0

مصنوعی ذہانت میں چین، امریکہ سرفہرست

Spread the love

نیویارک (جے ٹی این آن لائن خصوصی رپورٹ)

حالیہ برسوں میں مصنوعی ذہانت کے شعبے میں زبردست پیش رفت ہوئی ہے۔اس

عرصے میں ہونےوالی ترقی کےساتھ ساتھ مصنوعی ذہانت سے متعلق بڑی تعداد

میں ایجادات لوگوں کے سامنے آئے ہیں اور اس لحاظ سے چین اور امریکہ عالمی

سطح پر پیش پیش رہے ہیں۔ان خیالا ت کا اظہاراقوام متحدہ کے تحت علمی اثاثوں

کی عالمی تنظیم کی جاری کردہ ایک رپورٹ میں کیا گیا ہے، علمی اثاثوں کی

عالمی تنظیم کے سیکرٹری جنرل فرانسس گوری کا کہنا ہے امریکہ اور چین نے

یہ بھی پڑھیں: دنیا کے پہلے چینی ساختہ مسافر ڈرون کی کامیاب اڑان

واضح طور پر اس شعبے کی قیادت سنبھال لی ہے۔ایجادات کے جملہ حقوق کے

تحفظ کیلئے دی جانےوالی درخواستوں اور سائنسی ایجادات کے حوالے سے دیکھا

جائے تو چین اور امریکہ سر فہرست ہیں۔ چین سب سے زیادہ پیٹنٹ ایپلی کیشنز

حاصل کرنےوالا ملک بن چکا ہے، نئی مصنوعات اور نئی ٹیکنالوجیز تیزی سے

وجود میں آرہی ہیں، لوگوں کی روز مرہ زندگی میں بڑی تبدیلیاں آئیں گی، انسانیت

کو فائدے کےساتھ ساتھ کچھ چیلنجز کا سامنا بھی کرنا پڑے گا۔

Leave a Reply