جو کہتے ہیں آئندہ الیکشن خر یدنا نہیں پڑیگا پہلے بتائیں انتخابات 2018 کس سے خر یدا؟نوازشر یف

Spread the love

قائدمسلم لیگ ن سابق وزیر اعظم نوازشر یف نے کہا ہے جو کہتے ہیں آئندہ الیکشن خر یدنا نہیں پڑ یگا وہ بتائیں2018کا الیکشن کس سے خر یدا ‘ ؟موجودہ حکمران مکمل طور پر ناکام ہو چکے ہیں،اپوزیشن جماعتوں میں فاصلے کم ہونا خوش آئند ہے ،انہیں علیمہ خان کے معاملے سے حکومت کی تمام کوتاہیوں کیخلاف آواز بلند کر نی چاہیے،شہبا زشر یف نے قومی اسمبلی میں عمر ان خان کی ’’کلاس ‘‘ لے کر اچھا کیا،مجھے اپنی جان سے زیادہ پاکستان کی فکر ہے، پی آئی سی ڈاکٹرز نے پہلے ہی آگاہ کر دیا آپ کو یہاں نہیں رکھیں گے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز کوٹ لکھپت جیل میں ملاقات کیلئے آنیوالے خاندان کے افراد ،رشتہ داروں ، د و ست احبا ب ،پارٹی رہنمائوں اور کارکنوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ، انکا مزید کہنا تھا ملتان موٹروے مکمل ہو چکی ہے مگرا س کے باوجود حکومت اس کو کھولنے کیلئے تیار نہیں ،میرا دامن صاف ، حوصلے بلند ہیں تمام حالات کا ڈٹ کرمقابلہ کر یں گے اور عوام کی عدالت میں سر خروہو رہا ہوں ۔ سانحہ ساہیوال میں جو کچھ ہوا اس پر دل خون کے آنسو روتا ہے اور میں متاثرہ خاندان کے غم میں برابر کا شر یک ہوں اور انکے انصاف کیلئے بھی پارٹی آواز بلند کرے ،ملاقات کرنیوالوں میں ان کی والدہ بیگم شمیم اختر ،بیٹی مریم نواز ، نواسی مہر النساء ،بھائی عباس شریف مرحوم کے صا حبزادوں،شہباز شریف کے خاندان کے افراد ،قریبی رشتہ داروں ،دوست احباب، پارٹی ر ہنما ئوںپرویز رشید ،انجینئر خرم دستگیر،طلال چوہدری ، مفتاح اسماعیل ،عظمی بخاری ،وائس چیئرمینز ایکشن کمیٹی کے صدر جہانزیب اعوان ، میاں جاوید لطیف ،طارق فضل چوہدری سمیت دیگر شامل تھے ۔ ذرائع کے مطابق نواز شریف نے اپنی والدہ کے پائوں چھوئے جبکہ والدہ نے اپنے بیٹے کو ماتھے پر بوسہ دے کر دعائیں دیں۔ملاقات کرنیوالے تمام افراد نے نواز شریف کی صحت کے حوالے سے تشویش کا اظہارکیااورانہیں صحتیابی و درازی عمر کی دعائیں دیتے رہے ۔اہل خانہ نے حسب معمول دوپہر کا کھانا نواز شریف کے ہمراہ کھایا ۔ نواز شریف نے مریم نواز اور پارٹی رہنمائوں سے ہونیوالی ملاقاتوں میں ملک کی مجموعی صورتحال پر بھی گفتگو کی ۔قبل ازیں مرد و خواتین کارکنوں کی ایک بڑی تعداد بھی نواز شریف اور شر یف خاندان سے اظہار یکجہتی کیلئے صبح سویرے کوٹ لکھپت جیل پہنچ گئے جو خاندان کے افراد کی روانگی تک جیل کے باہر موجود رہے ۔ مریم نواز کی آمد پر کارکنوںنے پھولوں کی پتیاں نچھاور کیں اور ان کے حق میں نعرے لگائے ۔ جیل سکیورٹی نے ملاقاتیوں کی لسٹ میں نام موجود نہ ہونے کی وجہ سے کئی افراد کو آگے جانے سے روکدیا جس کی وجہ سے تلخ کلامی بھی دیکھنے میں آئی ۔گزشتہ روز بھی مائی وڈیری کی جانب سے نواز شریف کی صحتیابی کیلئے دو بکروں کا صدقہ دیا گیا۔

Leave a Reply