خیبرپختونخوا بلدیاتی الیکشن پہلا مرحلہ، 17 اضلاع میں میدان سج گیا

Spread the love

پشاور(بیورو چیف، عمران رشید خان) خیبرپختونخوا بلدیاتی الیکشن

Journalist Imran Rasheed

خیبر پختونخوا میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں صوبہ کے 17 اضلاع

صوبائی دارالحکومت پشاور، چارسدہ، نوشہرہ، مردان، خیبر، مہمند، صوابی،

کوہاٹ، کرک، ہنگو، بنوں، لکی مروت، ڈیرہ اسماعیل خان، ٹانک، ہری پور، بونیر

اور باجوڑ میں آج پولنگ ہو رہی پے، جو بغیر کسی وقفہ کے شام 5 بجے تک

جاری رہے گی، جس میں مذکورہ اضلاع کے عوام میئر سٹی کونسل، چیئرمین

تحصیل کونسل، ویلیج کونسل اور نیبرہڈ کونسل کے چیئرمین اور ارکان کا
چناﺅ

کریں گے۔ ان 17 اضلاع سے حصہ لینے والے امیدواروں کی تعداد 37 ہزار 752

ہے، جن میں تحصیل چیئرمین اور میئر کی نشستوں کیلئے 689، ویلیج اور نیبرہڈ

کونسلز میں جنرل نشستوں کیلئے 19 ہزار 282 امیدوار، ویلیج اور نیبرہڈ کونسلز

میں خواتین نشستوں کیلئے 3 ہزار 870 امیدوار، کسان و مزدور نشستوں پر 7 ہزار

428 امیدوار، نوجوانوں کی نشستوں کیلئے 6 ہزار 11 امیدوار جبکہ اقلیتی نشستوں

پر 293 امیدوار میدان میں ہیں۔

=-،-= بلدیاتی الیکشن پہلا مرحلہ، 2032 کونسلر بلامقابلہ منتخب

صوبے میں ہونیوالے بلدیاتی الیکشن کے پہلے مرحلے میں مجموعی طو رپر

دو ہزار32 کونسلرز بلامقابلہ منتخب ہو چکے ہیں، ان میں 42 فیصد کونسلرز کا

انتخاب مردان، صوابی اور پشاورسے ہوا ہے، پشاور سے سب سے زیادہ 428،

مردان 229، صوابی 201 اور ہری پور سے 174 کونسلرز شامل ہیں اور ان کا

تعلق مختلف کٹیگری سے ہے، الیکشن کمیشن آف پاکستان کے ذرائع سے حاصل

شدہ ڈیٹا کے مطابق نوشہرہ سے 133، چارسدہ سے 112، خیبر 135، مہمند 21،

کوہاٹ 108، ہنگو 72، بنوں 48، لکی مروت 30، ڈی آئی خان 118، ٹانک 80،

بونیر 77، باجوڑ 52 اور کرک میں سب سے کم 14 کونسلرز بلامقابلہ منتخب

ہوئے۔ اعداد و شمارکے مطابق 217 جنرل کونسلرز بلامقابلہ منتخب ہوئے ہیں،

جن میں سب سے زیادہ تعداد 876 خواتین کی ہے، دیگر 285 کسان اور 154

اقلیتی کونسلرز شامل ہیں۔

=-،-= 2516 پولنگ سٹیشن نارمل،4200 حساس،2507 انتہائی حساس قرار

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق ہر ویلج و نیبرہڈ کونسل سے 7 کونسلرز کا

انتخاب ہو گا، جن میں تین جنرل، ایک ایک یوتھ، اقلیتی، خاتون اور مزدور کسان

کونسلر شامل ہوگا، صوبے کی 2 ہزار 382 ویلج و نیبرہڈ کونسل کے علاوہ 66

تحصیل کونسلز پر 977 امیدوار میدان میں ہیں، بلدیاتی انتخابات کے سکیورٹی

انتظامات سے متعلق سنٹرل پولیس آفس پشاور میں انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبر

پختونخوا معظم جاہ انصاری کی زیر صدارت منعقدہ جائزہ اجلاس میں ڈی آئی جی

آپریشنز نے الیکشن کی سیکورٹی، پولنگ سٹیشنوں کی نوعیت، دستیاب افرادی

قوت اور درپیش چیلنجز کے حوالے سے جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے تفصیلی

بریفنگ میں بتایا بلدیاتی انتخابات کیلئے 9223 پولنگ سٹیشنز قائم کئے گئے ہیں۔

جن میں 2516 سٹیشن نارمل، 4200 حساس اور 2507 انتہائی حساس قرار دیئے

گئے ہیں۔ جہاں حساسیت کے مطابق عملہ تعینات کیا گیا ہے، جبکہ سیکورٹی کے

لیے مجموعی طور پر 79479 اہلکار متعین ہیں۔

=-،-= خیبر پختونخوا سے مزید خبریں (=-= پڑھیں =-=)

آئی جی پی معظم جاہ انصاری نے اجلاس کے شرکاء کو دوران الیکشن اسلحہ،

ہتھیاروں کی نمائش، نفرت انگیز، قابل اعتراض مواد کی اشاعت، وال چاکنگ اور

ہنگامہ خیز تقاریر پر مکمل پابندی کو ہر قیمت پر یقینی بنانے کی ہدایت کی، انٹیلی

جنس اکٹھا کرنے کا عمل تیز، قانون نافذ کرنیوالے دیگر ایجنسیوں کیساتھ قریبی

رابطہ رکھ کر امن و امان کو درپیش خطرات، سکیورٹی تھرٹ اور اُمیدواروں کے

مابین کشیدگی پر گہری نظر رکھنے، کسی بھی ناخوشگوار واقعہ رونما ہونے کے

سدباب کو بروقت یقینی بنانے کی ہدایات جاری کیں، الیکشن ڈیوٹی پر مامور دیگر

سرکاری اہلکاروں کے شناختی کارڈ اور موبائل نمبر پولیس کو فراہم ہوں، قانون

ہاتھ میں لینے والوں کیساتھ سختی سے نمٹا جائے۔ ہر چیکنگ کی رپورٹ آگے

بھیجوانے، ایس ایچ اوز اور ایس ڈی پی اوز کی گاڑیوں میں ریکارڈنگ کیمرے

نصب کرانے کی بھی ہدایت کی گئی۔

=-،-= پرامن پولنگ کیلئے سخت ترین ضابطہ اخلاق جاری

سکیورٹی ڈیوٹی پر مامور اہلکاروں کو کنٹرول روم کے فون نمبر فراہم کرنے اور

دن رات آپریشنل رکھنے کی بھی ہدایت کی گئی، ساتھ ساتھ اس چیز کو یقینی بنانے

کی بھی ہدایت کی گئی ہے کہ کوئی پولیس آفیسر، جوان ایسے پولنگ سٹیشنوں پر

تعینات نہ ہوں جہاں ان کا کسی سیاسی پارٹی یا اُمیدوار کیساتھ قریبی رابطہ، تعلقات

یا رشتہ داری ہو۔ پولیس حکام کو بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے الیکشن کمیشن

آف پاکستان کی جانب سے جاری کردہ ضابطہ اخلاق پر مکمل عملدرآمد کو یقینی

بنانے کی بھی ہدایت کی گئی۔ آئی جی پی نے واضح کیا بلدیاتی انتخابات 2021ء کا

پُر امن انعقاد پولیس کیلئے ایک بڑا چیلنج ہے۔ وہ اپنے پیشہ ورانہ فرائض انتہائی

دیانتداری کیساتھ انجام دیں، تاکہ سکیورٹی کیساتھ ساتھ پولیس کی جانبداری پر بھی

کسی کو معمولی شک و شبہ نہ ہو، اور بلدیاتی الیکشن کے حوالے سے اُٹھائے

گئے سکیورٹی اقدامات دوسروں کیلئے قابل تقلید بن سکیں۔

=-،-= میڈیا کوریج کیلئے بھی کوڈ آف کنڈکٹ دیدیا گیا

الیکشن کمیشن کے خیبرپختونخوا میں بلدیاتی الیکشن کے حوالے سے میڈیا کے

لیے جاری کردہ ضابطہِ اخلاق کے مطابق میڈیا کے نمائندوں کو جاری شدہ کارڈ

کے بغیر پولنگ سٹیشن کے اندر جانے کی اجازت نہیں ہو گی، کیمرا کے استعمال

کے حوالے سے نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے صحافیوں کو صرف ایک دفعہ پولنگ

کے عمل اور گنتی کے عمل کی فوٹیج بنانے کی اجازت ہو گی، ووٹ کی رازداری

کو قائم رکھنے کیلئے ووٹنگ سکرین کی کوریج کی اجازت نہیں ہو گی، پولنگ کا

عمل ختم ہونے کے بعد ایک گھنٹہ تک نتائج نشر نہ کرنے کے پابند ہوں گے۔

خیبرپختونخوا بلدیاتی الیکشن

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں
= نوٹ ==> ہماری نئی ویب سائٹ ” جتن پی کے اردو ” بھی ضرور وزٹ کریں

Leave a Reply

%d bloggers like this: