149

مرنے والوں کی تعداد37ہوگئی،آرمی چیف اور وزیر اعظم آزاد کشمیر کا متاثرہ علاقوں کا دورہ

Spread the love

میر پور (مانیٹرنگ ڈیسک ،نیوز ایجنسیاں )میرپور میں بدھ کی صبح ساڑھے 9 بجے 3.2 شدت کے آفٹر شاکس محسوس کیے گئے ، اس سے لوگ خوفزدہ ہو کر گھروں سے باہر نکل آئے جبکہ زلزلے سے سڑکیں تباہ ہونے کے باعث کئی علاقوں سے زخمیوں کو اسپتالوں تک پہنچانے میں دشواری کا سامنا ہے۔۔ضلعی انتظامیہ میرپورکے مطابق آزاد کشمیرمیں زلزلہ سے جاں بحق افراد کی تعداد 38 ہوگئی اور452 افراد زخمی ہوئے۔ جاتلاں کا روڈ انفراسٹرکچرمکمل طورپرتباہ جب کہ منگلا جانے والی مرکزی شاہراہ اورمتعدد پل زمین بوس ہوگئے ہیں۔زلزلے سے متاثرہ علاقوں میں شہریوں کو مصائب کا سامنا ہے۔ لوگوں کے گھر اور کاروبار تباہ ہوگئے جبکہ کئی علاقوں میں اب تک بجلی بحال نہ کی جاسکی۔ کھمبے اور ٹرانسفارمرزمین پر گرے ہوئے ہیں جب کہ پینے کی پانی کی بھی شدید قلت ہوگئی۔زیرزمین پانی بھی گدلا اورناقابل استعمال ہوگیا ہے، بجلی کی عدم دستیابی کے باعث کچھ علاقوں میں لگائے گئے واٹر پلانٹس بھی نہیں چل سکے، کھانے پینے سے محروم لوگوں نے آفٹر شاکس کے خوف سے رات جاگ کر گزاری۔پاک فوج کے دستے متاثرہ علاقوں کے سروے کیلئے پہنچ گئے جب کہ پنجاب حکومت کی ہدایت پرریسکیو ٹیمیں بھی میرپورپہنچ گئیں ۔ ریسکیو 1122 کی 5 امدادی گاڑیاں اورجان بچانے والا دیگر سامان بھی ہمراہ ہے۔۔ ڈپٹی کمشنر میرپور آزاد کشمیر نے بتایا کہ ملبے سے تمام افراد کو نکال لیا گیا ہے جب کہ متاثرہ علاقوں میں ریلیف کا کام جاری ہے۔ڈپٹی کمشنر نے بتایا کہ جن کے گھر تباہ ہو گئے ہیں ان کو محفوظ مقامات پر منتقل کر رہے ہیں،معمولی زخمیوں کو علاج کے بعد فارغ کر دیا گیا جب کہ شدید زخمی علاج کے لیے مختلف اسپتالوں میں زیر علاج ہیں۔ میرپور کے علاقے جاتلاں سے موصول ہونے والی ویڈیوز اور تصاویر میں شدید تباہی کے مناظر کو دیکھا جا سکتا ہے۔ وہاں پر متعدد سڑکوں میں بڑے بڑے شگاف پڑ گئے ہیں اور متعدد گاڑیاں ان میں الٹ گئی ہیں۔ڈپٹی کمشنر میر پور آزاد کشمیر راجہ قیصر نے زلزلے کے نتیجے میں ایک خاتون کی بھی ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔ان کا کہنا ہے کہ بڑی تعداد میں لوگ زخمی بھی ہیں تاہم ان کی تعداد کے بارے میں حتمی طور پر کچھ نہیں کہا جاسکتا۔راجہ قیصر کا کہناتھا کہ پاک فوج ، این ڈی ایم اے، پی ڈی ایم اے اور دیگر ریسکیو اداروں نے اپنا کام شروع کردیا ہے اور نقصانات کے حوالے سے معلومات اکٹھی کی جارہی ہیں۔چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل افضل نے زلزلہ متاثرہ علاقے کا دورہ کیا۔ این ڈی ایم اے کے ترجمان کے مطابق 160 زخمیوں کی حالت نازک ہے، ڈی ایچ کیومیرپوراورافضل پورمیں گیارہ گیارہ لاشیں لائی گئیں، اسلام گڑھ اور منگلا میں ایک ایک شخص زلزلے سے جاں بحق ہواترجمان این ڈی ایم اے بریگیڈیئر مختار احمد کے مطابق زلزلے کے باعث میرپور آزاد کشمیر میں 32 اور بھمبر میں پانچ افراد جاں بحق ہوئے،زلزلے کے نتیجے میں پنجاب کے شہر جہلم میں ایک شخص جاںبحق ہوا،زلزلے کے باعث تین سو انیس گھروں کو جزوی جبکہ ایک ایک سو پینتیس گھر مکمل تباہ ہوئے،میرپور آزاد کشمیر میں مجموعی طور پر 6 سو 25 افراد زلزلے کے دوران تباہی سے زخمی ہوئے،جہلم میں زلزلے کے باعث سات افراد زخمی ہوئے ،8 زخمی افراد کو پمز اسپتال اسلام آباد منتقل کی گیا۔ ترجمان کے مطابق زلزلے سے بھمبر میں منڈا پل تھا ہو چکا ہے، میرپور اور بھمبرکے درمیان رابطہ پل بھی تباہ ہو چکا ہے، جاتلہ کی مرکزی شاہرہ بھی زلزلے کے باعث شدید متاثر ہوئی، میرپور اور کوٹلی آزاد کشمیر کے اضلاع کی بجلی بحال کر دی گئیدریں اثناپاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے آزاد کشمیر کے زلزلہ سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کیا اور جاتلاں کنال روڈ کی مرمت کے کام کا جائزہ لیا ۔ ڈی جی آئی ایس پی آر کے مطابق جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہاکہ زلزلہ متاثرین کا ہر ممکن خیال رکھا جائے ۔ انہوںنے کہاکہ سول انتظامیہ کی معاونت سے صورت حال معمول پر لانے کیلئے تمام تر وسائل استعمال کئے جائیں ۔وزیراعظم آزادکشمیرراجہ محمدفاروق حیدرخان زلزلہ متاثرہ علاقوںمیں امدادی اور بحالی کے کاموں کی خود نگرانی شروع کردی۔ وزیراعظم نے جاتلاں،موڑہ کیکری ،ساہنگ، پل منڈا، کھڑی شریف اوردیگرمتاثرہ علاقوں کادورہ کیااورزلزلہ سے متاثرہونے والی املاک کے نقصانات کاجائزہ لیا۔ وزیراعظم نے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرہسپتال میں زخمیوں کی عیادت کی ان کے ہمراہ وزیر ہائیڈرو پاورڈویلپمنٹ آرگنائزیشن چوہدری رخسار احمد، وزیرتعلیم کالجز کرنل (ر)وقاراحمدنور، وزیرزراعت واسماء چوہدری مسعود خالد، وزیرسماجی بہبودمصطفی بشیر،وزیرصحت نجیب نقی،وزیرشہری دفاع،ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی وریسکیو1122 احمدرضاقادری ، ڈویژنل وضلعی انتظامیہ اور ریسکیوافسران بھی موجو دتھے۔وزیراعظم نے ہسپتال انتظامیہ کوہدایت کی کہ زخمیوں کو ہرممکن سہولیات فراہم کی جائیں۔ انھوں نے زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعابھی کی۔ اس سے قبل انھوں نے ڈپٹی کمشنر میرپورقیصراورنگزیب خان سے زلزلہ کی تباہ کاریوں سے ہونے والے نقصانات پرتفصیلی بریفنگ لی۔ انھوں نے انتظامیہ کوحکم دیاکہ متاثرہ علاقوں میں امداد اوربحالی کے کاموں میں تیزی لائی جائے اور اس کے لیے ہرممکن وسائل بروئے کارلائے جائیں۔ انھوں نے تمام محکمہ جات کے افسران کوحکم دیاکہ زلزلہ متاثرین کی پریشانی جنگی بنیادوں پردورکی جائے۔ دوسری طرف زلزلے سے آزاد کشمیر میں ہونے والے نقصانات پر جاپان کی جانب سے امداد کی پیشکش کی گئی جس پر چیئرمین این ڈی ایم اے نے شکریہ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ فی الحال نقصانات کا جائزہ لیا جارہا ہے نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے )کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل سے جاپانی سفیر کا فون پر رابطہ ہوا۔ جاپانی سفیر نے گزشتہ روز زلزلے کے باعث ہونے والے نقصان پر افسوس کا اظہار کیا۔جاپانی سفیر نے زلزلہ متاثرین کے لیے امداد کی پیشکش کی جس پر چیئرمین این ڈی ایم اے نے جاپان کے سفیر کا شکریہ ادا کیا۔چیئرمین این ڈی ایم اے کا کہنا تھا کہ جاپان کے سفیر کو بتایا نقصانات کا جائزہ لیاجا رہا ہے، بیرونی امداد کی ضرورت پیش آئی تو آگاہ کیا جائ

Leave a Reply