Pakistan India kartarpur coridor jtnonline 148

سکھ یاتریوں کیلئے تحفہ، پاکستان ، بھارت میں کرتاپور راہداری معاہدہ طے

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) پاکستان اور بھارت کے درمیان کرتار پور راہداری کو

فعال کرنے سے متعلق معاہدے پر دستخط ہوگئے، دونوں ملکوں میں سکھ یا تر

یوں کی آمدورفت اور دیگر معاملات پر اتفاق ہوگیا۔ پاکستان کے فوکل پرسن ڈاکٹر

محمد فیصل نے معاہدے پر دستخط کئے۔ بعدازاںترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد

فیصل نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا اک شجر ایسا بھی محبت کا لگایا جائے

جس کا ہمسائے کے آنگن میں بھی سایہ جائے، آج کا دن اس شعر کی عکاسی کرتا

ہے، وزیراعظم عمران خان 9 نومبر کو کرتار پور راہداری کا افتتاح کریں گے،

معاہدے کے مطابق ہفتہ کے 7 دن صبح تا شام سکھ یاتری آسکیں گے، 20

ڈالرسروس چارجز وصول کیے جائیں گے۔ پاکستان کے تمام محکموں نے منصوبہ

قابل عمل ہونے میں کلیدی کردار ادا کیا، کرتار پورمیں دنیا کا سب سے بڑا گور

دوارہ تعمیر کیا گیا ہے، ویزہ فری انٹری ہوگی مگر پاسپورٹ کا ہونا ضروری ہے

جو سکین کر کے واپس کر دیا جائیگا، سکھ یاتریوں کا پاسپورٹ سٹیمپ بھی نہیں

کیا جائیگا۔دوسری طرف کرتار پور راہداری معاہدے کی تفصیلات کے مطابق

بھارت سے آنیوالے یاتری ویزہ فری سفر کرینگے ،دونوں ممالک جلد اپنی حدود

میں مطلوبہ انفراسٹرکچر مکمل کریں گے،کرتارپور راہداری صبح سے شام تک

ہفتے کے سات دن سال بھر کھلی رہے گی، راہداری بند کرنے کی صورت میں

بھارت کو نوٹیفکیشن کے ذریعے پہلے آگاہ کیا جائیگا۔ ذرائع کے مطابق پاکستان

اور بھارت کے درمیان کرتارپور راہد%Fر %7%D89%AB%8%811 4 %D5%8%حت 187نر D8 %8A %A
رD
%4%
D95%B8 ے %7%D8E%A8 %9%کAA9؅؈ 10 %D ز9 %8%ا8C8%D1و %8%ہAA8޳ %B8%A%D93تا ѩ %88%5 ي%
B1D
%D9%B%ی94AՌ %88%F%ثہ ג D85%B8 %8%اAAA%D3ا %1 %B %سD9B 48 ب %A%DB7%A8%A ڽ9ک %1%D81ظس %D8%8%اڪ
D9A
ک %D8%8%جA69%D ےA %9%ک9ت پاکستان یاتریوں کی سہولت کیلئے شناختی کارڈ جاری

کرے گی۔معاہدے کے مطابق ایک روز میں 5 ہزار یاتری کرتارپور صاحب آ

سکیں گے، یاتری اکیلے یا گروپ کی شکل میں یا پیدل بھی کرتارپور صاحب آ

سکیں گے، معاہدے کی خلاف ورزی کی صورت میں کرتارپور راہداری آپریشن

معطل ہو سکے گا، معاہدے میں مشترکہ رضا مندی سے ترمیم ہو سکے گی،

معاہدے پرعملدرآمد کیلئے جوائنٹ ورکنگ گروپ تشکیل دیا جائیگا۔ معاہدہ کے

مطابق ایک مہینے کے نوٹس پر کوئی بھی ملک معاہدہ منسوخ کر سکتا ہے،

معاہدے میں ممنوعہ اشیاء کی فہرست بھی شامل ہے ،فہر ست میں شامل ممنوعہ

اشیاء کرتارپور صاحب نہیں لائی جا سکیں گی۔ ذرائع نے بتایا خصوصی مواقع

پرسکھ یاتریوں کی تعداد5ہزارسے بڑھائی جاسکے گی،متعین کردہ تعداد میں

انفرادی یا گروپ کی شکل میں یاتری پیدل یا سواری کے ذریعے صبح سے شام

تک سال بھر ناروال کرتارپورآسکیں گے ،ترجیحی طورپرسکھ یاتریوں

کاگروپ15افرادپرمشتمل ہوتوزیادہ بہتر ہے،سرکاری تعطیلات اور کسی ہنگامی

صورتحال میں یہ سہولت میسر نہیں ہوگی،ایسی کسی بھی صورتحال کے بارے

میں پاکستان بھارت کو پیشگی آگاہ کرے گا ،سکھ یاتریوں کو موثر بھارتی

پاسپورٹ پر کرتارپور راہداری استعمال کرنے کی اجازت ہوگی ،بیرون ملک

رہائشی سکھ یاتریوں کو بھارتی اوریجن کارڈ پر اس سہولت کا فائدہ اٹھانے کی

اجازت ہوگی۔وعدے کے مطا بق وزیراعظم عمران خان کرتارپور صاحب راہداری

کا افتتاح 9 نومبر کو کریں گے،تقریب کا افتتاح بابا گرونانک کی 550 ویں یوم

پیدائش پر تقریبات سے پہلے ہوجائیگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں