طبی سہولیات کی مخدوش صورتحال ریاست کی ناکامی ،جسٹس ثاقب نثار

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

راولپنڈی(مانیٹرنگ ڈیسک) چیف جسٹس ثاقب نثار کا کہناہے کہ طبی سہولتوں کی مخدوش صورتحال ریاست کی ناکامی ہے۔راولپنڈی میں ادارہ امراض قلب میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس نے کہاکہ ہسپتالوں میں مریضوں کو صحت کی بہتر سہولیات میسر نہیں، ہسپتالوں کی یہ حالت ہے کہ ایک ایک بستر پر 3،3 مریض پڑے ہیں، ہسپتالوں کے معیار کو بہتر کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک میں بہت کچھ ٹھیک کرنے کی ضرورت ہے، محنت کرکے مایوسی کی زندگی سے بچا جا سکتا ہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ تکلیف کی کوئی زندگی نہیں ہوتی، والدہ کی بیماری میری زندگی کا تکلیف دہ امر تھا، میں نے یہ دیکھا کہ پاکستان میں علاج وہی کرا سکتا ہے جو مالدار یا بااثر ہو۔ اس لئے صحت کے شعبہ میں کردار ادا کرنے کا فیصلہ کیا کہ ہر غریب کا آسان علاج ہوسکے، میں نے سپریم کورٹ کے ججوں سے بھی چندہ لے کر ہسپتالوں کو دیا۔جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ معاشرہ کے بیمار افراد کے علاج پر توجہ حکومت کی ذمہ داری ہے لیکن غریب کا اچھا علاج نہیں ہوتا حالانکہ یہ اس کا قانونی حق ہے، ہسپتالوں میں دیکھا کہ علاج کے بنیادی آلات ہی نہیں، وینٹی لیٹرز خراب تھے اور جو ٹھیک تھے وہ صرف سفارشیوں کیلئے تھے۔ مگر ہم اطائی زیادہ پیدا کر رہے ہیں،

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply