punjab assembly

تحفظ بنیاد اسلام بل سازش، دھوکے سے پاس کرایا گیا، پنجاب اسمبلی میں حکومتی و اپوزیشن ارکان کا احتجاج

Spread peace & love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

لاہور(جے ٹی این آن لائن نمائندہ خصوصی) تحفظ بنیاد اسلام بل

پنجاب اسمبلی میں وزراء سمیت حکومتی اور اپوزیشن ارکان تحفظ بنیاد اسلام بل

کے نام پر ملک میں فرقہ واریت کی خوفناک سازش کیخلاف سراپا احتجاج بن

گئے-

بل کس کی سازش، کون فرقہ واریت بھڑکانا چاہتا ہے، حسین گردیزی
——————————————————————–

ایم این اے سید حسین جہانیاں گردیزی نے بل پر شدید اعتراضات اٹھاتے ہوئے

اسے مسترد اور بل کو فیڈرل شریعت کورٹ کی منظوری سے ترامیم لانے کا

مطالبہ کردیا،

اتفاق رائے تک بل پر کوئی پیش رفت نہیں ہوگی، وزیر قانون بشارت راجہ
———————————————————————

صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے ایوان کو یقین دہانی کرائی کہ جب تک بل

پر مکمل اتفاق رائے نہیں ہوگا اس پر مزید پیش رفت نہیں ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں : پنجاب اسمبلی کے پی ٹی آئی ارکان کا اپنی ہی حکومت کو جھٹکا

پنجاب اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی سپیکر سردار دوست محمد مزاری کی صدارت میں

شروع ہوا تو متعدد ارکان اسمبلی کھڑے ہوگئے اور نکتہ اعتراض پر بات کرنے

کی اجازت چاہی، حکومتی اور اپوزیشن کے کچھ اراکین نے تحفظ بنیاد اسلام بل

پر اعتراضات اٹھاتے ہوئے اسے واپس لینے کا مطالبہ کردیا، جبکہ حکومتی

ارکان نے تحفظ بنیاد اسلام بل کو حکومت اور ملک میں امن وامان کی فضاء کے

خلاف شازش قرار دے دیا۔

بل شہزاد اکبر کی ایماء پر منظور کرایا گیا، پیر اشرف رسول کا انکشاف
———————————————————————

پیر اشرف رسول نے انکشاف کیا کہ یہ بل شہزاد اکبر کے کہنے پر اسمبلی

سے منظور کرایا گیا، جبکہ تحفظ بنیاد اسلام بل کی حمایت کرنے پر تحریک
انصاف کے رکن سید یاور عباس بخاری نے ایوان سے معافی مانگ لی۔

ہمیں مکمل اندھیرے میں رکھا گیا، حمایت پر معافی مانگتا ہوں، یاور عباس
———————————————————————

ارکان اسمبلی نے کہا کہ بل کی منظوری کے وقت ہمیں اندھیرے میں رکھا گیا، اس بل سے پاکستان میں فرقہ واریت کی آگ بھڑک اٹھے گی، اسمبلی کسی شخص کو یہ نہیں کہہ سکتی کہ اس کا فرقہ کیا ہو گا۔ بل کو واپس اسمبلی میں لایا جائے اس بل کو کسی صورت قبول نہیں کریں گے۔ اسمبلی ارکان نے کہا بتایا جائے یہ بل کس کی سازش ہے، کیا یہ بل حکومت کا ہے، اگر حکومت کا ہے تو کابینہ کی منظوری دکھائی جائے۔ اگر یہ بل پرائیویٹ طور پر منظور کرایا گیا ہے تو کس کمیٹی سے منظور ہوا ہے۔

کمیٹی ممبر ہونے کے باوجود مجھے بھی لاعلم رکھا گیا، حسن مرتضیٰ

پیپلزپارٹی کے پارلیمانی لیڈر سید حسن مرتضیٰ نے کہا میرا نام بھی اس کمیٹی میں تھا لیکن مجھے اس کے بارے میں معلوم ہے نہ ہی کسی قسم کی کوئی اطلاع دی گئی۔ صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے جواب میں کہا بل منظور ہونے کے بعد اس پر اعتراضات آئے تھے، جس پر بل گورنر کو منظوری کیلئے نہیں بھیجا گیا۔ بل پر تحفظات کو دور کرنے کیلئے علماء کی رائے سے ترامیم کریں گے ۔ ایوان کو یقین دلاتا ہوں جب تک بل پراتفاق رائے نہیں ہوتا اس بل پر کوئی پیش رفت نہیں ہوگی۔

مسودہ قانون ترمیمی اسٹامپ بل 2020ء پیش، متعلقہ کمیٹی کے سپرد

اجلاس میں صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے مسودہ قانون ترمیمی اسٹامپ بل 2020ء پنجاب اسمبلی میں پیش کر دیا، جسے متعلقہ کمیٹی کے سپرد کرتے ہوئے دو ماہ میں رپورٹ طلب کرلی گئی۔ بعدازاں ڈپٹی سپیکر نے اجلاس کل پیر 10 اگست تک کے لیے ملتوی کردیا۔

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

تحفظ بنیاد اسلام بل

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply