیویارک مانیٹرنگ ڈیسک )تین نوبل انعام یافتہ شخصیات نے بل اور ملینڈا گیٹس

فائونڈیشن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ انسانی حقوق کی پامالیوں میں ملوث ہونے اور

کشمیر کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کو

ایوارڈ دینے کے فیصلے پر نظرثانی کرے جس کے بعد یہ تقریب انعقاد سے قبل

ہی متنازعہ ہو گئی ہے۔نوبل ایوارڈ حاصل کرنے والی ایران کی سیاسی کارکن

شیریں عبادی، امن کا پرچار کرنے والے شمالی ایئرلینڈ کے میریڈ میگوائیر

Mairead Maguire اور یمنی صحافی توکل عبدالسلام کامران نے مودی کو

ایوارڈ دینے کی مخالفت اور اس فیصلہ کو واپس لینے کا مطالبہ ملینڈا گیٹس

فائونڈیشن سے کھلے خط کے ذریعے کی ہے۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق

بل اور ملینڈا گیٹس فائونڈیشن نے بھارت میں لوگوں کو بیت الخلا کی سہولت دینے

کے لئے کی جانے والی کوششوں پر مودی کے اعزاز میں تقریب کا اعلان کررکھا

ہے تاہم بعض عالمی شہرت یافتہ شخصیات نے اس کی سخت مخالفت کی ہے۔یوں

بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی نیو یارک میں بل اور ملینڈا گیٹس فائونڈیشن

کے اعزاز میں مجوزہ تقریب میں شرکت متنازعہ بن گئی ہے اور اہم شخصیات

سمیت کئی فنکاروں نے تقریب میں شرکت نہ کرنے کا اعلان کردیا۔بعض تجزیہ

نگاروں نے سوال اٹھایا ہے کہ مودی کو ایوارڈ کو ایک ایسے وقت پر دیا جارہا

ہے جب اس نے کشمیر میں لوگوں پر عرصہ حیات تنگ کیا ہوا ہے۔بل اینڈ ملینڈا

گیٹس فائونڈیشن نے ابھی تک مودی کے لئے باقاعدہ طور پر گول کیپر ایوارڈ

2019 دینے کا اعلان نہیں کیا ہے۔اس سال یہ ایوارڈ حاصل کرنے والوں کے نام کا

اعلان تقریب میں کیا جائے گا تاہم یہ کہا جارہا ہے کہ مودی کو بھی یہ ایوارڈ دیا

جارہا ہے۔

Leave a Reply