عالمی احتجاج، اپیلیں بے سود، صہیونی جارحیت جاری، مزید 65 فلسطینی شہید

عالمی احتجاج، اپیلیں بے سود، صہیونی جارحیت جاری، مزید 65 فلسطینی شہید

Spread the love

مقبوضہ بیت المقدس(جے ٹی این آن لائن نیوز ) صہیونی جارحیت جاری

اسرائیلی افواج نے اقوام متحدہ سمیت تمام عالمی رہنماؤں کی اپیلوں و درخواستوں

کو یکسر مسترد کرتے ہوئے مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں زمینی و فضائی حملوں

حملوں کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے جس کے نتیجے میں مزید 65 مسلمان جام

شہادت نوش کرگئے، شہداء میں سے 21 کا تعلق غرب اردن اور 33 کا غزہ کے

علاقے سے ہے جبکہ اب تک شہدا کی مجموعی تعداد 190 سے زائد ہو گئی ہے۔

عالمی میڈیا رپورٹس کے مطابق اسرائیلی افواج نے دریائے اردن کے مغربی

کنارے کے علاقے میں بھی اب جارحانہ اور پر تشدد کارروائیاں شروع کردی ہیں

جس کے باعث مزید 21 فلسطینی شہید ہوگئے، غزہ کی پٹی کے شمالی علاقے میں

بھی گولہ باری اور فضائی حملے جاری ہیں جن کے نتیجے میں مزید 33 فلسطینی

شہید ہوگئے۔ شہر میں اسرائیلی فضائی حملوں میں کئی عمارتیں ملبے کا ڈھیر بن

گئیں جنہیں کھود کر زخمیوں و لاشوں کو نکالا جارہا ہے۔ اس ضمن میں امدادی

کارکنان کا کہنا ہے اسرائیل افواج کی بمباری میں شہید ہونیوالوں کی تعداد میں

مزید اضافے کے خدشات موجود ہیں۔

=-= دنیا بھر سے مزید تازہ ترین خبریں ( =–= پڑھیں =–= )

فلسطین اتھارٹی کی وزارت صحت کے مطابق پیر سے جاری فضائی حملوں میں

اب تک صرف غزہ میں 190 افراد شہید اور سیکڑوں زخمی ہو چکے ہیں۔ شہدا

میں 55 کم سن بچے اور 33 خواتیں بھی شامل ہیں۔ ادھر مقبوضہ بیت المقدس میں

فلسطینی نوجوان نے شیخ الجراح جانیوالی سڑک پر قائم چیک پوسٹ سے گاڑی

ٹکرادی، جس کے نتیجے میں چیک پوسٹ میں موجود 7 اسرائیلی فوجی زخمی ہو

گئے۔

=-.-= اسرائیلی وزیراعظم کا جارحیت جاری رکھنے کا اعلان

عالمی سطح پر جاری احتجاج کے باوجود اسرائیلی وزیراعظم نے کہا ہے بمباری

اس وقت تک جاری رہے گی جب تک ضرورت ہے۔ ادھر مغربی کنارے میں بیت

اللحم سمیت کئی شہروں میں فلسطینیوں نے احتجاجی مظاہرے کئے، مظاہرین پر

اسرائیلی فورسز نے طاقت کا بے دریغ استعمال کیا۔ صیہونی فورسز نے نوجوانوں

پر فائرنگ کر دی جس سے متعدد افراد زخمی ہو گئے۔ اسرائیلی فوجیوں نے میڈیا

کے نمائندوں کو بھی دھکے دیئے۔ اسرائیلی جاریحیت کا سلسلہ ساتویں روز بھی

جاری ہے فضائی حملوں میں اسرائیلی فوج نے مغربی غزہ سٹی کے علاقے خان

یونس میں حماس کے سیاسی و عسکری ونگ کے سربراہ یحیٰ السنور کے گھر کو

نشانہ بنایا، مذکورہ رہنما کو سال 2011ء میں اسرئیل کی جیل سے رہائی ملی تھی۔

=-.-= حماس کا زمینی جنگ کا بھر پور جواب دینے کا انتباہ

دوسری جانب حماس کے راکٹ حملوں کے نتیجے میں اسرائیل میں 2 بچوں سمیت

10 افراد کی ہلاکت ہوئی۔ الجلا عمارت کی تباہی کے ردِ عمل میں حماس نے رات

بھر میں اسرائیل میں 120 راکٹ داغے جس میں اکثر کو اسرائیلی دفاعی نظام نے

راستے میں ہی تباہ کردیا جبکہ درجنوں غزہ میں ہی جا گرے۔ حماس کے ترجمان

صالح العروری نے کہا ہے فلسطین کی مزاحمتی تنظیمیں اسرائیل کی زمینی فوج

کا مقابلہ کرنے کے لئے بالکل تیار ہیں۔ اس سے پہلے بھی اسرائیل کی زمینی فوج

کا مقابلہ کیا اور آئندہ بھی کریں گے۔ قابض فوج کے لئے زمینی حملہ انتہائی

خطرناک ثابت ہو گا اور اسرائیلی فوج کو اس وقت تک واپس نہیں جانے دیا جائے

گا جب تک طاقت کا توازن تبدیل نہیں ہو جاتا۔ حماس کا زمینی حملہ کرنے کی

صلاحیت اس کے میزائل حملوں سے زیادہ بہتر اور فعال ہے۔

=-.-= امریکی صدر بائیڈن کا اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو سے رابطہ

وائٹ ہاؤس کے اعلامیہ کے مطابق امریکی صدر جوبائیڈن نے مغربی کنارے میں

پر تشدد واقعات پر تشویش کا اظہار کیا اور فلسطینیوں کو باعزت طور پر جینے

کیلئے اقدامات کی حمایت کا اظہار کیا اورکہا حالیہ صورتحال کے باعث بچوں

سمیت فلسطینیوں اور اسرائیلیوں کی جانیں گئیں۔ انہوں نے اسرائیلی وزیراعظم

سے گفتگو میں دو ریاستی حل کے عزم کا اعادہ کیا اور صحافیوں کے تحفظ سے

متعلق تحفظات کا اظہار بھی کیا۔ امریکی صدر اور اسرائیلی وزیراعظم نے

مقبوضہ بیت المقدس میں تمام مذاہب کے افراد کیلئے پرامن ماحول کی خواہش کا

اظہار کیا۔

=-.-= امریکی، یورپی کے بعد اماراتی فضائی کمپنیوں کی پروازیں منسوخ

عالمی میڈیا کے مطابق متحدہ عرب کی فضائی کمپنیوں اتحاد اور فلائی دبئی نے

تل ابیب جانے والی مسافر بردار اور مال بردار پروازوں کو منسوخ کردیا اس سے

قبل امریکی اور یورپی فضائی کمپنیوں نے بھی تل ابیب کے لیے اپنی پروازوں کو

منسوخ کردیا تھا۔ دونوں کمپنیوں کی چار پروازیں شیڈول تھیں،

=-.-= دنیا کے کئی ممالک میں اسرائیل مخالف مظاہرے

بیلجیم کے دارالحکومت برسلز میں عوام کا بڑا مظاہرہ ہوا۔ جس کے شرکاء نے

اسلامی ممالک سے اتحاد کی اپیل کی، مظاہرے میں بچوں اور خواتین نے بڑی

تعداد میں شرکت کی۔ مظاہرین نے اسرائیل کیخلاف شدید غم و غصہ کا اظہار کیا۔

غزہ میں اسرائیلی مظالم کیخلاف امریکہ، نیوزی لینڈ، آسٹریلیا، برطانیہ، سپین اور

جرمنی سمیت دیگر کئی ممالک میں مظاہرے کیے گئے، مظاہرین کا کہنا تھا کہ

کئی سالوں سے خاموش رہ لیے اب فلسطینیوں کے دفاع اور ان کے لیے بولنے کا

وقت آ گیا ہے۔ مظاہرین کے ہاتھوں میں موجود پلےکارڈز پر درج نعروں میں سے

ایک نعرہ یہ بھی تھا ” تم فلسطینیوں کو کبھی خاموش نہیں کر سکتے“۔ اس موقع

پرخطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا اسرائیل کی جانب سے مسجد اقصیٰ میں

نمازیوں اور فلسطینیوں پر حملہ ایک مجرمانہ عمل ہے، اسرائیل پر عالمی عدالت

میں مقدمہ چلایا جائے۔

صہیونی جارحیت جاری ، صہیونی جارحیت جاری

=-= قارئین کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply