ملکی حالات کے پیش نظر وطن واپسی کا فیصلہ کیا ہے،شہباز شریف

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

لندن/لاہور (جنرل رپورٹر)مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر محمد شہباز

شریف نے کہا ہے کہ انہوں نے ملکی حالات کے پیش نظر وطن واپسی کا فیصلہ کیا ہے، گرفتاریوں

سے ڈرنے والے نہیں ، میرا فرض ہے کہ مشکل کی اس گھڑی میں اپنی عوام کے ساتھ کھڑا رہوں ،

نواز شریف نے مجھے کہا ہے کہ میری فکر نہ کریں ، قوم کو آپ کی زیادہ ضرورت ہے ۔ہفتے کو

پاکستان روانگی سے قبل اپنے ویڈیو بیان میں صدر مسلم لیگ (ن) شہباز شریف نے کہا ہے کہ

پاکستان سمیت دنیا بھر میں کورونا وائرس نے تباہی پھیلا رکھی ہے ، اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ ہم سب

کو اس بیماری سے محفوظ رکھے ، میں وطن واپس آنا چاہتا تھا تاکہ اپنے پاکستانی بہن بھائیوں کے

ساتھ موجود رہوں میرا فرض ہے کہ مشکل کی اس گھڑی میں اپنی عوام کے ساتھ کھڑا رہوں ۔ شہباز

شریف نے وطن واپسی کیلئے ہیتھرو ائیر پورٹ روانگی سے قبل نواز شریف اور والدہ سے ملاقات

بھی کی۔ واضح رہے کہ پی آئی اے (یوکے) کی جانب سے شہباز شریف کی پاکستان کیلئے پرواز کی

تصدیق کر دی گئی ہے وہ فلائٹ نمبر786 سے پاکستان آئیں گے جبکہ عام طور پر لندن سے ہفتے کو

پی آئی اے کی پرواز نہیں ہوتی ۔ کرونا وائرس کے باعث ہفتہ کے روز بھی لندن سے پی آئی اے کی

خصوصی پرواز چلائی جا رہی ہے ۔قبل ازیں ایک بیان میںشہبازشریف نے حکومت سے مطالبہ کرتے

ہوئے کہا کہ کرونا وائرس سے انسانی زندگی کیلئے بڑھتے خطرات پر لاک ڈائون کیاجائے،عوام کو

خوراک کی فراہمی سمیت دیگر انتظامات کو فوری حتمی شکل دی جائے کیونکہ کرونا وائرس کے

خراب ہوتی صورتحال میں عوام کی زندگی مزید خطرے میں نہیں ڈالی جاسکتی۔انہوں نے کہا کہ

تاخیر کی صورت میں بھیانک انسانی المیہ ناقابل قبول ہوگااورتاخیر سے ہونے والے کسی بھی نقصان

کی ذمہ دار پی ٹی آئی حکومت ہوگی۔قائد حزب اختلاف نے کرونا وائرس اورملکی معیشت کی یکساں

بگڑتی صورتحال پر اظہار تشویش کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت تیر تکے چلانے کے بجائے

ہوشمندی، جرات اور فوری اقدامات کا رویہ اختیار کرے، ملک بھر میں ڈاکٹرز، طبی عملے کو

حفاظتی لباس، ماسک اور ضروری سامان کی فراہمی یقینی بنائی جائے، لاہور اور دیگر علاقوں میں

بدستور عوامی ہجوم کی اطلاعات خوفناک ہیں اور اگر متاثرہ مریضوں کی تعداد سینکڑوں میں چلی

گئی تو یہ مزید خطرے کی گھنٹی ہوگی۔انہوں نے کہا خیبرپختونخوا میں کرونا وائرس سے فوت

ہونے والے مریض سے ڈاکٹر کے متاثر ہونے کی اطلاعات کا حکومت سنجیدگی سے نوٹس لے

،بلوچستان میں علاج معالجے اور متاثرہ مریضوں کے علاج کیلئے الگ مقامات کی دستیابی پر

سنجیدگی سے فوری غور کیاجائے، ٹیسٹنگ کٹس کی عدم دستیابی کی اطلاعات کا نوٹس لے کر فوری

اقدامات کئے جائیں۔انہوں نے کہا کہ علامات بتارہی ہیں کہ کرونا کے بعد معاشی جمود مزید سنگین

ہورہا ہے، مزید ٹیکس لگانا حل نہیں ، اس سے رہی سہی معاشی سانس بھی بند ہوجائے گی، ٹیکسٹائل

آرڈر منسوخ ہونے سے مزید مسائل جنم لے رہے ہیں، جس سے نمٹنے کیلئے جامع حکمت عملی

درکار ہے، اقدامات کا وقت سوچ بچار اور بیان بازی میں ضائع کردیا تو بعد میں خدا نہ کرے سرپر

ہاتھ رکھ کر رونے سے کچھ نہیں ہوگا ۔ انہوں نے کہا قوم سے اپیل ہے کہ احتیاطی طبی ہدایات پر

عمل کرکے اپنی اور اپنے ارد گرد لوگوں کی زندگیاں بچانے میں مدد کریں، پارٹی رہنما، منتخب

نمائندے اور کارکنان عوام میں شعور و آگاہی پیدا کرنے میں اپنا موثر کردار ادا کریں۔

پنجاب کے وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار کی

حکومت کی طرف سے ہم شہباز شریف کو خوش آمدید کہتے ہیں۔مسلم لیگ (ن) کے صدر کی واپسی

پر پنجاب حکومت کا ردعمل دیتے ہوئے فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ امید ہے شہباز شریف وطن

واپسی پر پوائنٹ سکورنگ نہیں کریں گے۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا ہے کہ حکومت نے تمام

سیاسی جماعتوں کے ساتھ ملکر وائرس کے خلاف جنگ جیتنا ہے،شہباز شریف آئیں اور بطور

اپوزیشن لیڈر اپنا کردار ادا کریں۔

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply