Imran Khan Prim minister Pakistan

میرٹ کے بغیر کوئی ملک نہیں چل سکتا،عمران خان

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

میرٹ کے بغیر

پشاور/ باجوڑ(جے ٹی این آن لائن نیوز) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ میرٹ پر ترقیاں ہونے

سے ملک ترقی کرتے ہیں ، میرٹ کے بغیر دنیا میں کوئی سسٹم نہیں چل سکتا ،ایم ٹی آئی کے سسٹم

کا مقصد ہی سزا اور جزا کے نظام کو دوبارہ سے لانا ہے ، میرٹ پر کام کرنے والے ڈاکٹروں کو

ترقیاں دی جائیں اور کام نہ کرنے والوں کو وارننگ دی جائے، ہم نے ملک میں میرٹ کے نظام

کولانا ہے، ڈاکٹروں کو اپنے رویوں میں بہتری لانے کی ضرورت ہے، ڈاکٹرز کے اچھے رویے

سے ہسپتالوں میں بہتری میں مدد ملے گی ۔پیر کو وزیر اعظم عمران خان نے پشاور لیڈی ریڈنگ

ہسپتال میں طبی عملے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہسپتال کے نئے بلاک کی تعمیر پر انتظامیہ

کو مبارکباد پیش کرتا ہوں اور سرکاری ہسپتال کا ایسا معیار دیکھ کر بہت خوشی ہوئی ہے جب کسی

ادارے میں سزا اور جزا کا نظام نہیں ہوتا وہ تباہ ہو جاتا ہے ۔ میرٹ پر ترقیاں ہونے سے ملک ترقی

کرتے ہیں ۔ ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ایک وقت تھا کہ پاکستانی یونیورسٹی کی ڈگری پوری دنیا میںمانی

جاتی تھیں ، آج ہسپتالوں کو بہتر بنانے کا کام کر رہے ہیں ۔ قبل ازیں وزیر اعظم پاکستان عمران خان

نے ضلع باجوڑ کے دورے کے موقع پر باجوڑ سکائوٹس ہیڈکوارٹر خار میں قبائلی عمائدین سے

خطاب کیا ۔تقریب میں وزیر اعلیٰ خیبر پختونخواہ محمود خان ،صوبائی وزیر زکواۃ وعشر انورزیب

خان ، رکن قومی اسمبلی گل ظفر خان ، رکن قومی اسمبلی گل داد خان ، ایم پی اے انجینئر اجمل خان ،

ایم پی اے سراج الدین خان اور باجوڑ کے قبائلی عمائدین بھی موجودتھے ۔ اس موقع پر صوبائی وزیر

زکواۃ انورزیب خان اور ایم این اے گل ظفر خان نے وزیر اعظم عمران خان کو روایتی قبائلی ٹوپی

(لونگی )پہنچائی۔ وزیر اعظم عمران خان نے دورے کے موقع پر مامدگٹ باجوڑ ٹو تیمرگرہ شاہراہ

کے تعمیر کا سنگ بنیادرکھا ۔ قبائلی عمائدین سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ قبائل کے

لوگ یہاں سہولیات کے نہ ہونے کی وجہ سے اکثر باہر ملک یا شہروں میں کام کرتے ہیں ۔اس وجہ

سے صوبہ خیبر پختونخواہ کیساتھ انضمام ہونا بہت ضروری تھا، تاکہ ان کو اپنے دہلیزوں پر روزگار

کے مواقع مل سکیں۔پہلے کسی کو قبائل اور یہاں کے علاقوں کا پتہ نہیں تھا، انضمام سے سارے ملک

کے ساتھ آپ کے رابطے قائم ہونگے۔ جس سے سیاحت کے علاوہ لوگ کارخانوں اور مختلف کاروبار

کے لئے یہاں اب باآسانی آئیں گے۔باجوڑ کے دورے کے موقع پر عمائدین سے خطاب کرتے ہوئے

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ تعلیم جو کہ ترقی کے لئے بہت لازمی ہے لیکن آپ ستر سال سے

دیکھ لیں یہاں سے لوگ تعلیم کیلئے دیگر شہروں کوجاتے تھے، اب یہاں تعلیمی ادارے بن جائیں گے

توآپ کے بچے یہاں تعلیم حاصل کریں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ طالبان اور افغان حکومت کے

مذاکرات کا دور چل رہا ہے جو بہت خوش آئند ہے اور ان مذاکرات سے سب سے بڑا فائدہ قبائل کو

ہوگا کیونکہ سنٹرل ایشیا سے آپ کی تجارت و راہداری کا راستہ کھول دیں گے۔وزیراعظم نے کہا کہ

یہاں کے سارے لوگوں کو ہم صحت کارڈ دیں گے، جس سے ساڑھے سات لاکھ روپے تک علاج

سال میں کہیں بھی کراسکتے ہیں۔ میں وزیر اعلیٰ محمودخان سے کہوں گا کہ یہ منصوبہ سارے

صوبہ میں ہونے چاہئے۔انہوں نے مزید کہا کہ دنیا میں تھوڑے سے ممالک ہیں جہاں پر ہیلتھ انشورنش

ملتاہے۔انہوں نے کہا کہ سابقہ حکومتوں نے ملک کو مقروض کرکے چھوڑ دیا تھا، جس کی وجہ سے

ہمیں مشکلات کا سامنا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ ہمارا مشن اسلامی جمہوریہ پاکستان سے مدینہ کے

ریاست جیسا ملک بنانا ہے جس میں سب سے بڑی چیز فلاحی ریاست ا ور تمام شہریوں کے بنیادی

ضروریات کوپورا کرنا ریاست کی ذمہ داری ہو۔افغانستان سے متصل بارڈر پر مارکٹیں بنیں گے جس

سے تجارت اور ترقی کے موقع میسر ہونگے۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ میں 28سال پہلے

قبائلی علاقوں میں آیا تھا تو لوگوں کا خیال تھا کہ میں زندہ بچ کر واپس جاؤں گا بھی کہ نہیں۔ لیکن

میں جب یہاں آیا تو مجھے پتہ چلا کہ یہ علاقے سیاحت کے لئے بے حد موزوں ہیں اب ان علاقوں

میںسڑکیں بنائیں گے جو تجارت وسیاحت کے لئے مفید ہونگے، یہ علاقے اب سیاحت کا مرکز ہونگے

مہمند میں عمائدین سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ سندھ سے منتخب

پارٹی نے کراچی کیلئے کچھ نہیں کیا، پنجاب میں ایک شہر کو اوپر اٹھایا گیا باقی پیچھے رہ گئے،

زیادہ سے زیادہ فنڈز قبائلی علاقوں پر خرچ کریں گے ان کا کہنا تھا ہر حکومت کا ایک نظریہ ہوتا

ہے، ہمارا نظریہ ریاست مدینہ ہے، کمزور طبقے کو اوپر لانا ریاست کی ذمہ داری ہوتی ہے، ،

صوبوں نے وعدہ کیا تھا قبائلی علاقے کو 3 فیصد این ایف سی ایوارڈ دیں گے، اب صوبے این ایف

سی ایوارڈ میں حصہ دینے کو تیار نہیں۔عمران خان کا کہنا تھا کورونا کی وجہ سے پیسہ کم اکٹھا ہوا،

بلوچستان اور قبائلی علاقوں کو فنڈز ملنے چاہئیں، فنانس منسٹری کو کہا ہے قبائلی علاقوں کو فنڈز

دیں۔

میرٹ کے بغیر

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply