طوفانی بارشیں، سیکڑوں گھر منہدم، کھڑی فصلیں تباہ ، ہلاکتیں 50 ہو گئیں ، 135زخمی

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

لاہور،کوئٹہ،پشاور،اسلام آباد(جے ٹی این آن لائن بیوروز،مانیٹرنگ ڈیسک) ملک

کے مختلف علاقوں میں دو روز سے جاری بارشوں اور طوفانی ہوائوں نے تباہی

مچا دی ہے۔ سیلابی صورتحال اور پھسلن کے سبب ٹریفک حادثات میں اب تک

50 افراد جاں بحق اور 135زخمی ہوگئے ہیں۔ نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی

(این ڈی ایم اے) نے حالیہ بارشوں میں ہونےوالے نقصانات کی رپورٹ جاری کر

دی جس کے مطابق ملک بھر میں 80 مکان تباہ ہوئے، پنجاب میں بارشوں سے

10 افراد جاں بحق، 56زخمی، بلوچستان میں 2 بچوں سمیت 22 افراد جاں بحق ،

پانچ زخمی اور 52 گھر تباہ ہوئے، سندھ میں 5 افراد جاں بحق اور 50 زخمی

ہوئے۔ خیبر پختونخوااور قبائلی اضلاع میں 13 افراد جاں بحق، تین زخمی ہوئے

اور25 مکان تباہ ہوئے۔ایران سے آنےوالے ہوائوں کے سسٹم کے باعث بلوچستان

کے طول وعرض میں جمعے سے جاری بارشوں کا سلسلہ تھم گیا مگر مختلف

علاقوں میں سیلابی کیفیت ہے جبکہ کئی علاقوں میں جانی و مالی نقصانات ہوئے

ہیں۔ مستو نگ میں بارش سے پھسلن کی وجہ سے ویگن اور ٹرک میں تصادم ہوا

جس کے نتیجے میں 11 افراد جاں بحق اور 9 زخمی ہوئے۔ تیز بارش کے بعد

کوئٹہ شہر میں سیوریج کا نظام بھی درہم برہم ہوگیا ۔ میرعلی خیل ڈی آئی خان

روڈ پر لینڈ سلائڈنگ کے باعث ژوب ڈی آئی خان شاہراہ بھی ٹریفک کی آمدو

رفت کےلئے بند ہوچکی ہے۔ پنجگور، ہرنائی ، ٹانک ، پشین اور کوہلو میں

ایمرجنسی نافذ کر دی گئی۔ ایری گیشن حکام کے مطابق بلوچستان میں موسلادھار

بارش کے باعث مانکئی ڈیم میں پانی کی سطح مقررہ حد سے تجاوز کرگئی ہے،

کسی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کےلئے ڈیم سے پانی کا اخراج سپل وے سے

شروع کردیا ہے۔ کوہ سلمان کے پہاڑی سلسلے میں بارش سے راجن پور کے

ندی نالوں میں طغیانی آگئی ہے۔ کاہا سلطان سے 71ہزار کیوسک کا سیلابی ریلا

گزررہا ہے ۔ بڑا سیلابی ریلا لنڈی سیدان، میراں پور، حاجی پور سے گزر رہا

ہے۔ سوموار سے حاجی پور کا راجن پور سے زمینی راستہ منقطع ہے۔ بارشوں

کے باعث گرمی کی شدت میں کمی تو آئی ہے لیکن گندم کی تیار فصلوں کو بھی

نقصان پہنچا ہے۔ محکمہ موسمیات کا کہنا ہے آج بدھ کے روز بھی پنجاب، خیبر

پختونخوا اور بالائی سندھ میں بارش اور ژالہ باری کے باعث فصلوں کو ناقابل

تلافی نقصان پہنچ سکتا ہے۔

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply