سب جماعتوں کا مؤقف

سکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ نے حکمرانوں کا چہرہ بے نقاب کردیا، مریم نواز

Spread the love

سکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ

لاہور (جے ٹی این آن لائن نیوز) پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ

فارن فنڈنگ کے معاملے پر الیکشن کمیشن کی رپورٹ میں ہوش اڑانے والے انکشافات ہوئے ہیں،

رپورٹ نے عمران کے چہرے سے بچا کھچا نقاب بھی کھینچ دیا ہے۔وہ جھوٹ بولنے، غیرقانونی

فنڈنگ لینے کے جرم میں فوری استعفیٰ دیں۔پاکستان مسلم لیگ (ن) پنجاب کا تنظیمی اجلاس مرکزی

سیکرٹریٹ میں ہوا، اجلاس میں سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد محمد نوازشریف، لیگی

صدر شہبازشریف نے ویڈیو لنک کے ذریعے شرکت کی جبکہ اجلاس میں دیگر رہنما بھی شریک

ہوئے۔ اجلاس میں حال ہی میں فارن فنڈنگ کے حوالے سے سامنے آنے والی رپورٹ ، سیاسی

صورتحال سمیت دیگر اہم امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔اجلاس کے بعد دیگر رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا

سے گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر نے کہا کہ سٹیٹ بینک کے مطابق26 فارن

اکاؤنٹس تھے، 26اکاؤنٹس میں سے 18 اکاؤنٹس ایکٹو تھے، 18 میں سے پی ٹی آئی نے الیکشن

کمیشن کو چارڈ کلیئر کئے تھے۔ امریکا،مڈل ایسٹ، آٓسٹریلیا،کینیڈا،انگلینڈ سے فارن فنڈنگ ہوئی،

عمران کے چار ذاتی ملازمین کے ذریعے غیرقانونی طور پر پیسے منگوائے، ملازمین طاہراقبال،

محمد نواز افضل، محمد رفیق کے اکاؤنٹس میں پیسے آئے، عمران خان آج تک جھوٹ بولتے آرہے

ہیں۔ جو کچھ بھی ہوا عمران کی مرضی سے ہوا، عمران خان نے الیکشن کمیشن میں جھوٹ بولا اور

جان بوجھ کرحقائق کوچھپایا۔مریم نواز کا کہنا تھا کہ ڈونرز ممتازاحمد نے عمران خان کورشوت دی،

انہوں نے غیرقانونی طریقے سے پیسے لیے، ممتازاحمد نے 24 ہزار ڈالر دیا اسکو نتھیا گلی میں

لاکھوں ڈالر کا کنٹریکٹ دیا، ممتازاحمد کو نتھیا گلی میں فیور دینے کا حق آپ کو کس نے دیا؟ اتنی

بڑی چوریاں دیدہ دلیری سے کی گئیں، 74سالوں میں ایسی مثال نہیں، کالے کرتوت چھپانے کے لیے

مذہب کا لبادہ اوڑھا گیا، ہمیں حضرت علی کے قول، بار بار مدینہ کی ریاست کا سنایا جاتا تھا،

نوازشریف نے اپنی تین نسلوں کا ناکردہ جواب دیا، میں نے اپنا حساب دیا، آپ کوکونسے سرخاب کے

پرلگے ہیں جوجھوٹ بول کرنکل جاتے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ عمران خان نے اپنے اوردوستوں کے

گناہوں کوچھپایا، سب کا ذمہ عمران خان کوصادق اورامین کا سرٹفیکیٹ دینے والا ذمہ دارہے،

عمران خان جھوٹ بولنے، غیرقانونی فنڈنگ لینے کے جرم میں فوری استعفی دیں۔ صرف رپورٹ

ریلیز کرنے سے کام نہیں ہوگا، جس طرح باقی لوگوں کو جیل ہوئی اسی طرح ان کوبھی جیل میں ڈالنا

چاہیے، الیکشن کمیشن، عدلیہ کا بھی امتحان ہے، نوازشریف کیس میں توسب بڑے ایکٹوتھے اب

توالزام ثابت ہو چکے ہیں، دیکھنا ہوگا الیکشن کمیشن کیا ایکشن لیتاہے، اب بال قانون اورانصاف کے

اداروں کے کورٹ میں ہے۔ مس ڈکلیئریشن کے خلاف پی ٹی آئی کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے،

کس غیرملکی سے کتنا پیسہ آیا اورکہاں خرچ ہوا، تفصیلات سامنے آنی چاہئیں، نوازشریف کیس کی

طرح سپریم کورٹ کا مانیٹرجج ہونا چاہیے، عمران خان کے کیس کوروزانہ کی بنیاد پرسنا جائے،

ہمارے خلاف توالزام ثابت نہیں ہوئے ان کے خلاف توثابت ہوچکے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ الیکشن

کمیشن کی رپورٹ میں ہوش اڑانے والے انکشافات ہیں، الیکشن کمیشن نے عمران خان کے خلاف

رپورٹ جاری کی۔ رپورٹ نے عمران کے چہرے سے بچا کھچا نقاب کھینچ دیا ہے۔ الیکشن کمیشن

رپورٹ انکشافات سے قوم کا دماغ چکرا کررہ گیا ہے۔ کسی جماعت یا لیڈرکے خلاف ایسے شواہد

کبھی سامنے نہیں آئے۔وزیراعظم پر تنقید کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عمران خان نے ٹویٹ میں

کہا الیکشن کمیشن رپورٹ کوویل کیم کرتا ہوں، جواب دینے کے بجائے کہتے ہیں برانڈ عمران کو

اجاگر کیا، نالائقی، جھوٹ، سازش، لوٹ مار، معاشی تباہی، بے روزگاری، غیر ملکی فنڈنگ کے

مجرم یہ ہے آپ کا برانڈ، آپ کا برانڈ توکھل کرسامنے آچکا ہے، اب آپ کوفرارکا موقع نہیں ملے گا۔

کچھ وزرا نے کہا ہم سرخرو ہوئے کس پر بات پر سرخرو ہوئے؟۔انہوں نے کہا کہ اب ان کو پتا چل

گیا ہے حقائق سامنے آئیں گے، انہوں نے رپورٹ ریلیز نہ کرنے کے لیے پریشرائز اور دھمکایا گیا،

7سال سے تاخیری حربے استعمال کیے، اگرآپ نے چوری نہیں کی تھی تو تلاشی کیوں نہیں دیتے،

نوازشریف نے جرم کیے بغیر سینہ تان کرتلاشی دی، آپ کا بال بال جھوٹ،سازش میں نکلا۔ن لیگ کی

نائب صدر نے کہا کہ عمران خان آج تک نہیں بتاسکے کونسے ملک سے کتنا پیسہ آیا، عمران خان

غیر قانونی فنڈنگ اکٹھی اور دوسری طرف منتخب حکومت کو ہٹانے کے لیے کینٹنر پر سوار تھے،

عمران خان نے وہی پیسہ منتخب حکومت کے خلاف استعمال کیا، پاکستان کا قانون کہتا ہے کوئی بھی

جماعت فارن فنڈنگ نہیں لے سکتی، پاکستان کے قانون کے مطابق اگرفارن فنڈنگ لی جائے تواس

جماعت کوتحلیل کردیا جاتا ہے۔اپنی آڈیو ٹیپ سے متعلق بات کرتے ہوئے ان کا میرا پرائیویٹ فون

کیوں ٹیپ کیا گیا، پہلے مجھ سے معذرت کی جائے، پاکستان کے دوشہری آپس میں کیا گفتگو

کرتے ہیں اس کا مجھے جواب نہیں دینا، ایک نجی چینل کو میری گفتگو کیوں لیک ہوئی، پہلے اس کا

جواب دیا جائے۔ میں نے کسی کی کوئی ٹیپ ریکارڈ نہیں کی قدرت کا اپنا طریقہ ہے خود سامنے

آجاتی ہے، میری ذاتی گفتگوکا ان کی آڈیوسے موازانہ نہ کیا جائے، میری ذاتی گفتگوتھی۔ رانا ثناء اﷲ

نے کہا ہے کہ آٹا‘ ادویات‘ بجلی اور دیگر اشیاء کا بحران ہے، اس میں وہ لوگ ملوث ہیں جن کے

پچاس کروڑ کے چیک موجود ہیں جو ان کو فنڈنگ کے طور پر دیئے گئے، انہوں نے انسانیت کے نام

پر ان فنڈز کو اکٹھا کرکے لوگوں کو لوٹا ہے، پچھلے ساڑھے تین سال میں آٹا‘ ادویات اور بجلی‘ گیس

کی مد میں کئی گنا زیادہ اضافہ ہوچکا ہے،یہ بات ثابت ہوئی ہے کہ انہوں نے دشمنوں سے پیسہ لیا

ہے۔ موجودہ حکومت کی کرپشن اور غبن پوری دنیا کے سامنے عیاں ہوا ہے، اب عوام کا ہاتھ اور اس

کا گریبان ہوگا، جس نے نالائق ٹولے کو مسلط کیا اسے عوام سے معافی مانگنی چاہئے۔ رانا ثناء اﷲ

نے کہا کہ آٹا‘ ادویات‘ بجلی اور دیگر اشیاء کا بحران ہے۔ اس میں وہ لوگ ملوث ہیں جن کے پچاس

کروڑ کے چیک موجود ہیں جو ان کو فنڈنگ کے طور پر دیئے گئے۔ انہوں نے انسانیت کے نام پر ان

فنڈز کو اکٹھا کرکے لوگوں کو لوٹا ہے۔ ہمیں چور‘ چور اور ڈاکو ڈاکو کہنے والا خود چور ثابت ہوا۔

توشہ خانہ پر نواز شریف کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا توشہ خانے کی دس کروڑ مالیت کی گھڑی

فروخت کرتے ہوئے یہ پکڑے گئے۔ تمام اداروں کو اپنی حدود میں رہنا چاہئے۔ اگر ادارے غیر

جانبدار رہیں تو یہ اچھی بات ہے۔ انہوں نے کہا کسی کی ذاتی گفتگو کی ریکارڈنگ کرنا جرم ہے

ریکارڈنگ کی صلاحیت ایجنسی کے پاس ہوتی ہے۔ ٹیپ اس دن چلائی گئی جب اسکروٹنی کمیٹی کی

رپورٹ آئی۔ ہوسکتا ہے کہ حکومت نے آئی بی سے ریکارڈنگ کرائی ہو۔

سکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply