خدا را ، صحت پر سیاست نہ کی جائے، مرتضیٰ وہاب

Spread the love

خدا را صحت پر سیاست

کراچی(جے ٹی این آن لائن نیوز) سندھ حکومت نے ڈبل سواری پرپابندی ختم کرنے کا اعلان کر دیا،

ریسٹورینٹس، بیکری اور دودھ کی دکانوں پر سے بھی پابندی ہٹائی جارہی ہے۔ کوئی دکان، ہوٹل،

شادی ہال یا ادارہ ایس او پی کی خلاف ورزی کرنے والے کو 30 روز کے لیے سیل کردیا جائے گا۔

لاک ڈاؤن کے فیصلے سے این سی او سی کو مکمل آگاہی تھی، مشاورت کے ساتھ ترمیمی نوٹیفکیشن

جاری کیا، وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے متنازعہ بیان دیا، خدارا انتشار پیدا نہ کریں،، یہ

صحت کا معاملہ ہے ،اس پر سیاست نہ کی جائے۔سندھ حکومت کے ترجمان مرتضیٰ وہاب نے میڈیا

سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کراچی میں 26 جون سے 31 جولائی تک کیسز میں 5 گنا اضافہ ہوا،

وفاق کے ساتھ چلنے کی کوشش کرتے ہیں، صوبے میں کورونا کی صورتحال پر سندھ ٹاسک فورس

نے کچھ اہم فیصلے کیے، وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر

فیصل سلطان اور وفاقی وزیر اسد عمر سے خود بات کی، وفاق نے کہیں پر نہیں کہا کہ آپ لاک ڈاؤن

نہ لگائیں۔ان کا کہنا تھا کہ یہ معاملہ معیشت کا نہیں، صحت کا ہے، سیاسی جنگ انسانیت کے میدان

میں نہیں ہونی چاہیے، ہمیں متحد ہوکر سوچنا ہے کورونا سے عوام کو کیسے بچاناہے، لوگوں میں

انتشار پھیلانے کے بجائے قائل کرنے کی کوشش کرنی چاہیے، پنجاب میں لاک ڈاؤن لگانے پر

پیپلزپارٹی کے کسی رہنما نے بیان بازی نہیں کی، جس طرح ہم کراچی میں بیٹھ کر پنجاب کی صورت

حال کو نہیں سمجھتے اسی طرح اسلام آباد میں بیٹھنے والے کراچی کے زمینی حقائق کو نہیں سمجھ

سکتے۔مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ سندھ حکومت نے ڈبل سواری پر پابندی ختم کر دی ہے،

ریسٹورینٹس، بیکری اور دودھ کی دکانوں پر سے بھی پابندی ہٹائی جارہی ہے۔ قانون کی خلاف ورزی

کرنے پر کارروائی کی جائے گی، کوئی دکان، ہوٹل، شادی ہال یا ادارہ ایس او پی کی خلاف ورزی

کرنے والے کو 30 روز کے لیے سیل کردیا جائے گا۔ترجمان سندھ حکومت کا کہنا تھا کہ فیصلہ ہوا

تھا ویکسین نہ لگوانے والوں کی سم بند کردی جائے گی، 2 سے 3 روز میں ویکسی نیشن کی تعداد

میں خاطر خواہ اضافہ ہوا، 24 گھنٹے میں سندھ حکومت نے ایک لاکھ 85 ہزار 46 لوگوں ویکسین

لگوائی، لوگوں کوویکسی نیشن سینٹرز لانے کے لئے ٹرانسپورٹ چلانے کی اجازت ہوگی، ہم چاہتے

ہیں کہ اگلے 9 روز لوگ صرف ویکسین لگوانے کے لیے ہی نکلیں۔دوسری طرف کورونا وائرس

سے مزید 65 افراد جاں بحق ہوگئے، جس کے بعد اموات کی تعداد 23 ہزار 360 ہوگئی۔ پاکستان میں

کورونا کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 10 لاکھ 29 ہزار 811 ہوگئی۔نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر

کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 4 ہزار 950 نئے کیسز رپورٹ

ہوئے، پنجاب میں 3 لاکھ 56 ہزار 211، سندھ میں 3 لاکھ 80 ہزار 93، خیبر پختونخوا میں ایک لاکھ

43 ہزار 673، بلوچستان میں 30 ہزار 289، گلگت بلتستان میں 8 ہزار 96، اسلام آباد میں 87 ہزار

304 جبکہ آزاد کشمیر میں 24 ہزار 145 کیسز رپورٹ ہوئے۔ملک بھر میں اب تک ایک کروڑ 59

لاکھ 95 ہزار 153 افراد کے ٹیسٹ کئے گئے، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 58 ہزار 579 نئے ٹیسٹ

کئے گئے، اب تک 9 لاکھ 40 ہزار 164 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں جبکہ 3 ہزار 187 مریضوں

