کورونا میں مبتلا وکیل
Spread the love

اسلام آباد (جے ٹی این آن لائن نیوز) صحافی کے گھرچھاپہ

اسلام آباد ہائیکورٹ نے صحافی محسن بیگ کے گھر ایف آئی اے کا چھاپہ

اختیارات سے تجاوز قرار دیدیا۔ چیف جسٹس اطہر من اﷲ نے کہاایف آئی اے پبلک

آفس ہولڈرز کیلئے مسلسل اختیارات کا غلط استعمال کر رہی ہے،جس پر تشویش

ہے ، ہتک عزت پرائیویٹ رائٹ ہے، پبلک رائٹ نہیں۔ کسی جمہوری ملک میں

کسی ایجنسی یا ریاست کا ایسا کردار قابل برداشت نہیں۔ دوسری جانب انسداد

دہشتگردی کی عدالت نے محسن بیگ کے جسمانی ریمانڈ میں مزید دو روز کی

توسیع کرتے ہوئے 23 فروری کو دوبار ہ پیش کرنے کا حکم دیدیا۔صحافی محسن

بیگ کے گھر ایف آئی اے کے چھاپے پر ایف آئی اے کے ڈائریکٹر سائبر کرائم

ونگ کو شوکاز نوٹس جاری کر دیا گیا،چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے اظہار

برہمی کرتے ہوئے کہا کیا اس ملک میں مارشل لا ء لگا ہوا ہے؟ کیوں نہ پیکا

ایکٹ کی سیکشن 21 ڈی کو ہی کالعدم کر دیا جائے۔ ایف آئی اے کو روگ ایجنسی

نہیں بننے دیں گے۔ ایف آئی اے نے شکایت ملنے پر کوئی نوٹس جاری کیوں نہیں

کیا؟ کیا انکوائری کے بغیر چھاپہ اسلئے مارا کہ شکایت وفاقی وزیر کی تھی؟چیف

جسٹس نے کہا ٹاک شو ٹیلی ویژن پر ہوا تو پھر پیکا ایکٹ کا اطلاق نہیں ہوتا۔

ڈائریکٹر ایف آئی اے نے کہا جب وہ ٹاک شو فیس بک ، ٹوئٹر اور سوشل میڈیا پر

وائرل ہوا تو شکایت پر کارروائی کی۔ چیف جسٹس نے کہا کہ کیا ملزم نے وہ کلپ

سوشل میڈیا پر وائرل کیا؟اس پروگرام میں کتنے لوگ تھے؟ کیا سب نے وہی بات

کی تو باقی تینوں کو گرفتار کیوں نہیں کیا گیا؟ڈائریکٹر سائبر کرائم ونگ نے مراد

سعید سے متعلق محسن بیگ کا جملہ پڑھ کر سنایا اور کہا اس جملے میں کتاب کا

حوالہ توہین آمیز ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کسی کی ساکھ اختیارات کے غلط

استعمال سے نہیں بچتی، یہ عدالت اختیار کے غلط استعمال کی اجازت نہیں دیگی۔

یہ عام شکایت ہوتی تب بھی گرفتاری نہیں بنتی تھی، یہ توپبلک آفس ہولڈر کی

شکایت ہے، یہ ایک دھمکی ہے کہ اظہار رائے کی کوئی آزادی نہیں، عدالت یہ

برداشت نہیں کریگی۔چیف جسٹس نے کہا صحافیوں کیلئے غیر محفوظ ممالک میں

پاکستان کا آٹھواں نمبر ہے، یہ اسی وجہ سے ہے کہ اختیارات کا غلط استعما ل کیا

جا رہا ہے۔ کیا آپ اس معاشرے کو پتھر کے زمانے میں لے جانا چاہتے ہیں؟ ملزم

نے چھاپے کے وقت جو کیا وہ الگ معاملہ ہے جو مجاز عدالت دیکھے گی۔سردار

لطیف کھوسہ ایڈووکیٹ نے کہا وفاقی وزیر کی شکایت پر یہ کارروائی ہوئی تو

وزیراعظم نے ایک میٹنگ بلائی۔ ایڈووکیٹ جنرل نے خود کہا جج کیخلاف

ریفرنس لا رہے ہیں۔چیف جسٹس نے کہا کسی جج کو دھمکایا نہیں جا سکتا،عدالت

نے محسن بیگ کی لطیف کھوسہ ایڈووکیٹ کے ذریعے دائر مقدمہ اخراج کی

درخواست خارج کر دی۔ چیف جسٹس نے کہا ڈائریکٹر ایف آئی اے سائبرکرائم

ونگ بیان حلفی جمع کرائیں کہ کیوں نہ ان کیخلاف اختیارات کے غلط استعمال پر

کارروائی کی جائے؟ اٹارنی جنرل بھی 24 فروری کو پیش ہو کر ایف آئی اے

ڈائریکٹر کادفاع کریں۔

صحافی کے گھرچھاپہ

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply

%d bloggers like this: