عالمی موسمیات کے 142 سالہ ریکارڈ میں جولائی 2021ء گرم ترین مہینہ قرار

عالمی موسمیات کے 142 سالہ ریکارڈ میں جولائی 2021ء گرم ترین مہینہ قرار

Spread the love

نیویارک (جے ٹی این آن لائن خبر آئی ہے) جولائی 2021ء گرم ترین

عالمی ماہرین موسمیات نے کہا ہے کہ گزشتہ ماہ گرمی نے زمین کو ہلا کر رکھ

دیا اور جولائی کا مہینہ 142 سالہ ریکارڈ میں گرم ترین مہینہ رہا۔ میڈیا رپورٹ

کے مطابق شدید گرمی کی لہر اور ہیٹ ویوز نے امریکہ اور یورپ کے کئی

حصوں کو لپیٹ میں لیے رکھا، عالمی سطح پر اوسط درجہ حرارت 16.73 ڈگری

سینٹی گریڈ رہا۔ امریکہ کی قومی سمندری اور ماحولیاتی انتظامیہ (این او اے اے)

نے کہا شدید گرمی کا ریکارڈ جولائی 2016ء میں بنا تھا جو 2019ء اور 2020ء

میں برابر ہوا تھا تاہم رواں سال جولائی میں یہ ریکارڈ صرف 0.01 ڈگری کے

مارجن سے ٹوٹ گیا۔ این او اے اے کی ماہر ماحولیات آہرہ سانشیز لوگو نے کہا

سال 2015ء کے جولائی سے رواں سال کے جولائی تک سات جولائی کے ماہ

گرم ترین رہے، گزشتہ مہینہ 20 ویں صدی کے مقابلے 0.93 ڈگری سینٹی گریڈ

زیادہ گرم تھا۔

=-= خبر آئی ہے کے عنوان سے مزید پڑھیں ( =-= سٹوریز =-= )

این او اے اے کے منتظم رِک اسپنراڈ نے اپنے بیان میں کہا اس معاملے میں پہلا

مقام سب سے زیادہ پریشان کن مقام ہے اور نیا ریکارڈ دنیا کیلئے موسمیاتی تبدیلی

کے راستے میں مزید پریشانیوں اور رکاوٹوں کا باعث ہے، پنسلوینیا یونیورسٹی

کے سائنسدان برائے ماحولیات مائیکل مان کا کہنا تھا کہ یہ موسمیاتی تبدیلی ہے،

یہ بے مثال گرمی، خشک سالی، جنگلات میں آتشزدگی اور سیلاب موسم گرما میں

تعجب کا نشان ہیں۔ رواں ہفتے کے آغاز میں امریکہ کے ایک معروف سائنسی پینل

نے بدتر موسمیاتی تبدیلی کے بارے میں خبردار کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ کوئلے،

تیل اور قدرتی گیس جلنے اور دیگر انسانی سرگرمیوں کا نتیجہ ہے۔ آہرہ سانشیز

لوگو نے کہا کہ شمالی امریکہ کے مغربی حصے، یورپ اور ایشیا میں ریکارڈ

گرمی پڑی جبکہ دنیا کے دیگر حصوں میں درجہ حرارت ریکارڈ سے کچھ ہی

زیادہ رہا۔ انہوں نے کہا کہ جس چیز نے شدید نقصان پہنچایا وہ نصف کرہ شمالی

کی زمین کا درجہ حرارت ہے۔

=-.-= او مائی گاڈ عنوان کے تحت مزید معلوماتی نیوز ( == پڑھیں == )

آہرہ سانشیز لوگو نے کہا کہ نصف کرہ شمالی کا درجہ حرارت جولائی 2012ء

کے مقابلے ایک ڈگری سینٹی گریڈ کا پانچواں حصہ زیادہ تھا جو درجہ حرارت

کے ریکارڈز کے لیے بڑا مارجن ہے۔ دنیا کے لئے جولائی گرم ترین مہینہ ہوتا

ہے، اس لیے یہ تاریخ کا گرم ترین مہینہ رہا۔ ماہر ماحولیات کے مطابق دنیا کو

جلانے والے اس موسم گرما میں جس عمل نے مدد کی وہ قدرتی موسمیاتی سائیکل

ہے جو آرکٹک اوسکیلیشن کہلاتا ہے اور جو بے حد گرمی سے متعلق اپنے مثبت

مرحلے میں ہے۔ گزشتہ روز جاری کی گئی ماحولیاتی ادارے کی رپورٹ میں کہا

گیا کہ زمین اور سمندر کی سطح کا مشترکہ درجہ حرارت 20 ویں صدی کی اوسط

سے 1.67 فیرن ہائٹ زیادہ تھا۔ رپورٹ کے مطابق مشترکہ درجہ حرارت پچھلے

ریکارڈ سے 0.02 فیرن ہائٹ زیادہ تھا جو 2016ء میں ریکارڈ کیا گیا تھا۔ شمالی

امریکہ، جنوبی امریکہ، افریقہ اور اوشیانا سب کا جولائی کا درجہ حرارت اپنی

اپنی ٹاپ 10 فہرستوں میں تھا۔

=-= ذرا میری بھی سنو عنوان کے تحت پڑھیں مزید ( =-= سٹوریز =-= )

رپورٹ میں کہنا تھا کہ یہ نیا ریکارڈ پریشان کن ہے اور دنیا میں موسمیاتی

تبدیلیوں کی خطرے کی گھنٹی ہے۔ جولائی کے ریکارڈ درجہ حرارت کے بارے

میں عالمی ادارے کا تجزیہ اقوام متحدہ کی جانب سے موسمیاتی تبدیلی سے متعلق

رپورٹ کی روشنی میں سامنے آیا جس میں کہا گیا ہے کہ گلوبل وارمنگ پہلے ہی

شدید موسم کا باعث بن رہی ہے اور دنیا 2040ء تک 2.7F درجہ حرارت میں

اضافہ دیکھے گی۔ اقوام متحدہ کے بین الحکومتی پینل آن کلائمیٹ چینج میں کہا گیا

کہ گرمی کی لہریں، سیلاب اور خشک سالی شدید سے شدید ہو جائیں گی، ماہرین

کا کہنا تھا کہ کوئلے، تیل اور گیس کو توانائی کے لیے جلا کر انسان پہلے ہی

سیارے کو تقریبا 2 ڈگری فارن ہائیٹ سے گرم کر چکا ہے۔

جولائی 2021ء گرم ترین ، جولائی 2021ء گرم ترین ، جولائی 2021ء گرم ترین

=-= قارئین= کاوش پسند آئے تو اپ ڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply