269

صدر ٹرمپ کا اعلان ، مشرق وسطیٰ کیلئے امریکی پالیسی کا نیا رخ

Spread the love

(تحریر:…اظہر زمان)
صدر ڈونلڈٹرمپ نے گولان کی پہاڑیوں پر اسرائیل کی حاکمیت کو مکمل طور پر

تسلیم کرتے ہوئے مشرق وسطیٰ میں امریکی پالیسی کو نیا موڑ دیدیا، گزشتہ شام

ایک مختصر سے ٹوئیٹر پیغام میں انہوں نے امریکہ کی مشرق وسطیٰ کے بارے

میں جاری پالیسی کو پس پشت ڈالتے ہوئے اسرائیل کی دائیں بازو کی حکومت کو

مزید تقوبت فراہم کرد ی ، یاد رہے 9اپریل کو اسرائیل میں قومی ا نتخا با ت

ہورہے ہیں جس میں وزیر اعظم بیجمن نیتن یا ہو ٹرمپ کے اس اقدام کو اپنے حق

میں استعمال کریں گے جو بظاہر صدر ٹرمپ کا مقصد معلو م ہوتا ہے ،صدر ٹرمپ

نے اپنے پیغام میں لکھا کہ 52سال بعد اب وقت آگیا ہے کہ گولان کی پہاڑیوں پر

اسرائیل کی حاکمیت کو تسلیم کرلیا جائے جو اسرائیل کی ریاست اور علاقائی

سالمیت کیلئے انتہائی اہمیت کی حامل ہیں ، اسرائیل نے 1967ء کی چھ روزہ جنگ

میں شام کے اس علاقے پر قبضہ کرلیا تھا اور 1981ء میں اسے باقاعدہ اسرائیل

میں ضم کرلیا تھا ۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے واضح طور پر اپنی قراردادوں کے ذریعے

اسے شام کا علاقہ تسلیم کیا تھا جس کی امریکہ ہمیشہ تائید کرتا رہا ہے، وائٹ

ہائوس ذرائع سے معلوم ہوا صدرٹرمپ کے ٹوئیٹر پیغام کے تھوڑی دیر بعد

اسرائیلی وزیر اعظم نے انہیں فون کرکے اس فیصلے پر خوشی کا اظہار کیا،

صدر ٹرمپ کا یہ اعلان ایک ایسے وقت سامنے آیا جب امریکی وزیر خارجہ

مائیک پومپیو اسرائیلی وزیر اعظم کے ہمراہ بیت المقدس کا دورہ کررہے تھے،

اس دوران صدر یارک اوبامہ دور کے وزیر دفاع لیون پنیٹا نے سی این این کو ایک

انٹرویو میں بتایا کہ صدر ٹرمپ کے اس اقدام سے شدید تشویش پید ا ہوگئی ہے

جس کا مقصد اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یا ہو کو آئندہ انتخابات میں جتوانا

ہے۔

Leave a Reply