Pakistan-corona-virus

نئی کورونا لہر بہت خطرناک، مزید 61 اموات، سخت پابندیاں لگانے کا انتباہ

Spread the love

نئی کورونا لہر خطرناک

اسلام آباد(جے ٹی این آن لائن نیوز) وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے خبردار کیا ہے کہ نئی

کورونا لہر بہت خطرناک ہے اور مثبت کیسز میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے جس کے باعث حکومت

عوامی سرگرمیوں پر سخت پابندیاں لگاسکتی ہے۔ جمعرات کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر

اپنے بیان میں اسد عمر نے کہا کہ کووڈ مثبت کیسز میں نمایاں اضافہ ہوا ہے، اسپتالوں میں روزانہ

مریضوں کے داخلے ہورہے ہیں، انتہائی نگہداشت والے افراد بھی تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ اسد عمر

نے خبردار کیا کہ اگر لوگوں کی جانب سے احتیاطی تدابیر(ایس او پیز) پر عملدرآمد بہتر نہیں ہوا تو

ہم ان کی سرگرمیوں پر سخت پابندیاں لگانے پر مجبور ہوں گے۔ اسد عمر نے اپیل کی کہ لوگ بہت

زیادہ احتیاط کریں، اب کی بار کورونا کی نئی لہر پہلے سے زیادہ مہلک ہے اور بہت تیزی سے پھیل

رہی ہے۔ این سی اوسی نے شہروں کی جانب سے ایس او پیز کا خیال نہ رکھنے پر سخت تحفظات کا

اظہار کیا ہے ۔ جمعرات کو وفاقی وزیر اسد عمر کی زیر صدارت این سی او سی کا اجلاس ہوا جس

میں ہیلتھ گائیڈ لائینز کے نفاز کے حوالے سے بریفنگ دی گئی ۔شہروں کی جانب سے ایس او پیز کا

خیال نہ رکھنے پر این سی او سی کی جانب سے شدید تحفظات کا اظہار کیا گیا ۔ بریفنگ میں کہاگیا کہ

ہیلتھ گائیڈ لائینز پر عمل درآمد کا جامع جائزہ لینے کی ضرورت ہے۔این سی او سی کی جانب سے

بڑھتی شرح اموات اور مثبت کیسز پر شدید تحفظات کا اظہار کیا گیا ۔ بریفنگ میں بتایاگیاکہ مثبت

کیسز کی شرح 7.5 فیصد سے بھی زائد ہوچْکی ہے ۔ بتایاگیاکہ تمام بڑے شہروں میں مثبت کیسز کی

شرح 5 فیصد تک پہنچ چْکی ہے ۔صوبائی حکومتوں کو ایس او پیز پر عمل درآمد یقینی بنانے کے

لیے سخت اقدامات کی ہدایت کی گئی ۔ بتایاگیاکہ مْلک بھر میں ماسک کے استعمال اور سماجی

فاصلوں کی خلاف ورزیاں رپورٹ ہورہی ہیں۔این سی او سی کی جانب سے شہریوں کو ایس او پیز پر

عمل کرنے کی درخواست کی گئی ۔ این سی اوسی نے کہاشہری ایس او پیز پر عمل کرکے ایک بار

پھر بہترین مثال قائم کرسکتے ہیں۔این سی او سی نے کہاکہ شہریوں کی جانب سے تعاون نہ کرنے

کے نتیجے میں کاروبار بند اور معاشی اور معاشرتی سرگرمیوں پر پابندیاں عائد کی جاسکتی ہیں۔ این

سی اوسی نے اتوار اور قومی تعطیلات کے دوران مْلک بھر میں قائم ویکسینشن سینٹرز بند رکھنے کا

فیصلہ کیا دریں اثنا کورونا وائرس سے مزید 61 افراد جاں بحق ہو نے کے بعد اموات کی تعداد 13

ہزار 717 ہوگئی، پاکستان میں کورونا کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 6 لاکھ 15 ہزار 810 ہوگئی۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 3

ہزار 495 نئے کیسز رپورٹ ہوئے، پنجاب میں ایک لاکھ 91 ہزار 186، سندھ میں 2 لاکھ 62 ہزار

207، خیبر پختونخوا میں 77 ہزار 443، بلوچستان میں 19 ہزار 269، گلگت بلتستان میں 4 ہزار

965، اسلام آباد میں 49 ہزار 476 جبکہ آزاد کشمیر میں 11 ہزار 264 کیسز رپورٹ ہوئے۔ ملک بھر

میں اب تک 96 لاکھ 48 ہزار 242 افراد کے ٹیسٹ کئے گئے، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 44 ہزار

377 نئے ٹیسٹ کئے گئے، اب تک 5 لاکھ 77 ہزار 501 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں جبکہ 2 ہزار

62 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔ پاکستان میں کورونا سے ایک دن میں 61 افراد جاں بحق ہوئے

جس کے بعد وائرس سے مرنے والوں کی تعداد 13 ہزار 717 ہوگئی۔ پنجاب میں 5 ہزار 896، سندھ

میں 4 ہزار 469، خیبر پختونخوا میں 2 ہزار 188، اسلام آباد میں 531، بلوچستان میں 202، گلگت

بلتستان میں 103 اور آزاد کشمیر میں 328 مریض جان سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ اسلام آباد میں کورونا

مثبت کیسز کی یومیہ شرح بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے اور اسلام آباد میں کورونا مثبت کیسز کی

یومیہ شرح 7.77فیصد تک ریکارڈ کی گئی ہے، ڈی ایچ او اسلام آباد ڈاکٹر ضعیم ضیا کے مطابق

گزشتہ روز اسلام آباد میں کورونا کے مزید538 کیسز رپورٹ ہوئے۔ دوسری جانب اسلام آباد میں

کورونا وائرس کے خلاف جاری مہم کے دوران اب تک 21952 فرنٹ لائن ہیلتھ ورکرز و بزرگ

شہریوں کو کورونا ویکسین لگادی گئی ہیخیبر پختونخوا میں کورونا کی تیسری لہر کے پیش نظر 9

اضلاع میں ہفتے اوراتوارکو تجارتی مراکزبند کرنے کا اعلان کردیا۔خیبرپختو نخواکے9 اضلاع میں

ہفتیاوراتوار کو تجارتی مراکزبند ہوں گے ، ان اضلاع میں پشاور، چارسدہ ، مردان، نوشہرہ، کوہاٹ،

سوات، صوابی، مالاکنڈ اور لوئر دیر شامل ہیں۔

نئی کورونا لہر خطرناک

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply