لداخ میں ترویج اسلام کے سب سے پہلے مبلغ کا مقبرہ دریافت

لداخ میں ترویج اسلام کے سب سے پہلے مبلغ کا مقبرہ دریافت

Spread the love

لداخ (جے ٹی این آن لائن نیوز) لداخ میں ترویج اسلام

طویل ترین تلاش کے بعد بالآخر لداخ میں اسلام کے سب سے پہلے مبلغ آخون

محمد شریف کا مقبرہ بارسو بلاک کے علاقے سٹیانکنگ میں دریافت کر لیا گیا۔

مؤرخین کے مطابق آخون محمد شریف کو لداخ میں دفن کیا گیا تھا لیکن ان کے

مزار کا اصل مقام معلوم نہیں تھا۔

=–= مزید دلچسپ و عجیب خبریں =–= پڑھیں =–=

تفصیلات کے مطابق کے ایم سی کے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مؤرخ و مصنف

محمد صادق ہردسی گزشتہ پانچ سال سے مختلف دستاویزات و کتابوں کے ذریعے

ان کے مقبرے کا سراغ لگانے کیلئے کوشاں تھے، انکی تحقیق نے انہیں سٹیانکنگ

گاؤں پہنچایا جہاں انہوں نے مقامی باشندے ماسٹر حاجی غلام جو علاقے کی تاریخ

سے متعلق وسیع معلومات رکھتے ہیں سے ملاقات کی اور انہیں اپنے مقصد کے

بارے میں آگاہ کیا تو انہوں نے گاؤں کے ارد گرد لوگوں سے پوچھنا شروع کیا تو

انہیں 90 سالہ حاجیہ فاطمہ ملی، جنہوں نے انہیں قبر کے اصل مقام کے بارے میں

بتایا۔

=-،-= آزاد اور مقبوضہ جموں و کشمیر سے مزید خبریں ( =.= پڑھیں =.= )

ماسٹر غلام نے کہا کہ حاجیہ فاطمہ کو آخون شریف کی قبر کے بارے میں ان کے

دادا دادی نے بتایا تھا۔ اس موقع پر بلتی ایسوسی ایشن کے صدر محمد علی آشور

اور صادق ہردسی نے نوجوانوں کے لئے جنہوں نے مقبرے کی تعمیر و مرمت

میں حصہ لیا مقبرے کی اہمیت پر روشنی ڈالی اور لداخ کی تاریخ میں آخون محمد

شریف کی اہمیت کو اجاگر کیا-

=-،-= 19 ڈوگرہ فوج نے مسجد، شاہی محل اور آخون کا گھر نذر آتش کیا

صادق ہرسی نے انیسویں صدی کا ایک واقعہ بیان کیا اوربتایا جب ڈوگرہ فوج نے

لداخ پر حملہ کیا اور اس علاقے تک پہنچی تو اس نے مسجد شریف اور شاہی محل

کو آگ لگا دی۔ انہوں نے کہا اس دن ڈوگرہ فوج نے ایک اور عمارت کو بھی نذر

آتش کیا جو آخون شریف کا گھر تھا جس سے ان کی اہمیت کا اندازاہ لگایا جا سکتا

ہے۔ انہوں نے کہا کہ سٹیانکنگ لداخ کی تاریخ میں ایک اہم مقام رکھتا ہے کیونکہ

یہ لداخ میں اسلامی تبلیغ کا پہلا مرکز تھا۔

لداخ میں ترویج اسلام ، لداخ میں ترویج اسلام ، لداخ میں ترویج اسلام

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply