پاکستان کو افغان طالبان حکومت تسلیم کرنا چاہیے، فضل الرحمن

پاکستان کو افغان طالبان حکومت تسلیم کرنا چاہیے، فضل الرحمن

Spread the love

پشاور(بیورو چیف، عمران رشید خان ) فضل الرحمن

Journalist Imran Rasheed

جمعیت علماء اسلام (ف) کے مرکزی امیر مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ

طاقت کے زور پر دنیا پر قبضہ کرنے والوں کو 20 سال کے بعد بھی ناکامی کا

سامنا کرنا پڑا۔ امریکہ نے پندرہ ہزار کلو میٹر فاصلہ طے کر کے 53 ہزار سے

زائد مسلمانوں کو شہید کیا۔ امریکہ اور دیگر مغربی ممالک کو خواتین کے حقوق

کی فکر نہیں کرنی چاہیئے۔ اسلام نے خواتین کو جو حقوق دیئے ہیئں، دوسرے

مذاہب میں اس کی مثال نہیں تھی۔

=-،-= خیبر پختونخوا سے متعلق مزید خبریں (=-= پڑھیں =-=)

گزشتہ روز جمعیت علماء اسلام کی خاتون رکن صوبائی اسمبلی نعیمہ کشور کی

رہائش گاہ پر کارکنوں سے غیر رسمی گفتگو میں مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ

پاکستان کو طالبان کی حکومت فوری طور پر تسلیم کرنا چاہیے۔ طالبان خواتین

کے خلاف نہیں، خواتین کو پردے میں رہ کر تعلیم حاصل کرنا چاہیئے۔ افغانستان

کے شہریوں کو صحت اور تعلیم کی سہولت فراہم کرنے کے لئے طالبان حکومت

بھرپور کوششیں کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت ہر محاذ پر ناکام

ہو چکی ہے۔ مہنگائی نے عوام کا جینا دوبھر کر دیا ہے۔ کرونا وائرس کی وجہ

سے حکومت نے نظام تعلیم کو تباہ کر دیا ہے۔ طلبہ سے بھاری فیسیں لی جا رہی

ہے جبکہ سکولز بند ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی داخلی اور خارجی پالیسیاں

مکمل طور پر ناکام ہیں اور پاکستان کے دوست ممالک بھی پاکستان سے ناراض

ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملکی معیشت اس حد تک گر گئی ہے کہ اب حکومت

مختلف اداروں کو آئی ایم ایف کے ساتھ گروی رکھ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ

نیب اور دیگر احتساب اداروں کے نام پر اپوزیشن کو ناکام بنانے کی بھرپور

کوششیں کی جارہی ہیں۔ اپوزیشن کے آواز کو دبایا نہیں جا سکتا۔ حکومت جس

زور کے ساتھ اپوزیشن کے آواز کو دبائے گی اسی زور کے ساتھ وہ دوبارہ آئے

گی۔ انہوں نے کہا کہ بی آر ٹی اور مالم جبہ جیسے کیسز کو بند کر کے حکومت

کو فری ہینڈ دے دیا گیا ہے۔

فضل الرحمن ، فضل الرحمن ، فضل الرحمن

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply