109

دہشت گردی الزامات ثابت،خادم رضوی کے بھائی، بھتیجے سمیت 86افراد کو4738سال قید

راولپنڈی(کورٹ رپورٹر ) انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت نے دہشتگردی کا

الزام ثابت ہونے پر علامہ خادم رضوی کے بھائی اور بھتیجے سمیت تحریک لبیک

پاکستان کے 86کارکنوں کو مجموعی طور پر 4738سال قید کی سزا سنادی۔

راولپنڈی کی انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج شوکت کمال ڈار نے فیصلہ

سنایا جس پر پولیس نے تمام مجرموں کو حراست میں لے لیا اور تین بسوں میں ڈال

کر پولیس اور ایلیٹ فو رس کے کڑے پہرے میں اٹک جیل لے گئے۔عدالت نے

ملزمان پر ایک کروڑ 30لاکھ روپے سے زائد جرمانہ اور ان کی تمام منقولہ و غیر

منقولہ جائیداد ضبط کرنے کا بھی حکم دیا ۔پنڈی گھیب پولیس نے 24 نومبر 2018

کو تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم رضوی کی گرفتاری کے بعد

ہنگامہ آرائی، توڑ پھوڑ، پولیس ملازمین کو زخمی، سرکاری ونجی املاک کو

نقصان پہنچانے اور دہشتگردی سمیت مختلف الزاما ت کے تحت خادم رضوی کے

بھائی امیر حسین اور ان کے بیٹے محمد علی سمیت 87افراد کو گرفتار کیا تھا۔

بعدازاں مجرموں کی ضمانت ہوئی تو ایک ملزم اعزاز الحق بیرون ملک فرار ہوگیا

تھا جس پر عدالت نے مفرور ملزم کے ضمانتی سے ایک لاکھ روپے جرمانہ

وصول کر کے ملزم کو اشتہا ر ی قرار دے کر دائمی وارنٹ گرفتاری جاری کر

دیئے تھے۔عدالت نے 13 ماہ زیرسماعت رہنے والے مقدمے میں جرم ثابت ہونے

پر مختلف الزامات میں ملوث ہر مجرم کو مجموعی طور پر 55،55 سال قید سخت

اور 2 لاکھ 35 ہزار روپے جرمانہ و عدم ادائیگی جرمانہ 32 ماہ مزید قید دینے کا

حکم دے کر مجرموں کی تمام منقولہ وغیرمنقولہ جائیداد بھی بحق سرکار ضبط

کرنیکا حکم دیا۔عدالت نے امیر حسین رضوی، ان کے صاحبزادے محمد علی اور

دیگر 2 مجرموں قاری مشتاق اور گلزار احمد کو اسلحہ برآمد ہونے کے جرم میں

علیحدہ سے 2،2 سال قید اور پچاس پچاس ہزار روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔

جرمانہ ادا نہ کرنے پر مجرموں کو مجموعی طور پر 146 سال سے زائد مزید

سزا کاٹنا ہوگی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں