سعودی خود مختاری کا دفاع

صدر بائیڈن نے تارکین وطن کی صورتحال کو ’’بحران‘‘ قرار دیدیا

Spread the love

تارکین وطن صورتحال

واشنگٹن (جے ٹی این آن لائن نیوز) صر جوبائیڈن نے پہلی مرتبہ جنوبی سرحد پر تاریکن وطن کی

صورت کو ’’بحران‘‘ قرار دیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ہم مہاجرین کے کوٹے میں اضافے کا ارادہ

رکھتے ہیں لیکن میکسیکو کے ساتھ ملنے والی جنوبی سرحد پر تارکین وطن اور خصوصاً نوجوانوں

کا مسئلہ بڑھ کر بحرانی صورت اختیار کر چکا ہے۔ ’’فوکس نیوز‘‘ ٹیلی ویژن نے اپنی رپورٹ میں

بتایا ہے کہ صدر بائیڈن کی طرف سے ’’بحران‘‘ کا لفظ استعمال کرنے تک ان کی انتظامیہ اسے

’’چیلنج‘‘ قرار دیتی تھی اور اس کا ذمہ دارٹرمپ کی سابق انتظامیہ کو ٹھہراتی تھی جس نے تارکین

وطن کے شہری بننے کے راستے میں رکاوٹیں ڈال رکھی تھیں۔ اس دوران سوموار کے روز وائٹ

ہاؤس سے جاری ہونے والے ایک بیان میں سرکاری محکموں کو ہدایت کی ہے کہ وہ ’’تاریکن

وطن‘‘ کیلئے ’’غیرقانونی اجنبی‘‘ کی اصلاح استعمال نہ کریں۔ انہیں ’’تاریکن وطن‘‘ مہاجر، ’’غیر

شہری باشندے‘‘ یا ’’بغیر دستاویز کے افراد‘‘ کہا جاسکتاہے۔ بارڈر پر گشت کرنے والے حکام نے

بتایا ہے کہ گزشتہ ماہ کے دوران جنوبی سرحد سے داخل ہنے والے والدین کے بغیر بچوں کی تعداد

میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے۔ کسی نہ کسی طرح سرحد عبور کرنے والے ایسے بچوں کی روزانہ تعداد

اوسطاً ایک ہزار ہو چکی ہے۔ ریڈیو امریکہ کے معروف ’’سارا کارٹر شو‘‘ نے بتایا ہے کہ اب امکان

ہے کہ نائب صدر کملاہیرس جنوبی سرحد کا دورہ کرکے پہلی مرتبہ پریس کانفرنس کے ذریعے

صورتحال کے بارے میں اپنی پالیسی کا اعلان کریں۔ جنہیں صدربائیڈن نے تارکین وطن کے مسئلے

کے ٹاسک کا انچارج بنا رکھا ہے۔ یاد رہے کہ اکتوبر 2020ء سے ستمبر 2021ء تک کے موجودہ

مالی سال کیلئے مہاجرین کی آمد کی تعداد بائیڈن انتظامیہ نے پندرہ ہزار برقرار رکھی ہے یہی حد

ٹرمپ انتظامیہ کے دور میں مقرر تھی۔

تارکین وطن صورتحال

ستاروں کا مکمل احوال جاننے کیلئے وزٹ کریں ….. ( جتن آن لائن کُنڈلی )
قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

Leave a Reply