کی حالت تشویشناک ہے۔ لاہور میں کورونا وائرس کے بڑھتے کیسز پر شہر کے 13 علاقوں میں

مائیکرو سمارٹ لاک ڈاؤن لگانے کی تجویز دے دی گئی۔ضلعی انتظامیہ کی طرف سے شہر کے 13

ہاٹ سپاٹ علاقوں میں محکمہ ہیلتھ کو فوری مائیکرو سمارٹ لاک ڈاؤن لگانے کی تجویز دی گئی ہے۔

علامہ اقبال ٹاون میں ای ایم ای سوسائٹی اور ایل بلاک جوہر ٹاون، عزیز بھٹی ٹاون کے سی بلاک

گرین سٹی میں لاک ڈاون کی تجویز دی گئی۔کینٹ میں 6 تا 9 بی شامی روڈ، شالامار کے علاقوں

انگوری باغ سکیم، یو ای ٹی بیگم پورہ، مجاہدہ آباد پر سمارٹ لاک ڈاون لگانے کی تجویز دی گئی۔ داتا

گنج بخش ٹاون کے علاقوں میں ملک پارک، موہنی روڈ بلال گنج، سنت نگر، ریواز گارڈن، ساندہ، شاہ

جمال، اسلام پورہ میں سمارٹ لاک ڈاون لگانے کی تجویز سامنے آئی۔سمن اباد کے علاقوں میں مسلم

ٹاون، پی این ٹی کالونی، عمر بلاک، وحدت کالونی، گلشن راوی، شیخ زید رہائشی کالونی اور مسلم

ٹاون 100 تا 146 بی بلاک میں لاک ڈاون لگانے کی تجویز دی گئی۔ گلبرگ ٹاون میں 140 تا 180 ایچ

بلاک ماڈل، شالامار ٹاون میں 174 امان پارک کالج روڈ پر لاک ڈاون لگانے کی تجویز دی گئی۔

مائیکرو سمارٹ لاک ڈاؤن پالیسی کے تحت لگانے کے احکامات محکمہ صحت جاری کرے گا۔ ضلعی

انتظامیہ نے ڈسٹرکٹ ہیلتھ اور پولیس کو الرٹ رہنے کے لیے مراسلہ ارسال کر دیا۔حکومت پاکستان

نے کورونا کیسز میں اضافے کے پیش نظر 18سال سے کم عمرافراد کی کورونا ویکسینیشن شروع

کرنے پر غور،حتمی فیصلہ آئندہ ہفتے ہوگا ، ذرائع کا کہنا ہے کہ 18 سال سیکم عمرافراد کی کورونا

ویکسینیشن شروع کرنے پر غور کیا جارہا ہے ، اس حوالے سے مشاورت جاری ہے ، ویکسی نیشن

سے متعلق حتمی فیصلہ آئندہ ہفتے ہوگا،پہلے مرحلے میں 15سے18سال کے افراد کی ویکسی نیشن

اور دوسرے مرحلے میں 12سے 15سال کے بچوں کی ویکسی نیشن پر غور ہورہا ہے،ذرائع کے

مطابق نادراسے18سال سے کم عمرافرادکی ویکسی نیشن پرمشاورت ہوگی، آزادکشمیر،جی بی

سمیت24بڑے شہراولین ترجیح ہیں، شہریوں کی حوصلہ افزائی سے ویکسی نیشن مہم کے حوصلہ

افزا نتائج سامنے آئے ہیں۔صوبائی دارالحکومت میں کورونا سے اموات کا سلسلہ تیز ہونے لگا، ایک

ہی روز میں8 مریض دم توڑ گئے،جبکہ 24 گھنٹوں کے دوران 330نئے کیس رپورٹ ہوئے جبکہ

مثبت کیسز کی شرح چھ اعشاریہ آٹھ فیصد ریکارڈ کی گئی ہے۔ سیکرٹری صحت پرائمری اینڈ

سیکنڈری ہیلتھ کیئر سارہ اسلم کے مطابق 24 گھنٹوں کے دوران پنجاب بھر میں مزید 27 مریض جاں

بحق ہو گئے، اموات کی مجموعی تعداد 11 ہزار39 ہو گئی، جبکہ صوبہ بھر سے 728نئے کیس

سامنے آئے ہیں،جس کے بعد کورونا کیسز کی مجموعی تعداد 35لاکھ سے تجاوز کرچکی ہے۔اس

حوالے سے طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ تمام شہری خاص طور پر کورونا کی مکمل احتیاط ملحوظ

خاطر رکھیں۔ صرف اور صرف ویکسی نیشن ہی کورونا وائرس کے خلاف واحد اور موثر علاج ہے۔

عوام سے گزارش ہے کہ کورونا کے خلاف خصوصی حفاظتی تدابیر اختیار کرکے خود کو محفوظ

بنائیں۔

خدا را صحت پر سیاست

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply