0

سانحہ ساہیوال، تین نامزد ملزموں سمیت 16نامعلوم سی ٹی ڈی اہلکاروں کےخلاف 2 مقدمات درج

Spread the love

ساہیوال واقعہ کا مقدمہ کاو¿نٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) اہلکاروں کےخلاف درج کیے جانے کے بعد ورثا نے جی ٹی روڈ پر دیا جانےوالا دھرنا ختم کردیا۔ اتوار کو مقتول خلیل کے بھائی جلیل احمد کی مدعیت میں ساہیوال واقعے کا مقدمہ تھانہ یوسف والا میں درج کرلیا گیا جس میں سی ٹی ڈی کے 16 نامعلوم اہلکاروں کو نامزد کیا گیا ہے۔پولیس کے مطابق مقد مے میں قتل کی دفعہ 302 اور دہشت گردی کی دفعات بھی شامل کی گئی ہیں۔خلیل کے بھائی نے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہمیں انصاف چاہیے،جن لوگوںنے کہا تھاہم انصاف دلا ئیں گے آج وہ نظر نہیں آرہے ، جبکہ سی ٹی ڈی نے بھی ساہیوال میں مبینہ مقابلے کا مقدمہ تھانہ کاﺅنٹر ٹیرر ازم ڈیپارٹمنٹ لاہور میں بھی درج کر لیا گیا ۔سی ٹی ڈی کی مدعیت میں درج ہونےوالے مقدمے میں تین اہلکاروں کا نام بھی دیا گیا ہے جو آپریشن میں شریک ہوئے ، ان میں کارپورول محسن،رمضان اور حسنین اکبر شامل ہیں ۔مقدمہ 302/324،353اور دہشتگردی سمیت دیگر دفعات کے تحت درج کیا گیا ہے جس کے متن میں کہا گیا ہے اطلاع ملی تھی کالعدم تنظیم سے تعلق رکھنے والے اشتہاری مجرمان دہشت گرد شاہد جبار ، عبد الرحمن او ران کے دیگر ساتھی ایک موٹر سائیکل اور کار سوار فیملی کے کور میں ساہیوال کی طرف جارہے ہیں جس پر پیشگی ناکہ بندی کر لی گئی ۔موٹر سائیکل سواروں کے پاس ایک بڑ ا بیگ تھااو ران کے پیچھے ایک سفید رنگ کی آلٹو کار تھی۔ جب انہیں روکنے کی کوشش کی گئی تو موٹر سائیکل سواروں نے فائرنگ شروع کر دی اور سی ٹی ڈی اور حساس اداروں کے آفیشلز آپریشنل ٹیکنیکس کی وجہ سے محفوظ رہے اور دہشتگردوں کو گرفتار کرنے کےلئے دفاعی حکمت عملی اپنائی ۔ اس دوران کار میں سے بھی ایک شخص نے فائرنگ کرنا شروع کر دی ۔موٹر سائیکل سواروں کی فائرنگ سے کار سوار ان کے اپنے ساتھی زد میں آ گئے۔ جب کار کو چیک کیا گیا تو دو اافراد ،ایک عورت اورایک بچی دہشت گردوں کی فائرنگ سے ہلاک ہو چکے تھے جبکہ ایک بچہ اور بچی زخمی تھے جنہیںسرکاری ہسپتال پہنچایاگیا ،دریں اثناساہیوال میں مبینہ مقابلے میں حصہ لینے والے کاﺅنٹر ٹیرر ازم ڈیپارٹمنٹ کے اہلکاروں کو لاہور منتقل کر دیا گیا ۔ نجی ٹی وی کے مطابق جے آئی ٹی لاہور میں اہلکاروں کے بیانات قلمبند کرے گی ۔ عینی شاہدین سے معلومات لینے کے لئے بھی حکمت عملی مرتب کی جارہی ہے۔

Leave a Reply