راجہ بشارت کی دھمکیاں،اصل حقیقت سامنے آگئی

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے وزیرقانون پنجاب راجہ بشارت اور ایم

ایس کے درمیان ہونیوا لی ٹیلیفونک گفتگو کا نوٹس لیتے ہوئے وی سی راولپنڈی

میڈیکل یونیورسٹی کو رپورٹ تیار کرنے کی ہدایت کر دی جبکہ راجہ بشارت کی

آڈیو ریکا ر ڈنگ کے معاملے کی حقیقت سامنے آگئی ،وزیر قانون نے میڈیکل

سپرنٹنڈنٹ بینظیر بھٹو شہید ہسپتال سے نیب میں گرفتار حنیف عباسی کی

صاحبزادی ڈاکٹر اریبہ سے مبینہ انتقام اورناروا سلوک کی شکایت پر رابطہ کیا

تھا، حنیف عباسی کی صاحبزادی نے ایم ایس کے رویے کیخلاف استعفیٰ دے کر

سیکرٹری صحت کو تحریری آگاہ کر دیا، تفصیلات کے مطابق پیر کے روز وزیر

صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے وزیر قانون پنجا ب اور ایم ایس کے درمیان

ہونیوالی ٹیلیفونک گفتگو کی وی سی راولپنڈی میڈیکل یونیورسٹی پروفیسر عمر کو

رپورٹ تیار کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا انتظامی امور میں عدم مداخلت

حکومتی پالیسی ہے، محکمہ صحت کا سٹاف مداخلت پر مجھے رپورٹ کرے۔ادھر

ڈاکٹر اریبہ کی جانب سے تحریر ی استعفے میں کہا گیاہے کہ ایم ایس ڈاکٹر طارق

نیازی نے عہدہ سنبھالتے ہی حنیف عباسی کی بیٹی ہونے پر تنگ کرنا شروع کردیا

تھا ۔ ذرائع کا کہنا ہے وزیر قانون راجہ بشارت نے جب اس معاملے کا نوٹس لیا

توایم ایس طارق نیازی نے موقف اپنایا کہ اس کے باپ نے میرے ساتھ بہت برا

سلوک کیا ہوا ہے ۔ڈاکٹر اریبہ کا سکن ڈیپارٹمنٹ سے ایمر جنسی میں تبادلہ بھی کر

دیا گیا جس پر وزیر قانون راجہ بشارت نے کہا ہم سیاسی انتقامی کاروائی نہیں

کرتے ،تم بچوں کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنائو گے تو تم بھی نہیں رہو گے ۔بعدازاں

ایم ایس نے وزیر قانون کی ریکارڈنگ کو ایڈیٹ کر کے وائرل کردیا ۔ ڈاکٹر اریبہ

کے مطابق سیکرٹری صحت کوبھجوائے گئے اپنے استعفے میں کہا میں ایسے

گھٹن زرہ ماحول میں کام جاری نہیں رکھ سکتی جہاں دوسروں کو سیاسی انتقام کا

نشانہ بنایا جاتا ہو

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply