عمائدین صوابی کا دشمنیاں، معاشرتی جرائم ختم کرنے کیلئے بڑا فیصلہ

عمائدین صوابی کا دشمنیاں، معاشرتی جرائم ختم کرنے کیلئے بڑا فیصلہ

Spread the love

پشاور(بیورو رپورٹ) عمائدین صوابی بڑا فیصلہ

Journalist Imran Rasheed

خیبرپختونخوا کے ضلع صوابی میں قتل وغارت، منشیات فروشی اور دیگر

معاشرتی جرائم کی روک تھام کیلئے تمام سیاسی اور مذہبی جماعتوں ضلعی و

پولیس انتظامیہ، اصلاحی جرگوں، وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے نمائندوں پر

مشتمل ” لویہ جر گہ ضلع صوابی” کے قیام کا اصولی فیصلہ کر لیا گیا، جس کی

جلد تشکیل کیلئے تجاویز اور سفارشات تیار کر کے باقاعدہ نوٹیفکیشن جاری کیا

جائیگا۔ اس فیصلے کا اعلان پولیس لائن شاہ منصور صوابی میں سپیکر قومی

اسمبلی اسد قیصر کی صدارت میں ایک بڑے لویہ جرگہ میں کیا گیا-

= یہ بھی پڑھیں= دشمن داری ہی مردانگی کی علامت کیوں—؟

صوبائی وزیر تعلیم شہرام خان ترکئی، معاون خصوصی عبدالکریم خان، ڈی سی

کیپٹن (ر) ثناء اللہ، ڈی پی او محمد شعیب خان، اے این پی کے محمد سلیم خان

ایڈووکیٹ، حاجی تمریز خان، جماعت اسلامی کے سعید زادہ یوسفزئی، مسلم لیگ

(ن) کے ربنواز خان، قومی وطن پارٹی کے مسعود جبار، پروفیسر اظہار الحق

سمیت دیگر نے لویہ جرگہ میں شرکت کی،

= ضرور پڑھیں= انصاف کی طلبگار شیباگُل بھی ظلم کا شکار

لویہ جرگہ سے اپنئ خطاب میں مقررین نے ضلع صوابی میں امن لانے کیلئے

سابقہ دشمنیوں کے خاتمے، جائیداد تنازغات میں قتل و غارت اور منشیات کی

روک تھام کے لئے جاری کوششوں کو سراہتے ہوئے مختلف تجاویز دیں۔ ڈی پی

او صوابی محمد شعیب نے کہا کہ ضلع میں سے بڑا مسئلہ جائیداد کے تنازغات

میں قتل و غارت کا ہے، ضلعی پولیس اس پر قابو پانے کے لئے ضلع بھر میں

جرگوں کا انعقاد کر رہی ہے، ڈی سی صوابی ثناء اللہ نے کہا کہ انتظامیہ صوابی

کو پر امن بنانے کیلئے ہر ممکن کوشش کر رہی ہے، صوبائی وزیر تعلیم شہرام

خان ترکئی نے کہا منشیات فروشوں سمیت دیگر سنگین جرائم میں ملوث لوگوں

کی رہائی کے لئے کسی قسم کی سفارش قابل قبول نہیں ہو گی۔ پولیس کی طرف

سے منشیات فروشوں، بیگناہ لوگوں کے قتل عام کی روک تھام کیلئے حکومتی

ہدایات کے مطابق اقدامات کرنے چاہئں، کیونکہ جرگوں سے یہ مسئلے حل نہیں

ہو رہے۔

=-،-= خیبر پختونخوا سے متعلق مزید خبریں (=-= پڑھیں =-=)

معاون خصوصی عبدالکریم خان نے کہا کہ معاشرتی برائیوں کے خاتمے میں

سب سے اہم اور بڑا کردار علماء کرام ہے، اسلئے علماء کیساتھ بھی ایک نشست

کا انعقاد کیا جائے، انہوں نے کہا کہ جرائم کے خاتمے کا آغاز اپنے گھروں سے

کیا جائے۔ بندوق اور پستول کی نمائش سے لوگ معمولی باتوں پر اشتعال میں آ

کر ایک دوسرے کو قتل کرتے ہیں، اس موقع پر محمد سلیم خان ایڈووکیٹ نے

کہا کہ خیبر پختونخوا میں ضلع صوابی کے پختونوں کی اپنی تاریخ اور حیثیت

ہے، صوبے میں صوابی واحد ضلع ہے جہاں لوگ جرگوں کے ذریعے اپنے

مسائل حل کر رہے ہیں۔ یہاں کے تمام لوگ ایک برابر ہیں، امیر و غریب کا فرق

نہیں، انہوں نے کہا کہ صوابی میں لویہ جرگہ کا قیام ناگزیر ہے، اور اس میں

بیدار، ایماندار اور سچ بولنے والے لوگوں کو شامل کیا جائے، جو حق و سچ اور

انصاف کی بنیاد پر لوگوں کے مسائل حل کر سکے۔ یہ تمام سیاسی اور مذہبی

جماعتوں کا مشترکہ مسئلہ ہے۔

= پڑھیں= ماضی کی روایتی جرگہ کمیٹیاں بامقابلہ ڈسپیوٹ ریزولیوشن کونسلز

محمد سلیم خان ایڈووکیٹ نے کہا کہ جرائم پیشہ لوگوں کو سپورٹ نہ کیا جائے

عدالتوں سے سزائیں نہ ہونے کی وجہ کمزور تفتیش ہے، لہٰذا محکمہ پولیس میں

شعبہ تفتیش میں اعلی تعلیم یافتہ اور قابل افسران شامل کئے جائیں، جو بنیادی

طور پر تفتیش کر کے ملزم کو عدالت سے سزا دلوا سکیں۔ انہوں نے کہا کہ آج

کل صوابی سمیت پورے پختونخوا میں جائیداد کے تنازغات پر قتل عام کی اصل

وجہ ماﺅں اور بہنوں کو ان کا حق اور جائز حصہ نہ دینا ہے، حالانکہ دین اسلام

میں خواتین کو وراثت میں پورا پورا حق دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئیس سمیت

دیگر منشیات کی فروخت اور استعمال میں کرک کے بعد صوابی دوسرے نمبر

پر ہے، اس پر پولیس اکیلے قابو نہیں پا سکتی۔ اس پر تب قابو پایا جا سکتا ہے،

جب منشیات فروخت کرنے والوں کو قانون کی گرفت میں لایا جائیگا۔

عمائدین صوابی بڑا فیصلہ ، عمائدین صوابی بڑا فیصلہ ، عمائدین صوابی بڑا فیصلہ

عمائدین صوابی بڑا فیصلہ ، عمائدین صوابی بڑا فیصلہ ، عمائدین صوابی بڑا فیصلہ

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply