شہباز شریف کی پیشی کےلئے گارد فراہم نہ کرنے پر ایس پی ہیڈ کوارٹر زکو شوکازنوٹس

Spread the love

احتساب عدالت نے رمضان شوگر ملز کیس میں قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف و سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کو عدالت میں پیش کرنے کےلئے جیل حکام کو گارد فراہم نہ کرنے پر ایس پی ہیڈکوارٹر کو اظہار وجوہ کا نوٹس جاری کر دیا۔ احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن کی عدالت میں کیس کی سماعت ہوئی۔ نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا چنیوٹ میں واقع شریف خاندان کی ملکیت رمضان شوگر ملز کےلئے سرکاری خزانے سے نالہ اور پل بنانے اور اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے قومی خزانے کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچانے کا الزام عائد ہے جبکہ نیب کی طرف سے شہباز شریف کےخلاف اس کیس کے ریفرنس کی تیاری بھی جاری ہے۔ عدالت نے استفسار کیا شہباز شریف کہاں ہیں تو نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو آگاہ کیا شہباز شریف اسلام آباد میں ہونے کے باعث عدالت میں پیش نہیں ہوئے۔ عدالت نے ریمارکس دئیے اگر وہ اسلام آباد میں ہیں تو راہداری ریمانڈ میں توسیع کیوں نہیں کروائی گئی۔ عدالت نے شہباز شریف کو پیش نہ ہونے پر جیل سپرنٹنڈنٹ کو 2گھنٹوں کے اندر طلب کرتے ہوئے سماعت ملتوی کر دی۔ عدالتی وقفے کے بعد سنٹرل جیل کوٹ لکھپت کے سپرنٹنڈنٹ نے پیش ہو کر رپورٹ پیش کر دی اور بتایاشہباز شریف سب جیل میں قید ہیں جو راولپنڈی جیل کے ماتحت ہے، ان کی راہداری ریمانڈ میں توسیع کےلئے عدالت میں پیشی کےلئے پولیس اہلکار مانگے گئے مگر نہیں ملے۔اس حوالے سے ایس پی ہیڈکوارٹر کو اس حوالے سے خط لکھا مگر گارد فراہم نہیں کی گئی بلکہ گارد کی کمی کا جواب موصول ہوا، اسلئے شہباز شریف کو پیش نہیں کیا جا سکا۔ عدالت نے ریمارکس دئیے سرکاری حکام بتائیں شہباز شریف کی پیشی کےلئے کیوں رابطہ نہیں کیا، یہ کونسی سرکار ہے۔شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز نے کہا یہ اسلام آباد پولیس ہے ،جس پر عدالت نے کہا یہ ذمہ داری تو لاہور پولیس کی تھی کہ وہ شہباز شریف کو پیش کرتی، بعدازاں عدالت نے گارد فراہم نہ کرنے پر ایس پی ہیڈ کوارٹرز کو شوکاز نوٹس جاری کردیااوررمضان شوگر ملز کیس کی مزید سماعت 10جنوری تک ملتوی کر دی۔

Leave a Reply