oh my God jtnonline

سرکاری مراعات کے 32 سال تک مزے لینے والا پولیس افسر جعلی نکلا

Spread the love

کراچی (جے ٹی این آن لائن او مائی گاڈ) سرکاری مراعات پولیس جعلی

صوبہ سندھ میں تعینات پولیس افسر ڈی ایس پی اعجاز ترین کو سینیارٹی کیس میں لینے

کے دینے پڑ گئے، 32 سال تک سرکاری مراعات کے مزے لینے والا پولیس افسر جعلی

نکلا۔ تفصیلات کے مطابق جعلی لیٹر پر بھرتی کا انکشاف بھی سنیارٹی کے لیے کی

گئی اپیل کی جانچ پڑتال کے دوران ہوا، جعلی آرڈر پر اے ایس آئی بھرتی ہونے کے

شواہد ملنے کے بعد عدالت کے حکم پر اعجاز ترین کو نوکری سے برخاست کر دیا گیا

جس کا آئی جی سندھ نے نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق پولیس افسر اعجاز ترین مبینہ جعلی لیٹر پر ترقی کرتے ہوئے ایس

پی کے عہدے تک پہنچا، اعجاز ترین نے 32 سال تک جعلی تقررنامے پر پولیس افسر

بن کر سرکاری مراعات لیں، جن کی بھرتی اسلام آباد پولیس سے ہوئی اور بعد میں انہیں

سندھ ٹرانسفر کردیا گیا، جس کے بعد بطور ایس پی صوبہ سندھ کے کئی شہروں میں

پوسٹنگ رہی، عدالتی احکامات کے بعد آؤٹ آف ٹرن ترقی واپس ہوئی تو اعجاز ترین

انسپکٹر بن گیا، بطور انسپکٹر کئی تھانوں میں ایس ایچ او بنا رہا، تاہم سنیارٹی کے لیے

کی گئی اپیل کی جانچ پڑتال کے دوران جعلی تقرر نامے کا بھانڈہ پھوٹ گیا۔

حال ہی میں شہر قائد میں سچل پولیس نے خفیہ اطلاعات پر کارروائی کرتے ہوئے خود

کو حساس ادارے کا اعلیٰ افسر ظاہر کرنیوالے ملزم کو بھی ساتھیوں سمیت گرفتار کیا

تھا، کارروائی ڈسٹرکٹ ایسٹ سچل پولیس کی خفیہ اطلاع پر کی گئی جس میں پولیس

نے خود کو حساس ادارے کا افسر ظاہر کرنیوالے ملزم کو 2 ساتھیوں سمیت گرفتار

کرلیا جبکہ ایک ملزم موقع سے فرار ہوگیا۔ پولیس کے مطابق ملزمان کیخلاف کافی

عرصے سے شکایات موصول ہورہی تھیں، جنہوں نے شہریوں سے دھوکا دہی سے

بھاری رقوم وصول کیں، ملزمان کے قبضے سے بڑی تعداد میں جعلی کارڈ اور مہریں

برآمد کیں۔

سرکاری مراعات پولیس جعلی

=—–= قارئین =-: خبر اچھی لگے تو شیئر کریں، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

=—–=ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )

Leave a Reply